رائیونڈ میں پولیس چیک پوسٹ پر خودکش حملے میں نو ہلاک، تحقیقات جاری

تصویر کے کاپی رائٹ EPA

پاکستان کے صوبہ پنجاب کے علاقے رائیونڈ میں چیک پوسٹ پر خودکش حملے میں ہلاک ہونے والے پولیس اہلکاروں کی نماز جنازہ ادا کر دی گئی ہے جبکہ واقعے کی تحقیقات جاری ہیں۔

بدھ کی رات پولیس چیک پوسٹ پر ہونے والے دھماکے میں کم سے کم پانچ پولیس اہلکاروں سمیت نو افراد ہلاک جبکہ 24 افراد زخمی ہوئے تھے۔

ہلاک ہونے والے پولیس اہلکاروں کی نماز جنازہ جمعرات کو لاہور میں قلعہ گجر سنگھ پولیس لائنز میں ادا کی گئی جس میں وزیراعلیٰ پنجاب، گورنر، کور کمانڈر اور دیگر اعلیٰ حکام نے شرکت کی۔

پنجاب پولیس کے آئی جی عارف نواز نے میڈیا کو بتایا کہ خودکش حملہ آور کے اعضا مل گئے ہیں اور حملے کے حوالے سے تحقیقات جاری ہیں۔

انھوں نے کہا کہ خودکش دھماکہ رائیونڈ میں ہونے والے مذہبی اجتماع سے 500 میٹر کی دوری پر ہوا۔

اس سے پہلے ڈپٹی کمشنر لاہور سمیر سید نے بی بی سی کو بتایا کہ اس خود کش حملے میں 5 پولیس اہلکاروں سمیت 9 افراد ہلاک ہوئے ہیں جبکہ 24 افراد زخمی ہوئے ہیں۔

رائیونڈ میں یہ دھماکہ ایک ایسے وقت پر ہوا ہے جب رائیونڈ میں مذہبی اجتماع جاری ہے اور یہ مذہبی اجتماع 18 مارچ تک جاری رہے گا۔

پولیس کا کہنا ہے کہ یہ خود کش حملہ مذہبی اجتماع کے باہر موجود سکیورٹی چیک پوسٹ پر ہوا ہے۔

اس بارے میں مزید پڑھیے

لاہور: بیدیاں روڈ پر دھماکہ، ’چار اہلکاروں سمیت چھ ہلاک‘

لاہور ایک بار پھر نشانہ

’دھماکہ ہوگا تو کیا ہوگا، مر جائیں گے‘

ڈی آئی جی آپریشنز حیدر اشرف کا کہنا ہے کہ بظاہر ایسا معلوم ہوتا ہے کہ اس حملے میں پولیس اہلکاروں کو ہدف بنایا گیا۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

حکومت پنجاب نے ٹویٹ کی ہے کہ تحصیل ہیڈ کوارٹر ہسپتال رائیونڈ میں کم از کم چھ لاشیں اور 14 زخمی لائے گئے ہیں۔

لاہور کے ایس ایس پی آپریشنز منتظر مہدی نے بی بی سی کو بتایا کہ دھماکے میں اے ایس پی رائیونڈ زبیر نذیر بھی معمولی زخمی ہوئے جنھیں ابتدائی طبی امداد دی جا رہی تھی۔

حملے کا نشانہ بننے والی چیک پوسٹ مذہبی اجتماع کے باہر موجود تھی۔

رائیونڈ میں ہونے والے سالانہ مذہبی اجتماع میں شرکت کرنے کے لیے ملک بھر سے سینکڑوں افراد آتے ہیں اور ہر سال کی طرح اس سال بھی سکیورٹی کے خصوصی انتظامات کیے گئے ہیں۔

وزیرا علیٰ پنجاب محمد شہبازشریف کی نے رائیونڈ دھماکے میں مذمت کی ہے اور آئی جی پنجاب سے واقعے کی رپورٹ طلب کی ہے۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں