محمد علی جناح کی بیٹی دینا واڈیا انتقال کر گئیں

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption قائد کی بیٹی کا انتقال نیویارک میں ہوا

بانیِ پاکستان قائد اعظم محمد علی جناح کی اکلوتی بیٹی دینا واڈیا جمعرات کو نیویارک میں انتقال کر گئی ہیں ان کی عمر اٹھانوے برس تھی۔

ممبئی میں واڈیا گروپ کے ترجمان کی طرف سے جاری ہونے والے ایک بیان میں کہا گیا ہے انھوں نے اپنے سوگواراں میں بیٹے نسلی این واڈیا جو واڈیا گروپ کے چیئرمین بھی ہیں اور بیٹی ڈیانا این واڈیا کو چھوڑا ہے۔

’دینا واڈیا سرکاری مہمان بننے کو تیار نہ تھیں‘

’جناح کا کوئی پڑپوتا نہیں‘

عالمی شہرت یافتہ مصنف اور تاریخ داں سٹینلے ولپورٹ کے مطابق دینا واڈیا چودہ اور پندرہ اگست کی رات کو سنہ 1919 کو لندن میں پیدا ہوئی تھیں۔

پاکستان میں تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان نے ان کی وفات کی خبر پر ٹوئٹر میں کہا ہے کہ اپنے قائد کی بیٹی کی وفات کی خبر سے انھیں شدید صدمہ پہنچا ہے۔ انھوں نے ان کی روح کے لیے دعا بھی کی ہے۔

ٹوئٹر پر بے شمار لوگ تعزیت کا اظہار کر رہے ہیں۔

ان میں کئی صاحفی اور دیگر جانی پہچانی شخصیات شامل ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ TWITTER
Image caption ٹوئٹر پر بے شمار لوگ تعزیت کا اظہار کر رہے ہیں۔

اسلام آباد سے سینیئر صحافی احتشام الحق نے اپنے ٹویٹ میں لکھا کہ، ’قائد اعظم کی اکلوتی بیٹی اور ہو بہو ان ہی جیسی دینا واڈیا انتقال کر گئی ہیں۔ اللہ ان کی روح کو سکون بخشے۔‘

صحافی عمر آر قریشی نے اپنی ٹویٹ میں لکھا، ’کتنی عجیب بات ہے کہ جناح کی اکلوتی بیٹی اس ملک میں کبھی نہیں رہیں، جو ان کے والد نے بنایا۔ سنہ 2004 میں ایک مرتبہ وہ پاکستان آئیں۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ TWITTER
Image caption ’دینا واڈیا اس ملک میں کبھی رہائش پزیر نہیں ہوئیں جو ان کے والد نے بنایا‘

یاد رہے کہ سنہ دو ہزار چار میں جب بھارتی کرکٹ ٹیم چودہ سال کے طویل وقفے کے بعد پاکستان آئی تھی تو اس سیریز کے دوران بھارت سے آنے والی شخصیات میں قائداعظم محمد علی جناح کی صاحبزادی دینا واڈیا قابل ذکر تھیں۔ شہریارخان نے اپنی کتاب ' کرکٹ کالڈرن' میں انکشاف کیا ہے کہ دینا واڈیا سرکاری مہمان کی حیثیت میں پاکستان آنے کے لیے تیار نہ تھیں۔

شہریار خان لکھتے ہیں 'میں نے اپنے دوست نسلی واڈیا کو فون کر کے انہیں پاک بھارت ون ڈے دیکھنے کی دعوت دی۔ نسلی واڈیا قائداعظم کے نواسے ہیں۔انہوں نے مجھے بتایا کہ دینا واڈیا جو نیویارک میں رہتی ہیں، ان دنوں ممبئی آئی ہوئی ہیں۔ نسلی واڈیا نے مجھے مشورہ دیا کہ میں ان کی والدہ سے بھی بات کر کے انہیں دورے کے لیے رضامند کروں۔'

یاد رہے کہ قائداعظم کے انتقال کے بعد ان کی بیٹی کا یہ پاکستان کا پہلا دورہ تھا۔

اسی بارے میں