ملالہ یوسفزئی کی ساڑھے پانچ برس بعد سوات میں اپنے آبائی گھر واپسی

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

امن کا نوبیل انعام حاصل کرنے والی دنیا کی کم عمر ترین شخصیت ملالہ یوسفزئی ساڑھے پانچ برس بعد اپنے آبائی علاقے سوات پہنچی ہیں جہاں انھوں نے اپنے گھر کا دورہ کیا۔

20 سالہ ملالہ کو اکتوبر 2012 میں طالبان کے قاتلانہ حملے کے بعد علاج کے لیے انگلینڈ منتقل کیا گیا تھا اور وہ صحت یاب ہونے کے بعد حصولِ تعلیم کے لیے وہیں مقیم ہیں۔

نامہ نگار رفعت اللہ اورکزئی کے مطابق مینگورہ میں ملالہ یوسفزئی نے اپنی والدہ، والد اور دو بھائیوں کے ہمراہ اپنے گھر کا دورہ کیا اور وہاں کچھ وقت گزارا جس کے بعد وہ وہاں سے روانہ ہو گئیں۔

’یہی خواب تھا کہ پاکستان جاؤں اور بلاخوف لوگوں سے ملوں‘

’سیاست بہت پیچیدہ ہے میں وزیرِ اعظم نہیں بننا چاہتی‘

’ملالہ لوگ تم سے نہیں خود سے نفرت کرتے ہیں‘

انھوں نے بتایا کہ اس کے بعد ملالہ یوسفزئی نے سوات میں ہی ایک کیڈٹ کالج کا بھی دورہ کیا جہاں ان کی چند سہلیوں کو بھی مدعو کیا گیا تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

اطلاعات کے مطابق سوات میں سخت سکیورٹی انتظامات کیے گئے ہیں اور ملالہ یوسفزئی کے آبائی گھر کی جانب جانے والی تمام سڑکوں کو بند کر دیا گیا ہے۔

یاد رہے کہ ملالہ یوسفزئی چار روزہ دورے پر بدھ کی شب اسلام آباد پہنچی تھیں۔ پاکستان پہنچنے پر ان کا کہنا تھا کہ یہ ان کی زندگی میں سب سے زیادہ خوشی کا دن ہے کہ وہ اپنے وطن میں اپنی مٹی پہ کھڑی ہیں۔

ملالہ یوسفزئی 2012 میں خود پر ہونے والے حملے کے بعد اب جب پہلی بار پاکستان آئی ہیں تو فی الحال ان کی نقل و حرکت خاصی محدود ہے۔

اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں
ملالہ کی پسندیدہ پی ایس ایل ٹیم کونسی ہے؟

وہ ایک مقامی ہوٹل میں قیام پذیر ہیں جہاں ان کی سکیورٹی کے سخت اقدامات کیے گئے ہیں۔ سادہ کپڑوں میں ملبوس اہلکاروں کے علاوہ پاکستانی فوج کے افسران بھی سکیورٹی کی نگرانی کے لیے تعینات کیے گئے ہیں۔

گذشتہ روز ملالہ یوسفزئی نے بی بی سی کو خصوصی انٹرویو دیا اور کرکٹ سے لے کر سیاست تک مختلف موضوعات پر بات کی۔

ملالہ یوسفزئی کا کہنا تھا کہ انھیں آج کا پاکستان 2012 کے پاکستان سے خاصا مختلف نظر آیا ہے اور وہ ملک میں امن قائم ہونے پر بہت خوش ہیں۔

'والدین بچیوں کو تعلیم کے لیے سکول بھیج رہے ہیں، ملکی معیشت میں پہلے سے زیادہ خواتین اپنا حصہ ڈال رہی ہیں، حال ہی میں یہاں پاکستان سپر لیگ کے میچوں کا انعقاد کیا گیا، میں خوش ہوں کہ پاکستان ترقی کر رہا ہے۔'

اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں
ملالہ کا کہنا تھا کہ پاکستان واپس آنا وہ خواب تھا جو وہ ہمیشہ سے دیکھتی آئی تھیں

اس سے قبل جمعرات کو ملالہ نے پاکستان کے وزیراعظم شاہد خاقان عباسی سے ملاقات کی جس کے بعد وزیراعظم ہاؤس میں ان کے اعزاز میں ایک تقریب کا اہتمام بھی کیا گیا تھا۔

بی بی سی کے نامہ نگار کا کہنا ہے کہ سوات سے ملالہ یوسفزئی کی چند اساتذہ، مقامی صحافیوں، قریبی رشہ داروں سمیت تقریباً 70 افراد پر مشتمل ایک وفد اسلام آباد کے لیے روانہ ہو گیا ہے جو آج ملالہ یوسفزئی سے مقامی ہوٹل میں ملاقات کریں گے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Faridul haq Haqqani
Image caption ملالہ سوات میں اپنے قریبی رشتے داروں کے ساتھ

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں