BBCUrdu.com
  •    تکنيکي مدد
 
پاکستان
انڈیا
آس پاس
کھیل
نیٹ سائنس
فن فنکار
ویڈیو، تصاویر
آپ کی آواز
قلم اور کالم
منظرنامہ
ریڈیو
پروگرام
فریکوئنسی
ہمارے پارٹنر
آر ایس ایس کیا ہے
آر ایس ایس کیا ہے
ہندی
فارسی
پشتو
عربی
بنگالی
انگریزی ۔ جنوبی ایشیا
دیگر زبانیں
 
وقتِ اشاعت: Tuesday, 14 October, 2008, 08:21 GMT 13:21 PST
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے   پرِنٹ کریں
افغان سرحد سے ’امریکی‘ گرفتار
 
طالبان (فائل فوٹو)
قبائلی علاقے میں طالبان اور القاعدہ عناصر بڑی تعداد میں موجودہ ہیں
پولیس کا کہنا ہے کہ اس نے اس نے صوبہ سرحد کے ضلع چارسدہ سے ایک ایسے شخص کو گرفتار کیا ہے جس کے بارے میں خیال ہے کہ وہ امریکی شہری ہے۔

پولیس کا کہنا ہے کہ بیس سالہ شخص کو ضلع چار سدہ کے علاقے شبقدر میں واقع ایک چوکی پر اس وقت گرفتار کیا گیا جب وہ مہمند ایجنسی میں داخل ہونے کی کو شش کر رہا تھا۔

امریکی سفارت خانے کا کہنا ہے کہ اس خبر کی تصدیق کرنے کی کوشش کی جا رہی ہے۔

امریکی خبر رساں ادارے اے پی نے پولیس ترجمان پپر شہاب کے حوالے سے کہا ہے کہ پولیس اس بات کی تفتیش کر رہی ہے کہ وہ شخص وہاں کیوں موجود تھا۔

ترجمان کا کہنا ہے کہ اس شخص کے پاس علاقے میں جانے کے لیے مطلوبہ اجازت نامہ نہیں تھا۔

اے پی نے چارسدہ پولیس کے افسر مرجان خان کے حوالے سے کہا ہے کہ گرفتار ہونے والا شخص روایتی پاکستانی لباس پہنے ہوئے تھا اور ایک سویلین دکھائی دے رہا تھا۔

’اس نے پولیس کو بتایا کہ وہ فلوریڈا کے ایک کمیونٹی کالج کا طالبعلم ہے اور وہ علاقے میں ایک دوست سے ملنے جا رہا تھا۔‘

پولیس کے مطابق اس شخص کے پاس ایک لیپ ٹاپ کمپیوٹر اور ایک سفری بیگ تھا اور اسے تفتیش کے لیے ایک نامعلوم مقام پر منتقل کر دیا گیا ہے۔

ہمارے نامہ نگار ہارون رشید کے مطابق اسلام آباد میں امریکی سفارت خانے کا کہنا ہے کہ وہ پاکستانی حکام سے ایک ’امریکی’ شہری کی گرفتاری کی خبروں کی تصدیق کے لیئے رابطے میں ہے۔

امریکی سفارت خانے کے ترجمان لیوز فونٹر نے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے کہا کہ وہ بھی ایک مبینہ امریکی کی قبائلی علاقوں میں داخل ہونے کی کوشش کے وقت گرفتاری کی خبروں سے آگاہ ہیں۔ تاہم انہوں نے بتایا کہ اس خبر کی تصدیق کے لیے اسلام آباد اور پشاور میں امریکی سفارتی عملہ حکام سے رابطے میں ہے۔

بعض خبررساں ادارے اس شخص کا نام جوڈی کینن بتاتے ہیں جس کا تعلق امریکی ریاست فلوریڈا سے ہے۔ اس بیس سالہ شخص کو مہمند ایجنسی میں داخل ہونے کی کوشش کے وقت ایک چوکی پر حراست میں لیا گیا تھا۔ اس کے قبضے سے ایک لیپ ٹاپ کمپوٹر اور دیگر سامان ملا ہے۔

شبقدر پولیس کے ایک اہلکار مرجان خان نے اس گرفتاری کی تصدیق کرتے ہوئے بتایا کہ یہ شخص اب مزید تفتیش کے لیئے چارسدہ منتقل کر دیا گیا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ یہ شخص شلوار قمیض میں ملبوث ٹیکسی میں سوار تھا کہ پکڑ لیا گیا۔

پاکستان کے قبائلی علاقوں میں غیرملکیوں کے بغیر سرکاری اجازت کے داخلے پر مکمل پاپندی ہے۔ اس شخص نے پولیس کو بتایا کہ وہ ایک دوست سے ملنے کے لیئے مہمند ایجنسی جا رہا تھا۔

 
 
اسی بارے میں
تازہ ترین خبریں
 
 
یہ صفحہ دوست کو ای میل کیجیئے   پرِنٹ کریں
 

واپس اوپر
Copyright BBC
نیٹ سائنس کھیل آس پاس انڈیاپاکستان صفحہِ اول
 
منظرنامہ قلم اور کالم آپ کی آواز ویڈیو، تصاویر
 
BBC Languages >> | BBC World Service >> | BBC Weather >> | BBC Sport >> | BBC News >>  
پرائیویسی ہمارے بارے میں ہمیں لکھیئے تکنیکی مدد