ہائی کورٹ نے عمران خان کے ناقابل ضمانت وارنٹ گرفتاری معطل کر دیے

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

اسلام آباد ہائی کورٹ نے الیکشن کمیشن کی طرف سے پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان کے ناقابل ضمانت وارنٹ گرفتاری معطل کر دیے ہیں۔

عدالت نے اس ضمن میں فریقین سے سات نومبر کو جواب طلب کیا ہے۔

الیکشن کمیشن کی طرف سے عمران خان کے ناقابل ضمانت وارنٹ گرفتاری کے خلاف دائر کی گئی اپیل پر سماعت جسٹس عامر فاروق کی سربراہی میں اسلام آباد ہائی کورٹ کے تین رکنی بینچ نے کی۔

عائشہ گلالئی رکنِ قومی اسمبلی رہیں گی: الیکشن کمیشن

’عمران خان کی ویڈیو اور اظہارِ یکجہتی ‘

درخواست گزار عمران خان کے وکیل بابر اعوان نے اس درخواست کے حق میں دلائل دیتے ہوئے کہا کہ الیکشن کمیشن نے 12 اکتوبر کو ان کے موکل کے وارنٹ گرفتاری جاری کیے تھے جس کی وجہ سے اُن کے موکل کو ذہنی اذیت کا سامنا کرنا پڑا۔

اُنھوں نے کہا کہ الیکشن کمیشن کے اس اقدام کی وجہ سے سیاسی مخالفین کو عمران خان پر تنقید کرنے کا موقع ملا۔

نامہ نگار شہزاد ملک کے مطابق بابر اعوان کا کہنا تھا کہ الیکشن کمیشن کے پاس کسی بھی شخص کے وارنٹ گرفتاری جاری کرنے کا کوئی اختیار نہیں ہے۔

اُنھوں نے کہا کہ الیکشن کمیشن نے ان کے موکل کے وارنٹ گرفتاری جاری کرکے اپنے اختیارات سے تجاوز کیا ہے۔

عمران خان کے وکیل نے عدالت سے استدعا کی کہ الیکشن کمیشن کے اس اقدام کو نہ صرف کالعدم قرار دیا جائے بلکہ اختیارات سے تجاوز کرنے والوں کے خلاف قانون کے مطابق کارروائی بھی کی جائے۔

اسلام آباد ہائی کورٹ نے ابتدائی دلائل سننے کے بعد الیکشن کمیشن کی طرف سے عمران خان کے جاری کیے گئے ناقابل ضمانت ورانٹ گرفتاری معطل کردیے اور اس درخواست میں بنائے گئے فریقین کو نوٹس جاری کرتے ہوئے اُن سے جواب طلب کیا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

عمران خان کی طرف سے اسلام آباد ہائی کورٹ میں دائر کی گئی اس درخواست میں الیکشن کمیشن اور اکبر ایس بابر کو فریق بنایا گیا ہے۔

واضح رہے کہ الیکشن کمیشن نے توہین عدالت کے مقدمے میں پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان کے ناقابل ضمانت ورانٹ گرفتاری جاری کر رکھے ہیں اور اُنھیں 26 اکتوبر کو پیش ہونے کا حکم دے رکھا ہے۔

الیکشن کمیشن کی طرف سے اسلام آباد پولیس کے ایس ایس پی آپریشنز کو بھی حکم دے رکھا ہے کہ ملزم عمران خان کو گرفتار کرکے 26 اکتوبر کو الیکشن کمیشن میں پیش کیا جائے۔

پاکستان تحریک انصاف کو غیر ملکی فنڈنگ کے بارے میں الیکشن کمیشن میں زیر سماعت درخواست پر عمران خان نے الیکشن کمیشن کے رویے کو تعصب پر مبنی قرار دیا تھا جس پر اُنھیں توہین عدالت میں اظہار وجوہ کا نوٹس جاری کیا گیا تھا۔

تاہم وہ اس مقدمے میں الیکشن کمیشن کی طرف سے بارہا بلانے کے باوجود پیش نہیں ہوئے۔

پاکستان تحریک انصاف کی قیادت نے امکان ظاہر کیا ہے کہ عمران خان آئندہ سماعت پر الیکشن کمیشن میں پیش ہوں گے۔

اسی بارے میں