BBCUrdu.com
  •    تکنيکي مدد
 
پاکستان
انڈیا
آس پاس
کھیل
نیٹ سائنس
فن فنکار
ویڈیو، تصاویر
آپ کی آواز
قلم اور کالم
منظرنامہ
ریڈیو
پروگرام
فریکوئنسی
ہمارے پارٹنر
ہندی
فارسی
پشتو
عربی
بنگالی
انگریزی ۔ جنوبی ایشیا
دیگر زبانیں
 
وقتِ اشاعت: Friday, 29 August, 2003, 17:20 GMT 21:20 PST
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے پرِنٹ کریں
گیارہ ستمبر: آخری باتیں
 
دوسرا جہاز عمارت سے ٹکرانے سے پہلے
دوسرا جہاز عمارت سے ٹکرانے سے پہلے

نیویارک میں گیارہ ستمبر کو ورلڈ ٹریڈ سینٹر پر ہونے والے حملوں کے دوران جو ایمر جنسی فون کالیں اور ریڈیو ٹرانسمشنز ہوئیں، نیو یارک کی پورٹ اتھارٹی نے ان کے تحریری اقتباسات جاری کر دیئے ہیں۔ ان میں سے چند پیش کئے جا رہے ہیں۔

پورٹ اتھارٹی کے ایک پولیس افسر ٹامی کی اپنی ماں سے فون پر ہونے والی بات چیت سے اقتباس

مکمل تباہی کا منظر

ٹامی کی ماں: ہیلو؟

ٹامی: ہاں، ماں

ٹامی کی ماں: تم ٹھیک تو ہو؟

ٹامی: ’ہاں، میں کام پر ہوں۔ تم اندر ہی رہنا۔ کچھ نہیں کرنا۔ باہر۔۔۔ بہت برا ہو رہا ہے۔ پورے راڈار پر جہاز ہیں جو نیو یارک کی طرف بڑھ رہے ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ یہ سب ٹکرانے والے ہیں۔

ٹامی کی ماں: اوہ ٹامی، وعدہ کرو تم مجھے پھر فون کرو گے۔

ٹامی: ہاں ماں۔ مجھے کچھ دیر ہوجائے گی، ٹھیک ہے؟ بس باہر نہیں جانا۔ میرا مطلب ہے کہ راڈار پر جہاز ہی جہاز ہیں۔ ان کا خیال ہے کہ یہ پورے مین ہیٹن کے اوپر تباہ ہونے والے ہیں۔

ٹامی کی ماں: ماسک پہنے رکھنا۔۔۔۔

ٹامی: میں تمہیں بعد میں فون کروں گا۔

ایک عورت کی فون پر /urdu/images/9_11_girlcries150.jpgایک لڑکی اپنے پیاروں کے لئے روتے ہوئے بات چیت سے اقتباس جو یہ جاننا چاہتی تھی کہ اس کے شوہر کے ساتھ کیا ہوا جس نے اسے بتایا تھا کہ وہ عالمی تجارتی مرکز میں سے ایک کی سیڑھیوں سے اوپر کی طرف جا رہا تھا۔ بعد میں پتہ چلا کہ وہ تباہی کے دوران ہلاک ہوگیا تھا۔

ہالینڈ: پورٹ اتھارٹی پولیس، سارجنٹ ہالینڈ

جینی: جی سارجنٹ ہالینڈ، میں جینی میک انٹائر بول رہی ہوں، کیا میرا شوہر اس عمارت میں تھا جو ابھی ابھی گر گئی ہے؟

ہالینڈ: ہاں ہم نے اس سے بات کی تھی۔ وہاں۔۔۔ ہماراکوئی۔۔۔ہمارا کوئی آدمی ابھی تک زخمی نہیں ہوا۔

جینی: وہ اوپر کی طرف جا رہا تھا۔

ہالینڈ: ہاں مجھے معلوم ہے۔ لیکن یہ۔۔۔ہمیں۔۔۔ ہمارا کوئی آدمی۔۔۔ابھی تک کوئی آدمی زخمی نہیں ہوا۔

جینی: تمہیں یقین ہے؟ کیونکہ وہ سیڑھیوں سے اوپر جا رہا تھا۔ اس نے مجھے بتایا۔۔۔۔(پریشان ہو جاتی ہے)

ہالینڈ: میں سمجھتا ہوں۔ ہمارے پاس۔۔۔ہمارے پاس کوئی ایسی رپورٹ نہیں آئی کہ ہمارا۔۔ کوئی آدمی زخمی ہوا ہو۔ ٹھیک ہے؟ میں۔۔۔ میں سمجھتا ہوں۔ تم جانتی ہو بہت برا ہونے والا ہے۔

عمارت کے اندر نوّے /urdu/images/9_11_jump150.jpgموت سے بچ کر موت کی طرف نمبر منزل پر پھنسے ہوئے ایک آدمی کی بات چیت سے اقتباس

افسر رے مرے: پورٹ اتھارٹی پولیس، مرے

آدمی: ہاں، ہاں، ہاں، یہ عمارت نمبر ایک ہے۔

مرے: ہاں، لیکن جناب آپ کس منزل پر ہیں؟

آدمی: ہم نوّے نمبر منزل پر ہیں

مرے: نوّے پر

آدمی: میرے ساتھ پانچ لوگ ہیں۔ ہم باہر نہیں نکل سکتے

مرے: پانچ۔۔۔۔ ورلڈ ٹریڈ سینٹر، وہ باہر نہیں نکل سکتے

آدمی: ایک۔۔۔ ورلڈ سینٹر نمبر ایک

مرے: میرا مطلب تھا پانچ لوگ، مجھے پتہ ہے جناب، نمبر ایک

آدمی: جی، ورلڈ ٹریڈ سینٹر نمبر ایک، پانچ لوگ، کمرہ نمبر نو ہزار اکیاون

مرے: نو ہزار اکیاون۔ ہم لوگ اوپر بھیج رہے ہیں۔ یہ بہت ساری منزلوں پر ہے۔

آدمی: شکریہ، او کے

مرے: او کے

پولیس افسر جان کینوّزو /urdu/images/9_11_people203.jpg مسلسل گرتے ہوئے ملبے سے فرار کی اپنے بیٹے انتھونی سے بات چیت

کینوزو: ہاں انتھونی، کیسے ہو

انتھونی: ٹھیک

کینوّزو: ایک ہولناک واقعہ ہو گیا ہے انتھونی۔ کچھ بیمار ذہنیت کے لوگوں کی وجہ سے۔

اینتھونی: کیا لوگ مرے ہیں؟

کینوّزو: ہاں

اینتھونی: تو کتنے لوگ اس میں (آواز سمجھ نہیں آتی)۔۔۔مر گئے ہیں؟

کینوّزو: ہزاروں، ہزاروں اینتھونی

اینھونی: ڈیڈی؟ کیا ہوگا۔۔۔؟

کینوّزو: تم میرا ایک کام کرو گے؟ دیکھو ڈیڈی گھر نہیں ہونگے۔ اب تم گھر کے بڑے ہو۔ اپنی ماں کا خیال رکھنا اور اسے خوش رکھنا۔ اوکے۔

اٹھاسی ویں منزل /urdu/images/9_11_leaving150.jpg عمارت کے گرنے سے پہلے نکالے جانے والے آخری افراد پر پھنسے ہوئے ایک شخص کا فون

فون سے آنے والی آواز: ہم اٹھاسی ویں منزل پر ہیں۔ ہم پھنسے ہوئے ہیں۔۔۔ پوری عمارت مجھ پر گرنے والی ہے۔۔۔ پوری گرنا شروع ہو گئی ہے۔

 
 
تازہ ترین خبریں
 
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے پرِنٹ کریں
 
 

واپس اوپر
Copyright BBC
نیٹ سائنس کھیل آس پاس انڈیاپاکستان صفحہِ اول
 
منظرنامہ قلم اور کالم آپ کی آواز ویڈیو، تصاویر
 
BBC Languages >> | BBC World Service >> | BBC Weather >> | BBC Sport >> | BBC News >>  
پرائیویسی ہمارے بارے میں ہمیں لکھیئے تکنیکی مدد