کیا منظور پشتین کے ساتھ تصویر یا فوجی عدالتوں پر بحث پاکستانی قانون کی خلاف ورزی ہے؟

ندا کرمانی اور منظور پشتین تصویر کے کاپی رائٹ Nida Kirmani
Image caption کیا منظور پشتین کے ساتھ تصویر یا فوجی عدالتوں پر بحث پاکستانی قانون کی خلاف ورزی ہے؟

’پیغام بہت واضح ہے، آپ کے سوشل میڈیا اکاؤنٹس پر مسلسل نظر رکھی جا رہی ہے۔ قانون اور قانونی فیصلوں کے بارے میں جو رائے ریاستی نظریہ سے متصادم ہے، اس پر نہ صرف اعتراض کیا جاتا ہے بلکہ انھیں سنسر کرنے کی بھی کوششیں کی جاتی ہیں، اور یہی اصل مسئلہ ہے۔‘

یہ کہنا تھا تجزیہ کار، وکیل اور انسانی حقوق کی کارکن ریما عمر کا جن کو حال ہی میں پاکستانی قوانین کی ’خلاف ورزی‘ پر ٹوئٹر کی جانب سے ایک ای میل موصول ہوئی ہے، جس میں کہا گیا ہے کہ ٹوئٹر کو سرکاری طور آپ کے اکاؤنٹ کے بارے میں مطلع کیا گیا ہے کہ آپ کی کچھ ٹویٹس پاکستانی قوانین کی خلاف ورزی ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reema Omer

آخر ریما نے ایسی کون سی ٹویٹس کر دیں جنھیں پاکستانی قوانین کی خلاف ورزی سمجھا گیا؟ یہ تینوں ٹویٹس فوجی عدالتوں کے بارے میں ہیں۔ مثال کے طور ایک ٹویٹ میں وہ کہتی ہیں:

’فوجی عدالتوں کی کارروائی غیر شفاف ہوتی ہیں اور عام لوگ ان کی جانچ پڑتال نہیں کر سکتے۔ ان کے فیصلے سراسر اعترافِ جرم پر مبنی ہوتے ہیں اور پشاور ہائی کورٹ نے انھیں ’بناوٹی‘ قرار دے رکھا ہے۔ ملزم کسی قسم کا دفاع نہیں کر سکتے اور نہ ہی انھیں آزادنہ قانونی نمائندگی حاصل ہوتی ہے۔ تو کیا آپ پھر بھی فوجی عدالتوں پر اعتماد کر سکتے ہیں؟

ریما عمر نے بی بی سی کو بتایا کہ ’ان ٹویٹس میں کوئی خلافِ قانون بات نہیں ہے، اس لیے کوئی وجہ نہیں ہے کہ میں ڈر کے مارے انھیں ہٹا دوں۔‘

ان کا مزید کہنا تھا: ’جو چیز زیادہ پریشان کن ہے وہ یہ کہ قانون اور قانونی فیصلوں کے بارے میں جو رائے ریاستی نظریہ سے متصادم ہے، اس پر نہ صرف اعتراض کیا جاتا ہے بلکہ انھیں سنسر کرنے کی بھی کوششیں کی جاتی ہیں، اور یہی اصل مسئلہ ہے۔‘

صرف ریما عمر ہی کو ٹوئٹر کی جانب سے ایسی ای میل موصول نہیں ہوئی، بلکہ ماہرِ تعلیم اور حقوقِ نسواں کی کارکن ندا کرمانی کو بھی اسی قسم کی ای میل موصول ہوئی ہے، جس میں تقریباً انھی الفاظ میں کہا گیا ہے کہ ان کی کچھ ٹویٹس پاکستانی قوانین کے منافی ہیں جن میں ندا کی منظور پشتین کے ساتھ تصویر والی ایک ٹویٹ بھی شامل ہے۔

کیا ریاست سوشل میڈیا کو لگام دینے کی کوشش کر رہی ہے؟

بی بی سی سے بات کرتے ہوئے ندا کرمانی نے بتایا کہ یقیناً یہ تھوڑا پریشان کن ہے مگر مجھے اس ای میل پر کوئی تعجب نہیں ہوا، کیوں کہ ٹوئٹر پر کافی عرصے سے ان لوگوں کو ایسی ای میلز موصول ہو رہی تھیں جو اہم مسائل پر بات کرتے ہیں یا ریاست سے مختلف خیالات کا اظہار کرتے ہیں۔

