BBCi Home PageBBC World NewsBBC SportBBC World ServiceBBC WeatherBBC A-Z
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
 
South Asia News
BBCHindi.com
BBCPersian.com
BBCPashto.com
BBCArabic.com
BBCBengali.com
Learning English
 
 
  ہماری کھیلوں کی سائٹ
 
 
  احمد قریع، ہمہ جہت شخصیت
 
 
  کین کن میں کرنا کیا ہے؟
 
 
  شیرون کا دورۂ ہند
 
 
  ’غیرت‘ کے سات سو شکار
 
 
  قبائلی علاقوں کے بھوت اسکول
 
 
  مشرق وسطی میں طاقت کا نیا محور
 
 
  گیارہ ستمبر
آخری باتیں
 

جنگ عراق کا سچ جھوٹ
 

کراچی ساحل: زہریلی لہریں
 

موسیقی، فلم، ٹی وی ڈرامہ
 

دنیا ایک کلِک دور
 
 
 
:تازہ خبریں
 
میں غدار نہیں: مشرف
’القاعدہ اب بھی سرگرم ہے‘
اسامہ کی نئی وڈیو ٹیپ
’دراندازی بند کرائیں گے‘
سویڈش وزیر چل بسیں
جنس معلوم کرنےپرپابندی
بیمہ کمپنیاں القاعدہ پر مقدمہ کریں گی
یونان: پاکستانی ڈوب گئے
’نقشِہ راہ پر قائم ہیں‘
کراچی ساحل: پابندی برقرار
سامان میں انسان
بلوچستان: وزیر کے بھائی گرفتار
تعلقات مضبوط کرنےکی ضرورت: شیرون
لڑکا، امریکی فوجی ہلاک
بالی دھماکہ: موت کی سزا
گرینچ 17:33 - 09/07/2003
ہائی ٹیک الفاظ سے پریشان
ایک سروے کے مطابق بیشر افراد کو نئی ٹیکنالوجی سے متعلق اصطلاحات اور نئی اشیاء یا ایجادات کے نام سمجھنے میں کافی دشواری ہوتی ہے اور وہ پریشان اور حواس باختہ ہوجاتے ہیں۔

ایک تحقیقی گروپ کے سروے میں پایا گیا کہ ’بلیو ٹوتھ‘ یا MP3 جیسے الفاظ بہت کم لوگوں کی سمجھ میں آتے ہیں۔

سرورے کے نتائج ٹیکنالوجی کی صنعت کے

ڈجی فلاؤر؟ وہ کیا ہوتا ہے
لئے تشویش کا باعث بن سکتے ہیں، کیونکہ اس کے معنی یہ ہیں کہ پریشان کر دینے والی اصتلاحات کی وجہ سے لوگ نئے آلات خریدنے سے گریز کر سکتے ہیں۔

سرواے کرانے والے ادارے اے ایم ڈی کے گلوبل کنزیومر ایڈوائزری بورڑ کے پیٹرِک مؤرہیڈ کا کہنا ہے:

’انڈسٹری کو اپنی زبان اور اصتلاحات کو آسان اور عام فہم بنانا ہوگا تاکہ دنیا بھر کے صارفین یہ بہتر سمجھ سکیں کے ٹیکنالوجی سے انہیں کیا فوائد ہو سکتے ہیں۔‘

اس سروے کے لئے امریکہ، برطانیہ، چین اور جاپان میں پندرہ سو افراد سے رابطہ کیا گیا اور یہ جاننے کی کوشش کی گئی کہ صارفین نئے آلات سے وابستہ زبان کس حد تک سمجھتے ہیں۔ نتایج میں دیکھا گیا کہ ٹیکنالوجی فرموں کی طرف سے استعمال اور رائج کی جانے والی اصتلاحات سے لوگ پریشان ہوجاتے ہیں۔

صرف تین فی صد لوگوں نے ایک کوئز میں سو فی صد سکور کیا، جس کے دوران MP3 ( آواز کو ریکارڑ اور محفوظ کرنے کا نیا ڈیجیٹل فارمیٹ یا فائل) اور Bluetooth ( معلومات کو مختصر فاصلے پر منتقل کرنے کی تکنیک جس میں تاروں کی جگہ ریڈیو کی لہروں کا استعمال کیا جاتا ہے)۔

یہاں تک کہ کئی لوگ ’میگاہرٹز‘ (Mhz) سن کر مبہوت ہو کر رہ گئے۔ یاد رہے اکثر کمپوٹر بیچنے والی کمپنیاں اپنے اشتہارات میں Mhz جیسے الفاظ کا اکثر استعمال کرتی ہیں۔

پچاس فی صد سے بس تھوڑے زیادہ افراد میگاہرٹز کی وضاحت کر پائے۔ میگاہرٹز سے مراد یہ ہے کہ کمپیوٹر میں استعمال کئے جانے والے پروسیسر کا ایک حصہ جسے کلاک کہتے ہیں ایک سیکنڈ کے دس لاکھویں حصے میں کتنی بار بجتا ہے۔

ٹیکنالوجی سے وابستہ افراد بھی کئی الفاظ

اس کا کیا کریں؟
سے پریشان ہوئے، صرف ایک تہائی افراد کو DVR کا پتا تھا۔ DVR یعنی ڈیجیٹل ویڈیو ریکارڑر جس سے آپ براہ راست ٹی وی شو کیسیٹ کی بجائے ہارڑ ڈرائیو پر ریکارڑ کر سکتے ہیں۔

سروے کا ایک نتیجہ یہ بھی تھا کہ کئی لوگ ڈیجیٹل کیمرا جیسی نئی اشیاء خریدنے میں تاخیر اس لئے کر رہے ہیں کینوکہ ان کے لئے یہ چیزیں پیچیدہ ہیں اور انکا استعمال دشوار۔

تقریباً ستر فی صد افراد کا کہنا تھا کہ انہیں ’ایسے آلات چاہئیں جو بس کام کریں اور انہیں ’سیٹ اپ‘ نہیں کرنا پڑے۔‘

یہ سروے کمپیوٹر چپ بنانے والی کمپنی اے ایم ڈی نے کرایا۔
 
 

 urdu@bbc.co.uk
 
 
 
 < عالمی خبریں 43 زبانوں میںواپس اوپر ^^ BBC Copyright