BBCUrdu.com
  •    تکنيکي مدد
 
پاکستان
انڈیا
آس پاس
کھیل
نیٹ سائنس
فن فنکار
ویڈیو، تصاویر
آپ کی آواز
قلم اور کالم
منظرنامہ
ریڈیو
پروگرام
فریکوئنسی
ہمارے پارٹنر
ہندی
فارسی
پشتو
عربی
بنگالی
انگریزی ۔ جنوبی ایشیا
دیگر زبانیں
 
وقتِ اشاعت: Monday, 21 April, 2003, 12:34 GMT 16:34 PST
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے پرِنٹ کریں
شدت پسندوں کا نیا روپ
 

 
مولانا مسعود اظہر کو حراست سے رہا کردیا گیا ہے
مولانا مسعود اظہر کو حراست سے رہا کردیا گیا ہے

سپاہ صحابہ پاکستان کے سربراہ مولانا اعظم طارق نے ملت اسلامیہ کے نام سے ایک نئی تنظیم قائم کی ہے جبکہ اظہر مسعود کی جیش محمد نے تحریک الفرقان کا نام اختیار کرلیا ہے۔

حرکت المجاہدین کا نام بدل کر جمعیت الانصار رکھ دیا گیا ، لشکر طیبہ کے سربراہ حافظ سعید جماعت الدعوۃ کے امیر بن گۓ ہیں اور تحریک جعفریہ پاکستان کے ساجد نقوی نے اسلامی تحریک کی صدارت سنبھال لی ہے۔

آہستہ آہستہ وہ سب شدت پسند مذہبی تنظیمیں، جو فرقہ واریت یا جہاد کے لیے سرگرم تھیں اور جنہیں صدر جنرل پرویز مشرف نے عالمی دباؤ پر ممنوع قرار دے دیا تھا ، نۓ ناموں کے ساتھ منظر عام پر آتی جارہی ہیں اور ان کے رہنما کھلے عام اپنے اُن نظریات اور خیالات کا پرچار کرتے پھر رہے ہیں جن کی بنیاد پر ان کی تنظیموں پر پابندی عائد کی گئی تھی۔

بھارت ان گروہوں پر کشمیر میں شدت پسندی کا الزام لگاتا رہا ہے

اعظم طارق خود نئی جماعت کے مرکزی کنوینر ہوں گے اور علامہ شیرحیدری ، جو سپاہ صحابہ کے مرکزی رہنما تھے ، اس جماعت کے مرکزی سربراہ ہوں گے۔

جب مولانا اعظم طارق کو طویل نظر بندی کے بعد لاہور ہائی کورٹ کے ایک ریویو بورڈ نے پچھلے سال عام انتخابات کے بعد رہا کیا توعام خیال تھا کہ ان کی رہائی فوجی حکومت سے مفاہمت کا نتیجہ ہے لیکن انھوں نے اس بات کی تردید کی تھی ـ

اب کہا جارہا ہے کہ اعظم طارق کی نئی جماعت کے پیچھے اسٹیبلشمینٹ کا ہاتھ ہے جو ان کے ذریعے متحدہ مجلس عمل کی بڑھتی ہوئی قوت کو قابو کرنا چاہتی ہے ـ قومی اسمبلی کے حالیہ اجلاس میں اعظم طارق نے لیگل فریم ورک کے دفاع میں اس وقت تقریر کی جب متحدہ مجلس عمل اور حزب اختلاف کی بقیہ جماعتیں اس کے خلاف پرزور احتجاج کرہی تھیں ـ

جمعیت علماۓ اسلام (سمیع الحق گروپ) ، جو متحدہ مجلس عمل میں شامل ہے اور جس کے طالبان کے ساتھ گہرے تعلقات رہے ہیں ، کے سربراہ سمیع الحق بھی متحدہ مجلس عمل سے فاصلہ بڑھارہے ہیں ـ کہا جارہا ہے کہ وہ مولانا اعظم طارق کے ساتھ مل کر کام کریں گے۔ مولانا شاہ احمد نورانی نے چند روز پہلے اسلام آباد کی پریس کانفرنس میں مولانا سمیع الحق کے پارلیمانی حزب اختلاف کی مشترکہ پریس کانفرنس میں شرکت نہ کرنے پر پر طنز کرتے ہوۓ کہا تھا کہ ’ وہ بیمار رہتے ہیں اور سرکاری ہسپتال سے دوا لینے جاتے ہیں۔‘

