عالمی عدالتِ انصاف میں کلبھوشن کا مقدمہ 18 فروری سے

کلبھوشن تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

عالمی عدالت انصاف نے کہا ہے کہ وہ آئندہ برس فروری میں پاکستان میں جاسوسی کے الزام میں سزائے موت کے منتظر انڈین شہری کلبھوشن جادھو کے مقدمے کی سماعت کرے گی۔

یہ بات آئی سی جے کی جانب سے جاری کیے جانے والے ایک بیان میں کہی گئی ہے۔ بیان کے مطابق عدالت 18 فروری سے 21 فروری تک مقدمے کی سماعت کرے گی۔

مزید پڑھیے

’منگل سُوتر اتروایا گیا اور جوتے بھی واپس نہیں کیے‘

’عدالت کا فیصلہ آنے تک کلبھوشن کو پھانسی نہیں دی جا سکتی‘

کلبھوشن سے پہلے کتنے جاسوس

کلبھوشن کی سزا پر انڈین دھمکیاں

پاکستانی وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے رواں برس اگست میں کلبھوشن کے مقدمے پر بات کرتے ہوئے اپنے بیان میں کہا تھا کہ پاکستان کے پاس ان کے خلاف ٹھوس ثبوت موجود ہیں اور ’امید ہے کہ ہم یہ مقدمہ جیت لیں گے۔‘

پاکستان کے خفیہ اداروں نے کلبھوشن جادھو کو تین مارچ سنہ 2016 کو بلوچستان کے علاقے ماشکیل سے گرفتار کیا تھا۔ انھیں اپریل 2017 میں فوجی عدالت نے ملک میں دہشت گردی کی سرگرمیوں میں ملوث ہونے کا مجرم قرار دیتے ہوئے سزائے موت سنا دی تھی۔

انڈیا نے گذشتہ برس آٹھ مئی کو دی ہیگ میں واقع عالمی عدالتِ انصاف سے رجوع کرتے ہوئے اس معاملے میں مداخلت کی درخواست کی تھی۔

عدالت نے 18 مئی کو اپنے ابتدائی حکم میں کہا تھا کہ اس معاملے کا فیصلہ آنے تک کلبھوشن جادھو کو پھانسی نہیں دی جا سکتی۔

پاکستانی حکام نے دسمبر 2017 میں کلبھوشن جادھو کی ان کے اہلخانہ سے ملاقات بھی کروائی تھی جس کے لیے ان کی والدہ اور اہلیہ پاکستان آئے تھے۔ دفترِ خارجہ کی جانب سے یہ بھی کہا گیا تھا کہ یہ ان کی اہلخانہ سے ’آخری ملاقات‘ نہیں ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ ICJ

خیال رہے کہ کلبھوشن کی گرفتاری کے بعد پاکستان کی جانب سے ان کا ایک ویڈیو بیان بھی میڈیا کے سامنے پیش کیا گیا تھا جس میں وہ یہ اعتراف کرتے دکھائی دیے کہ وہ انڈین بحریہ کے حاضر سروس افسر ہیں اور جاسوس ہیں۔

انڈیا کی وزراتِ خارجہ نے اس ویڈیو کو مسترد کرتے ہوئے کہا تھا کہ بلوچستان میں گرفتار کیے گئے شخص کا انڈیا کی حکومت سے کوئی تعلق نہیں ہے اور یہ ویڈیو جھوٹ پر مبنی ہے۔

تاہم بعد میں انڈیا نے کلبھوشن کو اپنا شہری تسلیم کرتے ہوئے عالمی عدالتِ انصاف سے رجوع کیا۔

چھ منٹ کے دورانیے پر مشتمل ویڈیو میں کلبھوشن یادیو نے بتایا تھا کہ انھوں نے سنہ 2013 میں انڈین خفیہ ادارے را کے لیے کام شروع کیا تھا۔

ان کا کہنا تھا کہ وہ کراچی اور بلوچستان میں را کی جانب سے بہت سی کارروائیاں کرتے آئے ہیں اور وہاں کے حالات کو خراب کرتے رہے۔

انھوں نے بتایا کہ تین مارچ سنہ 2016 کو پاکستانی حکام نے انھیں اس وقت گرفتار کیا جب وہ ایران سے پاکستان میں داخل ہونے کی کوشش کر رہے تھے اور ان کا مقصد پاکستان میں داخل ہو کر بی ایس این (بلوچ سب نیشنلسٹس) کے اہلکاروں سے ملاقات کرنی تھی جو آنے والے دنوں میں بلوچستان میں کوئی کارروائی کرنا چاہتے تھے۔

اسی بارے میں