برطانوی ارکانِ پارلیمان سری نگر کا دورہ کریں: ایاز صادق

Image caption آل پارٹیز گروپ سے پاکستان سپیکر کی ملاقات

پاکستان کی قومی اسمبلی کے سپیکر ایاز صادق نے برطانوی پارلیمان میں آل پارٹیز پارلیمانی گروپ کے ارکان کو پاکستان کے زیرِ انتظام کشمیر کا دورہ کرنے کی دعوت دیتے ہوئے کہا ہے کہ وہ انسانی حقوق کی مبینہ خلاف ورزیوں کا جائزہ لینے کے لیے بھارت کے زیرِ انتظام کشمیر کا دورہ کرنے کے لیے دباؤ ڈالیں۔

لندن میں برطانوی پارلیمان میں کل جماعتی کشمیر گروپ کے ارکان سے خطاب کرتے ہوئے ایاز صادق نے کہا کہ برطانوی وزیر اعظم ٹریزا مئے کو آئندہ ماہ اپنے دورۂ بھارت کے دوران کشمیر میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں پر بات کرنی چاہیے۔

سپیکر نیشنل اسمبلی نے آل پارٹیز پارلیمانی گروپ کے ارکان میں کشمیر میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کے بارے میں ایک سی ڈی بھی تقسیم کی۔

آل پارٹیز برطانوی پارلیمانی گروپ کے ارکان سے ایاز صادق کی ملاقات کے دوران پاکستان میں حزب اختلاف کی جماعت پاکستان پیپلز پارٹی کے رہنما سید نوید قمر اور لندن میں پاکستان کے سفیر ابن عباس بھی موجود تھے۔

برطانوی ارکان پارلیمان اور خاص طور پر پاکستانی نژاد ارکان پارلیمان پر زور دیتے ہوئے انھوں نے کہا انھیں چاہیے کہ وہ برطانوی وزیر اعظم پر بھارت کے زیر انتظام کشمیر میں جاری عوامی احتجاج پر بات کریں۔

ایاز صادق نے اپنی تقریر کے دوران کشمیر میں جاری عوامی احتجاج پر تفصیل سے روشنی ڈالی اور بھارت کی طرف سے جنگی ہیجان پیدا کرنے کے اقدامات پر ارکان پارلیمان کو پاکستان کی تفتیش سے آگاہ کیا۔

انھوں نے کہا کہ پاکستان صبر و تحمل کی پالیسی پر سخت سے کار بند ہے اور اب تک بھارت کی طرف سے تمام جارحیت کا پاکستان نے بڑے صبر سے جواب دیا۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption پیلٹ گنوں کے استعمال پر انسانی حقوق کے عالمی ادارے بھی تشویش کا اظہار کر چکے ہیں

یہاں پر انھوں نے انڈیا کی طرف سرجیکل سٹرائیک کرنے کے دعوؤں پر بھی بات کی اور انھیں مکمل طور پر بے بنیاد قرار دیا۔

ایاز صادق نے پاکستان کے صوبے بلوچستان میں بھی انڈیا کی مداخلت کی بات کی اور کہا کہ بلوچستان سے بھارتی حفیہ ایجنسی کے اہلکار پکڑے گئے ہیں جو پاکستان میں دہشت گردی کے واقعات میں ملوث پائے گئے ہیں۔

سپیکر نیشنل اسمبلی نے اوڑی حملے کے بارے میں بات کرتے ہوئے کہا کہ اس حملہ کے فوراً اس کا الزام بغیر کسی ثبوت کے پاکستان پر ڈال دیا گیا۔

سید نوید قمر نے کمیٹی کے ارکان سے کہا کہ اب وقت آ گیا کہ بین القوامی برادری کو اس مسئلہ کو حل کرانے کے لیے اپنا کردار ادا کرنا چاہیے۔

انھوں نے کہا کہ کشمیر کے عوام نے فیصلہ کر لیا ہے کہ وہ اب بھارت کے تسلط کو اتار پھینکیں گے۔

برطانوی رکن پارلیمان ڈیوڈ نتال نے مسئلہ کشمیر کے حل ہونے کی ضرورت پر زور دیا اور پارلیمان کے اپنے ساتھیوں کو اس مسئلہ کی طرف توجہ دلانے پر شکریہ ادا کیا۔

لارڈ نذیر نے گروپ کے ارکان کو بتایا کہ بھارت کے زیرِ انتظام کشمیر میں پیلٹ گنوں کے استمعال سے سات سو زیادہ نوجوان جزوی یا مکمل طور پر اپنی بینائی کھو بیٹھے ہیں۔

انھوں نے کہا کہ ایک برطانوی خیراتی ادارہ جو نابینا افراد کے علاج کے لیے کام کرتا ہے وہ جلد ہی بھارت کے زیر انتظام کشمیر جا کر پیلٹ گنوں سے بینائی کھونے والے افراد کے علاج کے لیے اپنی خدمات پیش کرنے کا اعلان کرے گا۔

لارڈ نذیر نے کہا کہ کشمیر میں اب تک آٹھ ہزار نوجوانوں کو گرفتار کیا جا چکا ہے جن کی رہائی کا مطالبہ کیا جانا چاہیے تاکہ یہ نوجوان اپنی تعلیمی سرگرمیاں جاری رکھ سکیں۔

لارڈ نذیر نے ترکی میں دو دن قبل اسلامی ملکوں کی پارلیمان کی تنظیم میں کشمیر کے بارے میں ایک جاندار قرار داد کی منظوری پر پاکستان کی قومی اسمبلی کے سپیکر ایاز صادق کو مبارک باد پیش کی اور کہا کہ اس قرار داد سے انڈین میڈیا میں خاصی بے چینی پائی جاتی ہے۔

اس موقع پر لارڈ قربان نے بات کرتے ہوئے کہا کہ کشمیر کے علاوہ ایک سو سے زیادہ دن تک کس جگہ کرفیو نافذ رہنے کی کوئی اور مثال نہیں ملتی۔ انھوں نے کہا کہ اس مسلسل کرفیو سے کشمیر کے لوگ جن مشکلات کا شکار ہیں اس کا اندازہ لگایا جانا مشکل ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption بھارتی سکیورٹی فورس کا ایک جوان بندوق تانے ہوئے

انھوں نے کہا کہ کشمیر میں بھارت نے فوج کو جو خصوصی اختیار دے رکھے ہیں ان کی بھی کوئی مثال نہیں ملتی۔ انھوں نے کہا کہ بھارت کے دوسرے علاقوں میں بھی فوج کو یہ خصوصی اختیار دیے گئے ہیں لیکن ایسا صرف مختصر عرصے کے لیے کیا گیا۔ انھوں نے کہا کہ کشمیر میں کئی دہائیوں سے فوج کو خصوصی اختیارات حاصل ہیں اور اس کی کوئی مثال نہیں ملتی۔

دوسری طرف مسئلہ کشمیر پر پاکستان کے خصوصی مندوبین نے ایمنسٹی انٹرنیشنل کے صدر دفتر کا دورہ کیا اور ایمنسٹی کی سینیئر ایڈوائزر سیویو کارویلو اور رسچ فیلو نادیہ رحمان سے ملاقات کی۔

پاکستانی مندوبین، سینیٹر لیفٹیننٹ جنرل (ریٹائرڈ) عبدالقیوم اور قیصر احمد شیخ ایم این اے نے کشمیر جاری انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کے دستاویزی ثبوت ایمنسٹی کے حوالے کیے۔

اسی بارے میں