’یہ الیکشن کمیشن ہے آڑھت کی دکان نہیں ہے‘

عمران خان تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption الیکشن کمیشن نے عمران خان کو 25 ستمبر کو الیکشن کمیشن میں پیش ہونے کا حکم جاری کر رکھا ہے

پاکستان میں حزب مخالف کی دوسری بڑی جماعت پاکستان تحریک انصاف نے جماعت کو ملنے والی غیر ملکی فنڈنگ سے متعلق ریکارڈ الیکشن کمیشن میں جمع کروا دیا ہے۔

پیر کو الیکشن کمیشن کو دیے جانے والے ان دستاویزات میں سنہ 2010 سے 2017 تک پاکستان تحریک انصاف کو ملنے والی غیر ملکی امداد کا ریکارڈ ہے۔

نامہ نگار شہزاد ملک کے مطابق پاکستان تحریک انصاف کے وکلا نے الیکشن کمیشن سے درخواست کی ہے کہ اس ریکارڈ کی تفصل کو عام نہ کیا جائے اور نہ ہی درخواست گزار کو اس کی نقول فراہم کی جائیں۔

’غیر ملکی فنڈنگ پر ہر سیاسی جماعت کو حساب دینا ہوگا‘

’عمران خان کرکٹ کی کمائی کی تفصیل جمع کروائیں‘

چیف الیکشن کمشنر جسٹس ریٹائرڈ سردار رضا خان کی سربراہی میں الیکشن کمیشن کے پانچ رکنی بینچ نے پاکستان تحریک انصاف کے سابق ممبر اور بانی رکن اکبر ایس بابر کی طرف سے اس جماعت کو ملنے والی غیر ملکی فنڈنگ سے متعلق درخواست کی سماعت کی۔

فیصل چوہدری کی قیادت میں مذکورہ سیاسی جماعت کی وکلا ٹیم نے غیر ملکی فنڈنگ کا ریکارڈ الیکشن کمیشن کو جمع کروایا۔ اس پر چیف الیکشن کمشنر کا کہنا تھا کہ یہ ریکارڈ بہت جلد جمع کروا دیا جانا چاہیے تھا۔

چیف الیکشن کمشنر کا کہنا تھا کہ اس مواد کا جائزہ لیا جائے گا جس پر پاکستان تحریک انصاف کے وکلا کا کہنا ہے کہ اس کو عام نہ کیا جائے کیونکہ انتخابی قوانین کے مطابق اس طرح کے معاملات الیکشن کمیشن اور اُمیدوار کے درمیان ہوتے ہیں جس پر کسی دوسرے شخص کو اس بارے میں معلومات نہیں بتائی جاسکتیں۔

جسٹس ریٹائرڈ سردار رضا خان نے پاکستان تحریک انصاف کے وکیل کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ وہ ڈائریکٹر جنرل لا کے ساتھ بیٹھ جائیں اور ان کے سامنے ان دستاویزات کو کھولا جائے گا۔

اُنھوں نے کہا کہ اگر اس ریکارڈ میں کوئی کمی ہوئی تو اس کے بارے میں بھی آگاہ کردیا جائے گا اور وہ دستاویزات فراہم کرنے کی ذمہ داری پاکستان تحریک انصاف پر ہوگی۔

پاکستان تحریک انصاف کے وکلا کی ٹیم میں شامل ثقلین حیدر نے الیکشن کمیشن کے پانچ رکنی بینچ سے کہا کہ چونکہ ان کی جماعت نے غیر ملکی فنڈنگ کے بارے میں تفصیلات جمع کروا دی ہیں اس لیے اُنھیں ’رسید‘ فراہم کی جائے جس پر چیف الیکشن کمشنر نے برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ’یہ الیکشن کمیشن ہے کوئی آڑھت کی دکان نہیں ہے۔‘

اُنھوں نے کہا کہ دستاویزات جمع کروانا اُن کی ذمہ داری ہے اور یہ ذمہ داری ادا کر کے اُنھوں نے الیکشن کمیشن پر کوئی احسان نہیں کیا۔

الیکشن کمیشن نے اس درخواست کی سماعت 16 اکتوبر تک ملتوی کردی۔

توہینِ عدالت کیس میں عمران خان کے وارنٹ جاری

پی ٹی آئی نے جان بوجھ کر حقائق چھپائے: الیکشن کمیشن

واضح رہے کہ الیکشن کمیشن نے پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان کے خلاف توہین عدالت کے مقدمے میں قابل ضمانت وارنٹ گرفتاری جاری کر رکھے ہیں۔ الیکشن کمیشن نے عمران خان کو 25 ستمبر کو الیکشن کمیشن میں پیش ہونے کا حکم جاری کر رکھا ہے۔

دوسری جانب پاکستان تحریک انصاف نے بھی حکمراں جماعت پاکستان مسلم لیگ نواز اور پاکستان پیپلز پارٹی کو ملنے والی غیر ملکی فنڈنگ کے بارے میں درخواست الیکشن کمیشن میں جمع کروا دی ہے تاہم اس درخواست کو سماعت کے لیے ابھی منظور نہیں کیا گیا۔

اسی بارے میں