جنرل مشرف نے شدت پسندوں کے خلاف سخت موقف اختیار کیا

جیش محمد کا آغاز سب سے بڑی دیوبندی جہادی تنظیم حرکت المجاہدین سے منحرف ہونے والے لوگوں نے فروری سن دوہزار میں کیا تھا جن کے سربراہ ہندوستان کی جیل سے رہا ہونے والے مولانا مسعود اظہر تھے۔ انہیں ہندوستان کی پارلیمینٹ پر دسمر سنہ دوہزار ایک میں حملہ کے بعد پاکستان حکومت نے نظر بند کردیا تھا لیکن کچھ عرصے بعد رہا کردیا تھا۔

مولانا فضل الرحمٰن خلیل کی سربراہی میں قائم حرکت المجاہدین کو انیس سو اٹھانوے میں امریکہ کے اسٹیٹ ڈپارٹمینٹ نے دہشت گرد تنظیم قرار دیا تھا اور پاکستان حکومت نے نومبر سن دوہزار ایک میں اس کو ممنوع کرکے اس کے اثاثے منجمد کردیے تھے۔

اب حرکت المجاہدین کا نام جمعیت الانصار ہے اور اس میں ایک اور جہادی تنظیم حرکت الجہاد اسلامی سے ٹوٹنے والے لوگ، جیسے مولانا عبدالصمد سیال، کمانڈر الیاس کشمیری اور ڈاکٹر بدر نیازی ، بھی شامل ہیں۔ ایک معروف مدرسہ ، جامعہ اکوڑہ خٹک، کے ڈاکٹر شیر علی شاہ اس تنظیم کے اہم سرپرستوں میں شمار کیے جاتے ہیں۔ جمعیت علماۓ اسلام کے مولانا سمیع الحق کا تعلق بھی اسی مدرسے سے ہے۔

مولانا مسعود اظہر کی طرح لشکر طیبہ کے سربراہ حافظ سعید کو بھی ایک سال تک نظر بند رکھنے کے بعد چند ماہ پہلے رہا کردیا گیا تھا اور انھوں نے فورا اپنی ممنوعہ تنظیم کو جماعت الدعوۃ کا نام دے کر بحال کرلیا ـ ان کی تنظیم کی مقبولیت کا اندازہ اس سے لگایا جاسکتا ہے کہ اس نے گذشتہ بقرعید کے موقع پر بارہ لاکھ کھالیں عطیہ کے طور پر جمع کیں۔

اب مولانا مسعود اظہر آۓ دن جلسے جلوسوں سے جہاد کی تبلیغ کرتے پھر رہے ہیں اور متحدہ مجلس عمل کی امریکہ کے عراق پر حملہ کے خلاف نکالی جانے والی ریلیوں سے خطاب کرتے رہے۔

زیادہ تر فرقہ وارانہ اور جہادی تنظیمیں دیوبندی مسلک سے تعلق رکھتی ہیں۔ تحریک جعفریہ پاکستان کو بھی ممنوع قرار دیا گیا تھا لیکن اس کی قیادت نے اس کا نام تبدیل کرکے اسلامی تحریک رکھ دیا اور اب یہ چھ جماعتی مذہبی اتحاد متحدہ مجلس عمل میں شامل ہے۔

 
 
تازہ ترین خبریں
 
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے پرِنٹ کریں
 
 

واپس اوپر
Copyright BBC
نیٹ سائنس کھیل آس پاس انڈیاپاکستان صفحہِ اول
 
منظرنامہ قلم اور کالم آپ کی آواز ویڈیو، تصاویر
 
BBC Languages >> | BBC World Service >> | BBC Weather >> | BBC Sport >> | BBC News >>  
پرائیویسی ہمارے بارے میں ہمیں لکھیئے تکنیکی مدد