’جمعرات بھری مراد‘

سیہون میں لعل شہباز قلندر کے مزار پر دھماکے کے بعد سکیورٹی کے غیرمعمولی انتظامات کیے گئے ہیں۔

،تصویر کا کیپشن

ہمارے نامہ نگار ریاض سہیل لعل شہباز قلندر کے مزار پر دھماکے کے ایک ہفتے بعد سیہون گئے اور وہاں پر زائرین اور رضاکاروں سے بات کی۔

،تصویر کا کیپشن

مزار پر ایک رضاکار ندیم نے بتایا کہ دھماکے سے قبل ’پریشر والی آگ تھی اور اس کے بعد دھماکہ ہوا۔ آپ اس کو کربلا کا سماں کہہ لیں یا قیامت کا۔‘

،تصویر کا کیپشن

مزار پر اس دن موجود راجہ سومرو بھی موجود تھے۔ انھوں نے بتایا ’سیہوانیوں ہی نے اپنی مدد آپ کے تحت زخمیوں کو ہسپتال پہنچایا۔ سیہون کے لوگ آ گئے اور چنگچیوں کے ذریعے زخمیوں کو ہسپتال پہنچانے میں مدد کی۔‘

،تصویر کا کیپشن

دھماکے کے بعد سیہوانیوں نے ہر طرح کی مدد کی۔ مزار پر آئے ہوئے پردیسیوں کی مدد کی اور جن کو مالی امداد کی ضرورت تھی ان کو مالی مدد کی اور جنھوں نے کہا کہ ان کے جانے کے لیے سواری نہیں تو ان کو گاڑیاں بھی کر کے دیں۔

،تصویر کا کیپشن

سینکڑوں افراد نے دھمال کیا، عزاداری کی اور چادریں چڑھائیں۔ ندیم کا کہنا ہے ’جمعرات کے دھمال میں آنے والے لوگوں کو نہ زیادہ کہا جا سکتا ہے نہ ہی کم۔ آج جو زائرین دھمال کے لیے آئے ہیں وہ ہر جمعرات کو آنے والے نہیں ہیں۔ یہ وہ لوگ ہیں جو سرکار کے غم میں شریک ہونے آئے ہیں جیسے جوالا مکھی ہو۔‘

،تصویر کا کیپشن

ندیم کہتے ہیں ’فرق کوئی نہیں ہے۔ دھماکے سے پہلے بھی جمعرات بھری مراد تھی اور آج بھی جمعرات بھری مراد ہے۔‘

،تصویر کا کیپشن

دھماکے کے بعد سکیورٹی کے غیرمعمولی انتظامات کیے گئے ہیں۔ سیہون میں داخل ہونے سے لے کر لعل شہباز قلندر کے اندر داخل ہونے تک متعدد سکیورٹی چیک سے گزرنا ہوتا ہے۔