اردو کے معروف مزاح نگار مشتاق احمد یوسفی انتقال کر گئے

،آڈیو کیپشن

افتخار عارف کہتے ہیں کہ مشتاق احمد یوسفی ہمارے عہد کے سب سے بڑے نثر نگار تھے۔

اردو کے معروف مزاح نگار مشتاق احمد یوسفی 95 برس کی عمر میں بدھ کو کراچی میں انتقال کر گئے ہیں۔ وہ طویل عرصے سے علیل تھے۔

ان کی نماز جنازہ جمعرات کو کراچی کے علاقے ڈیفنس فیز 5 کی سلطان مسجد میں ادا کی جائے گی۔

مشتاق یوسفی کے دستاویزات کے مطابق ان کی تاریخ پیدائش چار اگست سنہ 1923 ہے اور وہ انڈیا کی ریاست راجھستان میں پیدا ہوئے تھے۔

انھوں نے تقسیم ہند کے بعد پاکستان ہجرت کی اور کراچی میں سکونت اختیار کی۔

پاکستان کے مقامی ذرائع ابلاغ کے مطابق مشتاق احمد یوسفی کو ادب میں نمایاں کارکردگی پر حکومت پاکستان کی جانب سے سنہ 1999 میں ستارۂ امتیاز اور سنہ 2002 میں ہلال امتیاز سے نوازا گیا۔

یہ بھی پڑھیے

مشتاق احمد یوسفی نے آگرہ یونیورسٹی سے فلسفے میں ایم اے کیا جس کے بعد انھوں نے علی گڑھ مسلم یونیورسٹی سے ایل ایل بی کیا۔

مشتاق احمد یوسفی کئی کتابوں کے مصنف ہیں۔ ان کی مشہور کتانوں میں چراغ تلے، خاکم بدہن، زرگذشت، آب گم اور آخری کتاب شام شعریاراں شامل ہے۔