’اربوں کی پراپرٹی تباہ اور انٹیلی جنس ایجنسی کو معلوم ہی نہیں کہ خادم رضوی کیا کرتا ہے‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

پاکستان کی عدالت عظمیٰ میں دو رکنی بینچ نے فیض آباد دھرنے سے متعلق از خود نوٹس کیس کی سماعت کی جس میں عدالت نے آئی ایس آئی کی جانب سے جمع کرائی گئی رپورٹ کو سخت تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے اسے 'غیر تسلی بخش' قرار دیا۔

سپریم کورٹ میں جسٹس فائز عیسیٰ اور جسٹس مشیر عالم پر مبنی بینچ نے ڈپٹی اٹارنی جنرل سہیل محمود سے پوچھا کہ اس رپورٹ میں تحریک لبیک پاکستان کے سربراہ خادم حسین رضوی کے بارے میں مطلوبہ معلومات فراہم نہیں کی ہیں اور وہ کیسے اس رپورٹ پر مطمئن ہو سکتے ہیں۔

'عدالت نے پوچھا تھا کہ پیسہ کہاں سے آرہا ہے، خادم رضوی کا ذریعہ معاش کیا ہے، کیا وہ سکول ٹیچر ہے، کاروبار کر رہا ہے یا چندے پر چلتا ہے؟ '

اس بارے میں مزید پڑھیے

’آرمی چیف کا نام کیسے استعمال ہوا؟ تحریری جواب دیں‘

خادم حسین رضوی کے ناقابل ضمانت وارنٹ

فیض آباد دھرنا: ’آئی ایس آئی اور آئی بی سنجیدگی دکھائیں‘

نامہ نگار عابد حسین کے مطابق جسٹس فائز عیسی نے آئی ایس آئی پر نکتہ چینی کرتے ہوئے کہا کہ 'اربوں کی پراپرٹی تباہ کردی گئی ہے اور پریمیئرانٹیلی جنس ایجنسی کو معلوم ہی نہیں کہ خادم رضوی کیا کرتا ہے۔'

'پریمیئرانٹیلی جنس ایجنسی کی رپورٹ کے بعد ملکی تحفظ کیلئے خوف آنے لگا ہے۔'

محکمہ دفاع کے نمائندے کرنل فلک ناز نے عدالت کو بتایا کہ خادم حسین رضوی خطیب ہیں اور ان کی سیاسی جماعت ہے جو چندے سے چلتی ہے۔

اس پر عدالت نے کہا کہ 'آپ یہ لکھ کر دے دیتے کہ خادم رضوی دوسروں کے پیسے پر پل رہا ہے۔'

جسٹس فائز عیسی نے کہا کہ وزارت دفاع بھی عدالت کی طرح عوام کو جوابدہ ہے۔

سپریم کورٹ نے فیض آباد دھرنے سے متعلق پیمرا سے دس روز میں رپورٹ طلب کر لی ہے اور ساتھ ساتھ سوشل میڈیا پر مذہبی منافرت کی روک تھام کرنے سے متعلق اٹارنی جنرل سے بھی رپورٹ طلب کی ہے۔

کیس کی سماعت اب دو ہفتوں کیلئے ملتوی کردی گئی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption گذشتہ سال نومبر میں تحریک لبیک پاکستان نے تین ہفتے تک اسلام آباد میں دھرنا دیا تھا

واضح رہے کہ گذشتہ سال انتہائی دائیں بازو کی جماعت تحریک لبیک پاکستان نے الیکشن ایکٹ 2017 میں توہین رسالت سے متعلق قوانین میں تبدیلی پر احتجاج کرنے کے لیے نومبر میں دارالحکومت اسلام آباد کو دھرنا دے کر مفلوج کر دیا تھا۔

تین ہفتے تک جاری رہنے کے بعد حکومت نے دھرنے کے خلاف آپریشن کیا جس کے بعد مظاہروں میں اربوں روپوں کی پراپرٹی کو نقصان پہنچا تھا اور کئی افراد ہلاک ہوئے تھے۔

اس کے بعد فوج کی ثالثی میں فریقین کے درمیان چھ نکاتی معاہدہ طے پایا تھا۔

اسی بارے میں