سندھ کا انڈیا سے وعدہ، گندم، چاول اور بھوسے کی فراہمی جاری رکھیں گے

(پندرہ اگست تک آپ ہر روز تین اخبارات ڈان، دی ہندوستان ٹائمز اور ایسٹرن ٹائمز میں 70 برس پہلے شائع ہونے والےخبروں کا خلاصہ یہاں پڑھ سکیں گے)

تصویر کے کاپی رائٹ British Library
Image caption سندھ کی وزارت کی قیادت مسٹر غلام حسین ہدایت اللہ کر رہے تھے

سندھ کا احسن اقدام(ڈان کا چھ اگست کا اداریہ)

حکومتِ سندھ نے ایک احسن فیصلے میں ہندوستان کی حکومت کو یقین دہانی کروائی ہے کہ وہ پاکستان کی حکومت کے قیام کے بعد بھی وعدے کے مطابق گندم، چاول اور بھوسے کی فراہمی جاری رکھے گی۔ سندھ میں ضرورت سے زیادہ خوراک پیدا ہوتی ہے۔

’تقسیم کے زخم کی چبھن 70 برس بعد بھی کم نہ ہو سکی‘

’جاتی عمرہ والوں کا دل شریف خاندان کے لیے دھڑکتا ہے‘

’ماؤنٹ بیٹن کی وجہ سے ہزاروں کی جانیں گئیں‘

انڈیا میں جب سے خوراک کی قلت پیدا ہوئی ہے سندھ انتہائی باقاعدگی سے متاثرہ علاقوں کو خوراک فراہم کر رہا ہے۔

اگر لیگ کی وزارت جس کی قیادت مسٹر غلام حسین ہدایت اللہ کر رہے ہیں، ضروری اور بر وقت امداد فراہم نہ کرتی تو بہت سی جانیں ضائع ہو سکتی تھیں۔ سندھ کی حکومت میں کبھی لالچ کا جذبہ پیدا نہیں ہوا۔

تصویر کے کاپی رائٹ British Library
Image caption اخبارات میں کہیں بہت بڑی تبدیلی اور کہیں معمول کی روز مرہ زندگی کی جھلک ملتی تھی

ایسٹرن ٹائمز

بہار کے طلباء سے اپیل

بہار مسلم سٹوڈنٹ فیڈریشن کے صدر نے صوبے کے مسلمانوں سے اپیل کی ہے کہ وہ پچھلے سال کی طرح اس بار بھی تعلیمی اداروں اور سرکاری عمارتوں پر ترنگا لہرانے پر نہ جھگڑیں۔ انھوں نے مسلم طالب علموں سے کہا کہ وہ اپنے لیے مخصوص ہاسٹلوں پر ترنگا لہرانے کی مخالفت نہ کریں۔ سٹوڈنٹ فیڈریشن کے صدر نے کہا کہ وہ ترنگے کی تعظیم کریں کیونکہ یہ ہر رنگ، نسل اور ذات کے لیے انڈین یونین کی نشانی ہے۔

الور میں ہندی

الور کے مہاراجہ نے ریاست میں ہندی کو سرکاری زبان قرار دینے کا اعلان کیا ہے۔ خبر کے مطابق 'انتظامی کونسل کی تمام کارروائی ہندی اور ناگری رسم الخط میں ہوگی'۔ خبر کے آخر میں نوٹ تھا کہ 'اردو زبان جس پر موجودہ حکمران نے پابندی لگا دی ہے کئی نسلوں سے ریاست کی ایک سرکاری زبان تھی اور مہاراجہ کے ایک جد امجد اردو زبان کے بڑے سرپرست تھے اور الور کبھی اردو مشاعروں کے لیے مشہور تھا۔'

اسی بارے میں