دیر: خواتین کے ویران پولنگ سٹیشن سے طویل قطاروں تک

Image caption دیر میں خواتین نے پہلی مرتبہ ووٹ ڈال کر اپنا حقِ رائے دہی استعمال کیا

پاکستان کے صوبہ خیبر پختونخوا کے قدامت پسند سمجھے جانے والے مالاکنڈ ڈویژن کے دو اضلاع دیر پائیں اور دیر بالا میں پاکستان بننے کے بعد سے پہلی مرتبہ خواتین نے انتخابی عمل میں بڑی تعداد میں اپنے حق رائے دہی کا استعمال کیا ہے۔

دیر پائیں اور دیر بالا کے آٹھ صوبائی اور تین قومی اسمبلی کے حلقوں کے غیر حتمی غیر سرکاری نتائج کے مطابق مجموعی طورپر تقریباً 40 فیصد خواتین نے حالیہ انتخابی عمل میں اپنے حق رائے دہی کا استعمال کیا جسے اس علاقے میں ایک ریکارڈ کہا جارہا ہے۔

الیکشن 2018: بی بی سی اردو کا خصوصی ضمیمہ

الیکشن 2018 کے نتائج کا انٹرایکٹو نقشہ

عمران خان کی وکٹری سپیچ: ’سب اداروں کو مضبوط کروں گا‘

دیر پائیں میں الیکشن کے روز خواتین کے پولنگ سٹیشنز پر ایسے مناظر دیکھنے کو ملے جو شاید اس علاقے میں پہلے نظر نہیں آئے تھے۔ بیشتر پولنگ سٹیشنز پر صبح سے ہی شٹل کاک برقعوں میں ملبوس خواتین کا جوش خروش دکھائی دیا، تاہم 12 بجے کے بعد اس تعداد میں خاطر خواہ اضافہ ہوا۔

بعض پولنگ سٹیشنز پر خواتین لمبی لمبی قطاروں میں نظر آئیں جہاں پولنگ عملے اور سکیورٹی اہلکاروں کو ووٹروں کو ترتیب کے ساتھ کھڑا کرنے میں مشکلات کا سامنا بھی رہا۔

Image caption خواتین ووٹروں میں کافی جوش و خروش دکھائی دیا۔

دیر پائیں کے علاقے رباط میں سڑک سے چند فرلانگ کے فاصلے پر خواتین کا ایک پولنگ سٹیشن قائم کیا گیا تھا۔ اس پولنگ سٹیشن پر خواتین ووٹروں کی تعداد سب سے زیادہ نظر آئی۔

یہاں ایک وقت ایسا بھی آیا کہ عورتوں کی تعداد اتنی بڑھ گئی کہ کئی خواتین ووٹ ڈالے بغیر گھروں کو واپس چلی گئیں۔ اس پولنگ سٹیشن میں رش کی وجہ سے انتخابی عمل سست روی کا شکار رہا اور خواتین کو کئی گھنٹوں تک انتظار کرنا پڑا۔

رباط کے ایک باشندے رحمت اللہ سواتی نے بتایا کہ ان کی اہلیہ ووٹ ڈالنے گئی تھیں لیکن پولنگ سٹیشن میں رش اور گرمی کی وجہ سے وہ حق رائے دہی کا استعمال کیے بغیر واپس گھر چلی آئیں۔

انھوں نے کہا کہ انھیں خود بھی یقین نہیں آرہا کہ ان انتخابات میں خواتین اتنی بڑی تعداد میں گھروں سے باہر نکلیں گی۔

دیر کے دونوں اضلاع میں اس سے پہلے خواتین کے پولنگ سٹیشنز مردوں کے پولنگ سٹیشنوں سے متصل بنائے جاتے تھے لیکن اس الیکشن میں پہلی مرتبہ عورتوں کے زیادہ تر پولنگ سٹیشنز الگ الگ مقامات پر قائم کیے گئے تھے جس میں پردے کا بھی خصوصی انتظام کیا گیا تھا۔

Image caption سخت گرمی اور انتخابی عمل میں سست روی کے باوجود خواتین کی بڑی تعداد پولنگ سٹیشنوں پر موجود تھی

مختلف پولنگ سٹیشنوں کے دورے کے دوران کئی خواتین نے یہ شکایت بھی کی کہ کچھ مقامات پر پولنگ بوتھ پہاڑی اور دور دراز کے مقامات پر قائم کئے گئے جس کی وجہ سے بوڑھی عورتوں کو وہاں تک جانے میں مشکلات کا سامنا رہا۔

بعض مقامات پر پولنگ عملے کی کمی بھی نظر آئی جس کے باعث خواتین کو گھنٹوں تک گرمی کی حالت میں برقعوں میں انتظار کرنا پڑا۔

دیر میں حالیہ انتخابات کی خاص بات یہ تھی کہ جن علاقوں سے کبھی خواتین کو آزادانہ طور پر ووٹ ڈالنے کے حق سے محروم رکھا گیا وہاں پہلی مرتبہ جنرل نشستوں پر دو خواتین امیدواروں نے حصہ لیا۔

دیر بالا کے صوبائی حلقے سے تحریک انصاف کی امیدوار حمیدہ شاہد اور دیر پائین کی قومی اسمبلی کی نشست سے پاکستان مسلم لیگ (ن) کی صوبیہ خان نے بحیثیت امیدوار حصہ لیا۔ اگرچہ دونوں خواتین انتخابات تو ہار گئیں لیکن ان کی انتخابی عمل میں شرکت کو مقامی خواتین نے خوش آئندہ قرار دیا ہے۔

منصور آباد کے پولنگ سٹیشن میں پہلی مرتبہ حق رائے دہی کا استعمال کرنے والی یونیورسٹی کی ایک طالبہ گلالئی نے کہا کہ دیر کی عورتیں پہلی مرتبہ بڑی تعداد میں ووٹ ڈالنے نکلی ہیں جو ایک بڑی تبدیلی سے کم نہیں۔

انھوں نے کہا کہ ماضی میں یہاں بدقسمتی سے خواتین کو نام نہاد روایات کے نام پر ان کو ووٹ دینے کے حق سے محروم رکھا لیکن یہ پابندیاں مزید نہیں چل سکتی کیونکہ اب عورتیں باشعور ہوگئی ہیں۔

دیر میں کئی سالوں سے خواتین کے حقوق کے لیے سرگرم سماجی کارکن شاد بیگم کا کہنا ہے کہ دونوں اضلاع میں جس دلیری سے عورتوں نے اپنا حق استعمال کیا ہے اس کی مثال تاریخ میں نہیں ملتی۔ انھوں نے کہا کہ شاید ان انتخابات میں قوانین نے اپنا کام کر دکھایا ہے جس نے امیدواروں کو مجبور کیا کہ وہ خواتین کو انتخابی عمل میں شامل کریں۔

Image caption دیر کا شمار خیر پختوانخوا کے پسماندہ ترین اضلاع میں ہوتا ہے

ان کے مطابق حالیہ الیکشن میں پہلی مرتبہ کسی علاقے سے ایسی کوئی اطلاع نہیں آئی جہاں خواتین کو حق رائے دہی سے روکا کیا گیا ہو یا کسی پر اس ضمن میں دباؤ ڈالا گیا ہو۔

الیکشن قوانین کے مطابق ہر حلقے میں دس فیصد تک خواتین کے ووٹ لازمی قرار دیے گئے تھے بصورت دیگر وہاں انتخابات کالعدم قرار دیے جاسکتے تھے۔

خیال رہے کہ ماضی میں مالاکنڈ ڈویژن کے کئی اضلاع بالخصوص دیر پائین اور دیر بالا میں امیدواروں کی طرف سے نام نہاد معاہدے اور جرگے ہوتے رہے ہیں جس کے تحت خواتین کو ووٹ ڈالنے کے حق سے روکا جاتا رہا ہے۔ ان معاہدوں میں مذہبی جماعتیں پیش پیش رہی ہیں اور حیران کن طور پر ان میں خود کو سیکولر اور آزاد خیال کہنے والی جماعتیں بھی شامل رہی ہیں۔

اسی بارے میں