اسما کیس:’ملزم کا ڈی این اے میچ کر گیا‘، مردان میں چھاپے

حکومتِ پنجاب کی ٹویٹ کا عکس تصویر کے کاپی رائٹ Twitter

حکومتِ پنجاب کا کہنا ہے کہ مردان کی چار سالہ بچی اسما سے جنسی زیادتی کے مجرم کی تلاش کے سلسلے میں خیبر پختونخوا کی پولیس کی جانب سے جو ڈی این اے کے نمونے فراہم کیے گئے تھے ان میں سے ایک بچی کے جسم سے ملنے والے ڈی این اے سے مل گیا ہے۔

ٹوئٹر پر حکومتِ پنجاب کے آفیشل اکاؤنٹ سے کی گئی ٹویٹس کے مطابق ’اسما ریپ کیس کے ملزم کا ڈی این اے میچ کر گیا ہے۔‘

مزید پڑھیے

ڈی این اے فنگر پرنٹنگ کیا ہے؟

’مردان میں بھی قتل سے پہلے بچی کو ریپ کیا گیا‘

مردان: چیف جسٹس نے بچی کے قتل کا ازخود نوٹس لے لیا

ڈی این اے نے ملزم تو پکڑوا دیا، سزا دلوا پائے گا

ٹویٹ میں کہا گیا ہے کہ مذکورہ شخص کا نام ظاہر نہیں کیا جا رہا اور اس سلسلے میں پنجاب حکومت خیبر پختونخوا حکومت سے رابطہ کر رہی ہے۔

ایک اور ٹویٹ میں بتایا گیا ہے کہ پنجاب فورینزک سائنس ایجنسی نے اس معاملے میں 140 سے زیادہ ڈی این اے ٹیسٹ کیے اور یہ کہ بچوں کا استحصال کرنے والوں کو قانون کے تحت مثالی سزا دی جانی چاہیے۔

ادھر پی ایف ایس اے کے ذرائع نے لاہور میں بی بی سی اردو کے نامہ نگار عمر دراز کو بتایا ہے کہ خیبر پختونخوا پولیس کی جانب سے جو 145 نمونے فراہم کیے گئے تھے ان میں دو ایسے نمونے ہیں جو اسما کے جسم سے ملنے والے مواد سے مطابقت رکھتے ہیں۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ یہ دونوں نمونے ایسے افراد کے ہیں جن کی عمر 30 برس سے کم ہے۔

بی بی سی کو موصول ہونے والی اطلاعات کے مطابق پولیس نے اسما کے دو قریبی رشتہ داروں کو گرفتار کیا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Twitter

خیبر پختونخوا کے آئی جی کے دفتر کی جانب سے بی بی سی کو بتایا گیا ہے کہ حکومتِ پنجاب کی رپورٹ خیبرپختونخوا حکام کو مل گئی ہے۔

آئی جی کے ترجمان نے بی بی سی اردو کے رفعت اللہ اورکزئی سے بات کرتے ہوئے کہا کہ رپورٹ ملنے کے بعد مردان میں ملزمان کی گرفتاری کے لیے چھاپے بھی مارے گئے ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ اسما کیس کے اُن ملزمان اور مشتبہ افراد جن کے ڈی این اے نمونے پنجاب بھیجے گئے تھے، ان کی کڑی نگرانی کی جا رہی تھی۔

مردان کے علاقے گجر گڑھی کی چار سالہ اسما کو جنوری کے دوسرے ہفتے میں اغوا کیا گیا تھا جس کے بعد اس کی لاش قریبی کھیتوں سے ملی تھی۔

پوسٹ مارٹم میں اسما سے جنسی زیادتی کی تصدیق ہوئی تھی اور خیبر پختونخوا کے حکام نے اس معاملے میں لاہور میں واقع پنجاب فورینزک لیبارٹری سے مدد لی تھی۔

خیال رہے کہ منگل کو ہی پاکستان کی سپریم کورٹ کے چیف جسٹس نے اس معاملے کے ازخود نوٹس کی سماعت کے دوران پنجاب فورینزک لیب کو جلد رپورٹ فراہم کرنے کی ہدایت کی تھی۔

سماعت کے دوران سپریم کورٹ نے اس معاملے میں خیبرپختونخوا پولیس کو رپورٹ پیش کرنے کے لیے مزید دو ہفتے کی مہلت دیتے ہوئےسماعت 21 فروری تک کے لیے ملتوی کر دی تھی۔

اسی بارے میں