ڈینٹسٹ سے صدر پاکستان کا سفر

عارف علوی تصویر کے کاپی رائٹ AFP / Getty
Image caption ڈاکٹر عارف علوی کی پیدائش کراچی میں ڈاکٹر حبیب الرحمان علوی کے گھرانے میں ہوئی۔ تحریک انصاف میں شمولیت سے قبل ڈاکٹر علوی کا گھرانہ جماعت اسلامی سے تعلق رکھتا تھا

عارف علوی کے جسم میں ایک گولی آج بھی پیوست ہے جو ایوب خان کی آمریت کے دنوں میں احتجاج کے دوران انھیں لگی تھی۔ وہ ان دنوں مولانا مودوی کے فکر کے پیروکار تھے جو پاکستان میں ایک اسلامی ریاست کا نظریہ رکھتے تھے۔

یہ سنہ 1969 کی بات ہے جب عارف علوی ایوب خان کے مارشل لا کے خلاف مال روڈ پر احتجاج کر رہے تھے۔ ان دنوں وہ پنجاب یونیورسٹی سے منسلک ڈینٹل کالج میں زیر تعلیم ہونے کے ساتھ طلبہ یونین کے صدر بھی تھے۔ ان کا کہنا ہے کہ انھیں جمہوریت کی بحالی کی اس تحریک میں دو گولیاں لگیں جس میں ایک آج بھی ان کے جسم میں موجود ہے۔

ڈاکٹر عارف علوی کی پیدائش کراچی میں ڈاکٹر حبیب الرحمان علوی کے گھرانے میں ہوئی۔ تحریک انصاف میں شمولیت سے قبل ڈاکٹر علوی کا گھرانہ جماعت اسلامی سے تعلق رکھتا تھا۔ ان کے والد انڈیا میں ڈینٹسٹ تھے جو قیام پاکستان کے بعد کراچی منتقل ہو گئے تھے۔

ڈاکٹر عارف علوی کا کہنا ہے کہ ان کے والد جواہر لال نہرو کے بھی ڈاکٹر تھے اور ان کی نہرو سے خط و کتابت ان کے پاس موجود ہے جبکہ فاطمہ جناح نے انھیں مھتاپیلس کا ٹرسٹی مقرر کیا تھا۔

اس بارے میں مزید پڑھیے

عارف علوی پاکستان کے 13ویں صدر منتخب

’ن لیگ دیکھ لے کہ عمران کا امیدوار سوٹ کرتا ہے یا اعتزاز احسن‘

’اپوزیشن کا مشترکہ صدارتی امیدوار لانے پر اتفاق‘

پاکستان کی نئی وفاقی کابینہ کے 16 وزیروں نے حلف اٹھا لیا

عارف علوی نے طالب علمی کے زمانے میں سیاست کے بعد سنہ 1979 میں پہلی بار انتخابات میں حصہ لیا وہ جماعت اسلامی کے امیدوار تھے لیکن یہ انتخابات نہ ہو سکے اور ملک میں جنرل ضیا الحق کی آمریت آ گئی جس کے بعد وہ اپنے پیشے کی جانب آ گئے۔ اسی دوران انھوں نے امریکہ کی مشی گن یونیورسٹی سے ماسٹرز کی ڈگری حاصل کی۔

وہ پاکستان ڈینٹل ایسوسی ایشن کے صدر بنے اس کے بعد ایشیا پیسفک ڈینٹل فیڈریشن کے صدر کے منصب تک پہنچے۔

وقت گذرنے کے ساتھ ساتھ وہ جماعت اسلامی سے دور ہو گئے۔

انھوں نے اپنے ایک انٹرویو میں جماعت پر تنقید کرتے ہوئے کہا تھا ’وہ گٹر اور پانی کا مسئلہ بھی اسلامی نظام لینے کے بعد ٹھیک کرنے کی بات کرتے تھے۔‘

عارف علوی نوجوانی میں سکوائش اور کرکیٹ کھیلتے تھے۔ دیگر کئی لوگوں کی طرح وہ عمران خان سے متاثر تھے۔ سنہ 1996 میں جب تحریک انصاف کی بنیاد رکھی گئی تو عارف علوی بھی اس تنظیم سازی کا حصہ رہے۔ وہ پارٹی کے نئے پاکستان کے منشور کے مصنفوں میں بھی شامل ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption عاری علوی کا تحریک انصاف میں سیاسی سفر صوبائی صدر سے شروع ہوا۔ انھیں سنہ 1997 میں سندھ کا صدر بنایا گیا۔ سنہ 2001 میں وہ مرکزی نائب صدر کے عہدے پر فائز ہوئے۔ سنہ 2006 میں پارٹی کے جنرل سیکریٹری بنائے گئے اور سنہ 2013 تک اس عہدے پر رہے

تحریک انصاف میں ان کا سیاسی سفر صوبائی صدر سے شروع ہوا۔ انھیں سنہ 1997 میں سندھ کا صدر بنایا گیا۔ سنہ 2001 میں وہ مرکزی نائب صدر کے عہدے پر فائز ہوئے۔ سنہ 2006 میں پارٹی کے جنرل سیکریٹری بنائے گئے اور سنہ 2013 تک اس عہدے پر رہے۔ یہی وہ دور ہے جب تحریک انصاف مینار پاکستان میں جلسہ عام کے بعد تبدیلی کا نعرہ لگا کر پورے ملک میں پھیل گئی۔

