اے پی ایس کے بچوں کا خون مجھ پر قرض ہے: قمر جاوید باجوہ

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption 16 دسمبر 2014 کو دہشت گردوں نے آرمی پبلک سکول کے اندر داخل ہو کر ڈیڑھ سو کے قریب بچوں اور اساتذہ کو ہلاک کر دیا تھا

پشاور کے آرمی پبلک سکول پر حملے کی دوسری برسی کے موقع پر جمعہ کو مختلف مقامات پر تقاریب منعقد ہوئی ہیں۔ آرمی پبلک سکول میں منعقدہ تقریب سے خطاب میں پاکستان فوج کے سربراہ جنرل قمر جاوید باجوہ نے کہا ہے اس سکول کے بچوں اور دہشت گردی کے واقعات میں ہلاک ہونے والے تمام افراد کا خون ان پر قرض ہے۔

آج پشاور اور صوبے کے دیگر مختلف شہروں میں آرمی پبلک سکول پر حملے میں ہلاک ہونے والے بچوں کو یاد کیا گیا اور ان بچوں کے والدین کو تسلیاں دی گئیں۔

آرمی پبلک سکول میں منعقد تقریب میں طلبا اور طالبات کے والدین نے بڑی تعداد میں شرکت کی جہاں پاکستان فوج کے سربراہ قمر جاوید باجوہ نے یادگار پر پھول رکھے۔ اس موقع پر ان کا کہنا تھا کہ پاکستان فوج کی بھرپور کوشش ہے کہ ملک میں جاری دہشت گردی کے خلاف جنگ جلد سے جلد ختم ہو تاکہ ملک میں امن قائم کیا جا سکے۔

انھوں نے کہا پاکستان فوج اس وقت تک چین سے نہیں بیٹھےگی جب تک اس حملے میں ہلاک ہونے والے تمام بچوں اور دہشت گردی کا شکار بننے والے تمام بائیس ہزار افراد کے خون کا بدلہ نہیں لے لیتے۔ انھوں نے کہا کہ ان تمام افراد کا خون ان پر قرض ہے اور وہ ملک سے دہشت گردی کا خاتمہ کرکے دم لیں گے اور پاکستان کو امن کا گہوارہ بنائیں گے۔

قمر جاوید باجوہ نے کہا کہ وہ خود ایک باپ ہیں اور اس حملے میں ہلاک ہونے والے بچوں کے والدین کے غم کو سمجھتے ہیں اور وہ ان بچوں کو بھلا نہیں سکتے اسی لیے انھوں نے بھی جنرل راحیل شریف کی طرح اپنے دفتر میں آرمی پبلک سکول کے بچوں کی تصویریں رکھی ہیں تاکہ ان کا جذبہ نہ ڈگمگائے۔

ادھر خیبر پختونخوا اسمبلی میں آج آرمی پنبلک سکول کے بچوں کے لیے قران خوانی اور شمعیں روشن کی گئیں۔ اس تقریب میں سپیکر خیبر پختونخوا اسمبلی اسد قیصر اور مختلف سیاسی جماعتوں کے اراکین موجود تھے ۔ سپیکر اسد قیصر کا کہنا تھا کہ صوبائی اسمبلی صوبے کے تمام لوگوں کی نمائندہ ہے اس لیے یہاں یہ مختصر تقریب رکھی گئی ہے۔

پشاور پریس کلب کے سامنے سول سوسائٹی، طلبا اور سیاسی کارکنوں نے دھرنا دیا جس میں آرمی پبلک سکول کے بچوں کو یاد کیا گیا اور حکومت سے مطالبہ کیا گیا ہے کہ وہ تعلیم کے فروغ کے لیے کام کرے۔

قمر نسیم نے کہا کہ پانچ سال سے لیکر سولہ سال تک بچوں کو مفت تعلیم دینا حکومتی کی آئنی زمہ داری ہے اور اس کے علاوہ سکول کالجز میں لائبریریز آرمی پبلک سکول کے بچوں کے نام پر قائم کی جائیں۔

چارسدہ، مردان لکی مروت اور دیگر اضلاع میں بھی آرمی پبلک سکول کے بچوں کے لیے قران خوانی کی گئی اور انھیں یاد کیا گیا۔

اسی بارے میں