نواز شریف: ’وزیراعظم بتائیں این آر او کون مانگ رہا ہے‘

نواز شریف تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption نواز شریف کا کہنا تھا کہ وہ اپنی اہلیہ کی وفات کی وجہ سے ابھی تک غم کی کیفیت میں ہیں اور ابھی تک وہ سیاست کی طرف واپس نہیں آرہے

سابق وزیر اعظم اور حزب اختلاف کی سب سے بڑی جماعت پاکستان مسلم لیگ نواز کے قائد میاں نواز شریف نے کہا ہے کہ وفاقی حکومت اخلاقی جرات کا مظاہرہ کرتے ہوئے اُن کی جماعت کے ان افراد کے نام بتائیں جو کہ وزیر اعظم کے بقول حکومت سے ’این آر او‘ مانگ رہے ہیں۔

پیر کے روز احتساب عدالت کے باہر صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے سابق وزیر اعظم کا کہنا تھا کہ وزیر اعظم عمران خان اور متعدد وفاقی وزرا بارہا میڈیا پر آکر بیان دیتے ہیں کہ کسی کو این آر او یعنی مقدمات کے خاتمے کے لیے قومی مصالحتی آرڈینینس جاری نہیں کیا جائے گا۔

یہ بھی پڑھیے

’حزب اختلاف کان کھول کر سن لے، این آر او نہیں ملے گا‘

این آر او: کیا ’نہ‘ کا مطلب واقعی میں ’نہ‘ ہے؟

کوئی ڈیل ہوئی تو سڑکوں پر نکلیں گے: عمران خان

میاں نواز شریف کا کہنا تھا کہ نہ تو اُنھوں نے اور نہ ہی ان کی جماعت کے کسی رکن نے مقدمات میں ریلیف حاصل کرنے کے لیے وزیر اعظم اور وفاقی وزرا سے رابطہ کیا ہے۔

اُنھوں نے کہا کہ وفاقی حکومت اخلاقی جرات کا مظاہرہ کرتے ہوئے اُن افراد کے نام بتائے جنہوں نے این آر او حاصل کرنے کے لیے ان سے رابطہ کیا ہے۔

وفاقی وزیر اطلاعات فواد چوہدری نے ایک ٹی وی پروگرام میں انٹرویو دیتے ہوئے دعویٰ کیا تھا کہ حزب مخالف کی دو بڑی جماعتوں کے رہنما این آر او کے لیے حکومت کے ساتھ رابطے میں ہیں تاہم اُنھوں نے ان رہنماوں کے نام نہیں بتائے۔

واضح رہے کہ پاکستان پیپلز پارٹی کے شریک چیئرمین آصف علی زرداری نے بھی ان حکومتی دعووں کی تردید کی ہے کہ ان کی جماعت کی طرف سے ان پر درج ہونے والے مقدمات میں ریلیف حاصل کرنے کے لیے این آر او جاری کرنے کے لیے حکومت سے رابطہ کیا گیا ہے۔

جمعیت عملائے اسلام کی طرف سے حزب مخالف کی جماعتوں کی بلائی گئی آل پارٹیز کانفرنس میں شرکت کرنے سے متعلق سوال کے جواب میں سابق وزیر اعظم میاں نواز شریف کا کہنا تھا کہ وہ اپنی اہلیہ کی وفات کی وجہ سے ابھی تک غم کی کیفیت میں ہیں اور ابھی تک وہ سیاست کی طرف واپس نہیں آرہے۔ اُنھوں نے کہا کہ اے پی سی میں شرکت کا فیصلہ میاں شہباز شریف سے ملاقات کے بعد کریں گے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

اُنھوں نے اپنے چھوٹے بھائی اور سابق وزیر اعلیٰ پنجاب میاں شہباز شریف کی گرفتاری کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ صاف پانی کے منصوبوں میں نیب کو کچھ نہیں ملا تو اُنھیں آشیانہ ہاوسنگ سکیم میں گرفتار کرلیا گیا اور اب آشیانہ ہاوسنگ سکیم میں کچھ نہیں نکلا تو اُنھیں آمدن سے زیادہ اثاثوں کے مقدمے میں گرفتار کرلیا گیا ہے۔

میاں نواز شریف کا کہنا تھا کہ حکومت احتساب کی آڑ میں حزب مخالف کی جماعتوں کو انتقام کا نشانہ بنا رہی ہے۔

اسی بارے میں