انھوں نے تحریک انصاف کے ٹکٹ پر پہلا الیکشن سنہ 1997 میں کراچی کی امیر آبادی کے علاقے ڈیفینس اور کلفٹن پر مشتمل صوبائی حلقے سے لڑا لیکن کامیاب نہیں ہو سکے۔ سنہ 2002 کے انتخابات میں انھوں نے بلدیہ سے قومی اسمبلی کی نشست پر قسمت آزمائی کی لیکن انھیں شکست ہوئی۔

سنہ 2013 کے عام انتخابات میں وہ ڈیفینس، کلفٹن اور صدر کے علاقے پر مشتمل قومی اسمبلی کے حلقے این اے 250 سے مقابلے میں آئے۔ ابتدائی نتائج میں ایم کیو ایم کی خوش بخت شجاعت کو کامیاب قرار دیا گیا تھا تاہم تحریک انصاف نے انتخابات میں دھاندلی کے الزامات عائد کیے اورعارف علوی نے حلقے کے لوگوں کو متحرک کیا اور ڈٹ گئے۔

تین تلوار پر ایک ایسے ہی احتجاج کے دوران ایم کیو ایم کے سربراہ الطاف حسین کی متنازع تقریر سامنے آئی تھی جس میں انھوں نے کہا تھا کہ اگر وہ کارکنوں کو حکم دیں تو وہ اس برگر کلاس کے تلواروں سے ٹکڑے کر دیں گے۔

عارف علوی کا احتجاج رنگ لایا اور الیکشن کمیشن نے 45 پولنگ سٹیشنوں پر دوبارہ ووٹنگ کا حکم جاری کیا اور نتیجے میں عارف علوی مجموعی طور پر 76 ہزار ووٹ لے کر کامیاب ہو گئے۔

عارف علوی کا حلقہ ایک ایسا حلقہ ہے جس میں شہر کے امیر ترین لوگ بھی رہتے ہیں تو غریب ترین لوگوں کی بستیاں بھی موجود ہیں۔

انھوں نے جماعت اسلامی کی تربیت اور طریقے اختیار کرتے ہوئے اپنے طور پر حلقے میں فلاح و بہبود شروع کردیا جس میں وہ ریلوے سکول کی عمارت کی تعمیر کو کارنامہ قرار دیتے ہیں جس میں پہلے 300 بچے زیر تعلیم تھے اور اب 1300 بچے موجود ہیں۔ اسی طرح غریب آبادیوں میں 12 فلٹریشن پلانٹس اور سکولوں میں یونیفارم کی تقسیم بھی شامل ہے۔

عارف علوی نے عوامی انداز اپنانے کی بھی کوشش کی۔ وہ بارشوں کے دنوں میں غریب بستیوں میں لوگوں کی مدد کے لیے کشتی لے کر پہنچ جاتے۔ چند سال قبل ایک فٹ پانی میں ان کی کشتی کے ساتھ تصویر پر انھیں تنقید کا سامنا بھی کرنا پڑا تھا۔ اسی طرح انتخابی مہم کے دوران وہ موٹر سائیکل اور آٹو رکشہ پر بھی سواری کرتے نظر آئے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP / Getty
Image caption عارف علوی تحریک انصاف کے ان رہنماؤں میں شامل ہیں جو سوشل میڈیا یعنی ٹوئٹر اور فیس بک پر سرگرم ہیں

وہ تحریک انصاف کے ان رہنماؤں میں شامل ہیں جو سوشل میڈیا یعنی ٹوئٹر اور فیس بک پر سرگرم ہیں، اس کے علاوہ عارف علوی ٹیتھ میسٹرو کے نام سے بلاگ بھی لکھتے رہے ہیں۔

تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان نے سنہ 2018 کے انتخابات میں کراچی کو غیر معمولی اہمیت دی اور خود بھی یہاں سے الیکشن لڑا۔

انھوں نے کراچی کے لیے الگ سے روڈ میپ دیا تھا جس کے تحت پانی، معیاری تعلیم، صحت کی سہولیات، پولیس، بجلی، نوجوان کے لیے کھیل کے میدان، ماحولیات، سرکلر ریلوے اور ملازمت کے مواقع فراہم کرنے کا وعدہ کیا تھا۔

تحریک انصاف کراچی سے سیاسی طور پر دست بردار نہیں ہوئی۔ عمران خان نے پہلے مرحلے میں اپنے دوست اور ساتھی عمران اسماعیل کو سندھ کا گورنر بنایا اور دوسرے ساتھی عارف علوی کو صدر کے لیے نامزد کیا۔

دونوں کا تعلق کراچی سے ہے۔ یہ بات بھی دلچسپ ہے آئینی طور پر دونوں کے کردار محدود ہیں لیکن یہ دونوں ہی متحرک کردار کی متلاشی شخصیات ہیں۔

اسی بارے میں