بلوچستان میں مبینہ فائرنگ کے تبادلے میں ’پانچ عسکریت پسند ہلاک‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption کوئٹہ اور ضلع کیچ میں سکیورٹی فورسز کی کارروائیوں میں مجموعی طور پر 39 افراد کو گرفتار کیا گیا

پاکستان کے صوبہ بلوچستان کے دارالحکوت کوئٹہ سمیت تین علاقوں میں سرکاری حکام نے سکیورٹی فورسز سے مبینہ فائرنگ کے تبادلے میں پانچ عسکریت پسندوں کو ہلاک کرنے کا دعویٰ کیا ہے۔

مارے جانے والے پانچ افراد میں سے دو کی ہلاکت کا واقعہ کوئٹہ شہر کے مشرقی بائی پاس کے علاقے میں پیش آیا جبکہ ان کارروائیوں کے دوران 44 افراد کو گرفتار بھی کیا گیا ہے۔

پولیس کی جانب سے فراہم کردہ معلومات کے مطابق مشرقی بائی پاس کے علاقے میں پولیس کی ایک موبائل پر حملہ کیا گیا۔

پولیس کی جوابی فائرنگ سے دو افراد ہلاک ہوگئے جن کی تاحال شناخت نہیں ہوسکی ہے۔

تین دیگر افراد کی ہلاکت کا واقعہ آواران کے علاقے کولواہ اور پنجگور کے علاقے ناگ میں پیش آیا۔

کوئٹہ میں ذرائع ابلاغ کو فرنٹیئر کور کے ترجمان کی جانب سے جو معلومات فراہم کی گئیں ان کے مطابق حساس ادارے اور ایف سی کے اہلکاروں نے ان علاقوں میں مشترکہ کارروائی کی۔

اس کاروائی کے نتیجے میں تین افراد ہلاک ہوگئے جبکہ پانچ کو اسلحے سمیت گرفتار کیا گیا۔

ترجمان کے مطابق ہلاک اور گرفتار افراد عسکریت پسند تھے۔

آزاد ذرائع سے پانچوں افراد کی فائرنگ کے تبادلے میں ہلاکت اور عسکریت پسند تنظیموں سے تعلق کی تاحال تصدیق نہیں ہوئی ہے۔

دریں اثناء کوئٹہ اور ضلع کیچ میں سکیورٹی فورسز کی کارروائیوں میں مجموعی طور پر 39 افراد کو گرفتار کیا گیا۔

ان میں سے 13 افراد کی گرفتاری کوئٹہ شہر سے عمل میں لائی گئی۔

دیگر 26 افراد کی گرفتاری ضلع کیچ کے علاقے گورکوپ سے عمل میں لائی گئی۔

اسی بارے میں