عمران خان: وہ جو ’سربسجدہ‘ ہوا کبھی تو ٹوئٹر سے آنے لگی صدا۔۔۔

عمران خان تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

تحریکِ انصاف کے سربراہ عمران خان کی بدھ کی رات کو اپنی اہلیہ بشریٰ بی بی کے ہمراہ پاکپتن میں بابا فرید گنج شکر کی درگاہ پر حاضری کی ویڈیو منظر عام پر آنے کے بعد سوشل میڈیا پر ایک ہنگامہ کھڑا ہو گیا جو تاحال سرد ہونے کا نام نہیں لے رہا۔

بحث اس بات پر ہے کہ انھوں نے درگاہ کی چوکھٹ پر ’ماتھا ٹیکا‘۔

درگاہ پر حاضری کے موقعے پر کسی نے ویڈیو بنا لی جو پہلے تو الیکٹرانک میڈیا پر چلی، پھر دیکھتے ہی دیکھتے سوشل میڈیا پر وائرل ہو گئی۔

مزید پڑھیے

الیکشن 2018 پر بی بی سی اردو کی خصوصی کوریج

پیرانِ سیاست کے پیر

میرا جرم شادی کی چاہت ہے: عمران خان

ایک طرف مخالفین ہیں جو اس عمل کو مذہبی نقطۂ نظر سے تنقید کا نشانہ بنا رہے ہیں تو دوسری جانب تحریکِ انصاف کے حامی اس کے دفاع میں مصروف ہیں۔

صحافی مبشر زیدی نے ٹوئٹر پر لکھا: 'کسی کے مذہبی عقائد میرا مسئلہ نہیں ہیں لیکن عمران خان کی جانب سے ایک درگاہ پر سجدہ پریشان کن ہے۔'

اس کے جواب میں diplomat_79 @ کے اکاؤنٹ سے ایک صاحب نے لکھا کہ 'یہ عمران خان کے عقائد کا معاملہ ہے اور مجھے یا کسی اور کو ان کے بارے میں رائے قائم کرنے کا حق نہیں ہے۔'

عمران خان اور ان کی اہلیہ نے درگاہ پر چادر چڑھائی اور سجادہ نشین عظمت سعید چشتی سے ملاقات کی۔

صحافی طلعت حسین نے ٹویٹ کی: ’کچھ کہنے کی ضرورت نہیں ہے۔ یہ ویڈیو کلپ اپنی وضاحت آپ کر رہا ہے۔‘

کئی دوسرے لوگوں نے فیس بک اور ٹوئٹر پر عمران خان کے عمل کی مختلف توجیہات پیش کی ہیں۔ اس سلسلے میں ان کی اور بشریٰ بی بی کے درگاہ میں حاضری کی ویڈیو کے ایک ایک فریم کا تجزیہ ہو رہا ہے۔

کچھ لوگوں نے وضاحت کرتے ہوئے موقف پیش کیا کہ عمران خان نے ماتھا فرش پر نہیں ٹیکا، صرف چوکھٹ کو چوم کر اٹھ کھڑے ہوئے۔

‏Aimalkhankakar @ نے کہا: 'یہ سجدہ نہیں تھا، عمران خان نے صرف درگاہ کے فرش کو بوسہ دیا ہے۔ بہر صورت، کسی کے مذہبی عقائد سے آپ کو کیا مسئلہ ہے؟ عمران خان کا مذہب ان کا ذاتی معاملہ ہے۔'

کالم نگار مشرف زیدی نے ٹوئٹر پر لکھا: 'یہ بات دلچسپ ہے کہ عام حالات میں کشادہ ذہنوں والے لوگ بھی درگاہوں کے معاملے پر سخت وہابی نقطۂ نظر اپنا رہے ہیں۔۔۔ وہ لوگ جو ویسے برداشت کا درس دیتے ہیں انھیں کسی کی عبادت پر اعتراض نہیں کرنا چاہیے۔'

عمران خان پر ہونے والے اعتراض کے جواب میں ایک صارف نے بلاول بھٹو زرداری کی ایک تصویر لگائی جس میں وہ کسی ہندو دیوتا کی مورتی پر پانی چھڑک رہے ہیں۔

وہ تصویر تب کی ہے جب بلاول بھٹو زرداری اقلیتی ہندو برادری کی دیوالی تقریبات میں شریک ہوئے تھے۔

toseef_bukhari @ نے دلچسپ انداز میں لکھا: 'ایک بار ایک صحافی نے قائداعظم محمد علی جناح سے کہا: ’مسٹر جناح، میں آپ کو ووٹ نہیں دوں گا کیونکہ آپ شیعہ ہیں۔ یہ سن کر قائد بے اختیار مسکرا دیے اور بولے، 'گاندھی کو دے دو، وہ سنی ہے!'

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں