بلوچستان: چمن دھماکے میں ایک بچہ ہلاک،16 افراد زخمی

کوئٹہ تصویر کے کاپی رائٹ AFP

پاکستان کے صوبہ بلوچستان کے سرحدی شہر چمن میں ایک بم دھماکے میں کم از کم ایک شخص ہلاک اور 16 زخمی ہوگئے۔

یہ دھماکہ پاک افغان سرحد کے قریب ہوا۔

چمن میں انتطامیہ کے ایک اہلکار نے بی بی سی کو بتایا کہ دھماکہ اس وقت ہوا جب کسٹمز ہاؤس کے قریب سے سکیورٹی فورسز کی ایک گاڑی گزر رہی تھی۔

دھماکے کے نتیجے میں متعدد افراد زخمی ہوئے ہیں۔ زخمیوں کو ابتدائی طبی امداد کے لیے ڈسٹرکٹ ہسپتال چمن منتقل کیا گیا۔

ہسپتال کے ایم ایس ڈاکٹر اختر بی بی سی کو بتایا کہ دھماکے سے زخمی ہونے والے 17 افراد کو ہسپتال لایا گیا۔

ڈاکٹر اختر کا کہنا تھا کہ زخمیوں میں سے ایک دس سالہ بچہ زخموں کی تاب نہ لا کر چل بسا۔

انھوں نے بتایا کہ زخمیوں میں سے چار کی حالت نازک ہے جن کو علاج کے لیے کوئٹہ منتقل کیا جارہا ہے۔

فوری طور پر دھماکے کی نوعیت کے بارے میں معلوم نہیں ہوسکا۔

بعض اطلاعات کے مطابق اس واقعے کے بعد چمن سے پاکستان اور اور افغانستان کے درمیان سرحد پر سیکورٹی کے انتظامات کو مزید سخت کردیا گیا ہے۔

چمن کوئٹہ شہر سے شمال میں تقریباً 110 کلومیٹر کے فاصلے پر واقع ہے۔

چمن پاکستان اور افغانستان کے دوسرے بڑے شہر قندہار اور دیگر جنوب مغربی علاقوں کے درمیان ایک اہم سرحدی گزرگاہ ہے۔

چمن میں پہلے بھی بم دھماکوں اور بدامنی کے دیگر واقعات رونما ہوتے رہے ہیں۔

ادھر ایران سے متصل سرحدی ضلع کیچ سے دو افراد کی تشدد زدہ لاشیں برآمد ہوئیں۔

کیچ میں انتظامیہ کے ایک اہلکار نے بتایا کہ یہ لاشیں ضلع کیچ میں ہوشاپ کے علاقے تل سر سے برآمد کی گئیں۔

اہلکار کے مطابق دونوں افراد کو گولیاں مار کر ہلاک کیا گیا تھا۔

دونوں افراد کی شناخت ہو گئی ہے ان کا تعلق ضلع کیچ کے علاقے دمب سے بتایا گیا ہے۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں