پاکستان میں انڈین مداخلت کے حوالے سے دستاویز اقوام متحدہ کے حوالے

تصویر کے کاپی رائٹ PID

پاکستان نے انڈین مداخلت کی دستاویز اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل اینتونیو گتریز کے حوالے کر دی ہیں اور کہا ہے کہ وہ انڈیا کو پاکستان میں مداخلت کرنے سے روکیں۔

جمعے کو پاکستان کے دفتر خارجہ کے مطابق اقوام متحدہ میں پاکستان کی مستقل مندوب ملیحہ لودھی نے شواہد پر مبنی یہ ’دستاویز‘ اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل کے حوالے کی۔

دفتر خارجہ کے مطابق پاکستان نے اقوام متحدہ سے کہا ہے کہ وہ پاکستان کو غیر مستحکم کرنے والی سرگرمیوں اور ملک میں مداخلت کرنے سے روکے۔

اقوام متحدہ میں پاکستان کی مستقل مندوب ملیحہ لودھی نے اس ’دستاویز‘ کے ساتھ ساتھ وزیر اعظم کے مشیر برائے امور خارجہ کی جانب سے ایک خط بھی اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل اینتونیو گتریز کے حوالے کیا۔

خبر رساں ادارے اے پی پی کے مطابق ان شواہد میں انڈین خفیہ ایجنسی ’را‘ کے بلوچستان، فاٹا اور کراچی میں دہشت گردی میں ملوث ہونے کے ثبوت شامل ہیں۔

قبل ازیں اکتوبر 2015 میں ملیحہ لودھی نے اقوام متحدہ کے اس وقت کے سیکریٹری جنرل بان کی مون کو تین دستاویز دی تھیں۔

مشیر خارجہ کا اپنے خط میں کہنا تھا کہ ’بلوچستان سے گرفتار کیے جانے والے ’را‘ کے مبینہ ایجنٹ کلبھوشن یادو کا اعترافی بیان انڈین مداخلت کا ثبوت ہے، جبکہ طویل عرصے سے دہشت گردی میں ملوث انڈیا اقوام متحدہ کے چارٹر کی کھلی خلاف ورزیاں کر رہا ہے۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ ISPR
Image caption گذشتہ سال انڈیا کی وزراتِ خارجہ نے ایک بیان میں پاکستان میں گرفتار ہونے والے را کے میبنہ جاسوس کلبھوشن یادو کے اعترافی بیان کی ویڈیو کو مسترد کرتے ہوئے کہا تھا کہ یہ جھوٹ پر مبنی ہے

سرتاج عزیز نے سیکریٹری جنرل اور اقوام متحدہ کے دیگر متعلقہ اداروں سے پاکستانی شواہد کا سنجیدگی سے جائزہ لینے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ ’انڈیا کی مداخلت کو روکا نہ گیا تو یہ عالمی اور علاقائی امن کے لیے خطرناک ہوسکتا ہے۔‘

ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ ’پاکستان امن چاہتا ہے لیکن اپنی خود مختاری کا ہر حال میں تحفظ کرے گا۔‘

خیال رہے کہ گذشتہ سال انڈیا کی وزراتِ خارجہ نے ایک بیان میں پاکستان میں گرفتار ہونے والے را کے میبنہ جاسوس کلبھوشن یادو کے اعترافی بیان کی ویڈیو کو مسترد کرتے ہوئے کہا تھا کہ یہ جھوٹ پر مبنی ہے۔

بیان میں کہا گیا تھا کہ انڈین حکام نے ویڈیو کا بغور جائزہ لیا ہے 'وہ ایک شخص کا انفرادی بیان ہے جس کی کوئی حقیقت نہیں۔'

یاد رہے کہ را کے مبینہ ایجنٹ کی گرفتاری اور اعترافی بیان کے حوالے سے اقوام متحدہ کو آگاہ کرنے میں تاخیر پر پاکستان کو شدید تنقید کا سامنا کرنا پڑا تھا۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں