’میں اپنے علاقےمیں پہلی بائیک چلانے والی لڑکی ہوں‘
اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں

’اپنے علاقے میں بائیک چلانے والی پہلی لڑکی ہوں‘

پاکستان میں سفر کرنے کیلئے خواتین کے پاس محدود ذرائع ہیں۔ ایسے میں ملک میں گنتی بھر خواتین معاشرتی روایات کو چیلنج کرتے ہوئے موٹرسائیکل چلا رہی ہیں۔بی بی سی اردو اپنے ناظرین کے لیے لا رہی ہے پاکستانی خواتین بائیکرز کی کہانیاں جنھوں نے موٹر بائیک کو اپنے زندگی بدلنے کے لیے استعمال کیا۔ ‫اس سیریز کی پہلی کہانی ہے سرگودھا کی فاطمہ حبیب کی جنھوں نے پنجاب حکومت کے پروگرام وومن آن ویلز کے تحت موٹر سائیکل چلانا سیکھی۔