مسلح افواج کے نام پر چلنے والے جعلی اکاؤنٹس کے خلاف کاروائی کا مطالبہ

فوج تصویر کے کاپی رائٹ AFP

پاکستانی فوج نے وفاقی تحقیقاتی ادارے ایف آئی اے سے ایسے جعلی سوشل میڈیا اکاؤنٹس کے خلاف کارروائی کی درخواست کی ہے جو مسلح افواج اور اس کے متعلقہ اداروں کے نام سے قائم کیے گئے ہیں۔

ایف آئی اے کے ایک اعلیٰ اہلکار نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بی بی سی اردو کے شہزاد ملک کو بتایا کہ انھیں فوج کی جانب سے 250 سے زیادہ اکاؤنٹس کی فہرست فراہم کی گئی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ یہ اکاؤنٹس فیس بک اور ٹوئٹر سمیت مختلف سوشل میڈیا پلیٹ فارمز پر بنائے گئے ہیں۔

ایف آئی اے کے اہلکار کا کہنا تھا کہ جن اداروں کے نام پر جعلی اکاؤنٹس بنائے گئے ہیں ان میں پاکستان کی برّی، بحری اور فضائی افواج کے علاوہ آئی ایس آئی اور ملٹری انٹیلی جنس جیسے خفیہ ادارے بھی شامل ہیں۔

اہلکار کے مطابق ان اکاؤنٹس سے غیرمصدقہ معلومات پھیلائی جا رہی تھیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ facebook
Image caption حال ہی میں سوشل میڈیا پر آئی ایس آئی کے نام سے بنے ہوئے اکاؤنٹ سے عاصمہ جہانگیر کی موت پر پوسٹس کی گئیں

اہلکار نے مذکورہ اکاؤنٹس کی مزید تفصیلات تو فراہم نہیں کیں تاہم پاکستان میں ٹوئٹر اور فیس بک پر درجنوں ایسے اکاؤنٹس موجود ہیں جو فوج کا نام استعمال کرتے ہیں۔

حالیہ دنوں میں ممتاز وکیل عاصمہ جہانگیر کی موت کے بعد سوشل میڈیا پر کئی ایسے اکاؤنٹس تھے جو بظاہر فوج کی جانب سے چلائے جا رہے تھے اور ان میں انتقال کی جانے والی وکیل کے خلاف ہرزہ سرائی کی گئی تھی۔

ان اکاؤنٹس کے خلاف سوشل میڈیا پر شدید تنقید کی گئی تھی اور ان کے خلاف ایکشن لینے کا مطالبہ کیا گیا تھا۔

واضح رہے کے فوجی ترجمان کی جانب سے عاصمہ جہانگیر کی موت پر کوئی رد عمل سامنے نہیں آیا ہے۔

اسی بارے میں