اس سوال پر کہ کیا انھوں نے کسی سے اس بارے میں وضاحت مانگی ہے، ان کا کہنا تھا: ’نہیں، مجھے یہ زیادہ محفوظ لگا کہ میں اس بارے میں ٹویٹ کروں اور فیس بک پر شیئر کر کے لوگوں کو بتاؤں کیونکہ اگر یہ بات ہو رہی ہے تو باقی لوگوں کو بھی پتہ ہونا چاہیے کہ اس طرح سے سنسرشپ کی کوشش ہو رہی ہے۔ مجھے نہیں معلوم میں کس سے رابطہ کروں گی اور کون حکومت میں اس حوالے سے بات کرنے کے لیے مناسب ہے۔ میں سمجھتی ہوں کہ یہ آفیشل شکایت حکومت کی طرف سے ٹوئٹر کو بھیجی گئی ہے، تو پھر مجھے حکومت کے پاس جانے کی کوئی وجہ نظر نہیں آتی۔‘

ان کا مزید کہنا تھا :’یقیناً ریاست آن لائن سپیسز کے بڑھنے سے خوف زدہ ہے، اس لیے وہ لوگوں کو لگام ڈالنا چاہ رہے ہیں جو میرے جیسے ماہرِتعلیم کے لیے ناقابلِ قبول ہے۔ ریاست کو اس چیز کا احساس ہونا چاہیے کہ مخالف رائے اور بحث و مباحثہ ترقی کے لیے کتنا ضروری ہیں۔‘

اسی بارے میں یہ بھی پڑھیے

غیرملکیوں کو پاکستانی قانون کے تحت نوٹس کیوں؟

سوشل میڈیا پر موجود توہین آمیز مواد فوراً بلاک کرنے کا حکم

میڈیا سینسر شپ: پاکستان بھی سعودی،چینی ماڈل پر عمل پیرا؟

جن لوگوں کو یہ ای میلز ملی ہیں ان کے پاس کیا قانونی راستے ہیں؟

سائبر حقوق کے لیے کام کرنے والے غیر سرکاری ادارے ڈیجیٹل رائٹس کی بانی اور وکیل نگہت داد کہتی ہیں کہ پاکستانی قوانین ریاستی اداروں کو تو یہ اختیار دیتے ہیں کہ وہ کسی بھی مواد کو ہٹا سکیں، لیکن جن لوگوں کا مواد ہٹا دیا جاتا ہے، وہ پی ٹی اے سے رابطہ کر کے یہ تو معلوم کر سکتے ہیں کہ ان نوٹسز کا مقصد کیا ہے، لیکن اُن کے پاس اپیل کا کوئی طریقۂ کار ابھی تک موجود نہیں ہے۔

یاد رہے کہ پریوینشن آف الیکٹرانک کرائم ایکٹ کا سیکشن 37، پاکستان ٹیلی کمیونیکیشن اتھارٹی کو اجازت دیتا ہے کہ وہ اسلامی اقدار، قومی تشخص، ملکی سلامتی اور دفاع کے خلاف مواد کو فوری طور پر ہٹا دے۔

سرکاری موقف کیا ہے؟

بی بی سی سی بات کرتے ہوئے وزیرِ اطلاعات فواد چوہدری کا کہنا تھا کہ انھوں نے یا ان کی وزارت نے اس طرح کی کوئی وارننگ ٹوئٹر کو نہیں بھیجی۔ ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ ’فوجی عدالتیں ہونی چاہییں یا نہیں، یہ ایک علمی بحث ہے اور اس پر کوئی پابندی نہیں لگائی جا سکتی۔‘

فواد چوہدری نے انھی الفاظ پر مبنی ایک ٹویٹ بھی کی۔

جس پر ریما عمر نے ان سے تین سوال کیے ہیں کہ

  1. کیا ٹوئٹر اپنی طرف سے یہ ای میلز بھیج رہا ہے؟
  2. کیا کوئی بہروپیا خود کو حکومت کا نمائندہ ظاہر کر کے یہ شکایات بھیج رہا ہے؟
  3. یا یہ شکایات ’سرکاری‘ طور پر کی جا رہی ہیں مگر حکومت کو بتائے بغیر؟

اس کا فی الحال کوئی جواب نہیں آیا، البتہ اسی معاملے پر پی ٹی اے کے ترجمان نے بی بی سی کو کچھ یوں وضاحت دی: ’فی الحال ایسی کوئی شکایت میرے نوٹس میں نہیں آئی، ہو سکتا ہے پی ٹی اے کو کسی صارف کی طرف سے شکایت موصول ہوئی ہو اور اس پر تحقیقات کی جا رہی ہوں، یا عمل درآمد ہوا ہو۔‘

ان کا مزید کہنا تھا کہ جن ٹوئٹر صارفین کو ای میلز آئی ہیں ان کو چاہیے وہ خود اپنے مواد کا جائزہ لے لیں، اگر کچھ قوانین کی خلاف ورزی ہوئی ہے یا اداروں کے خلاف کوئی بات کی گئ ہے، تو وہ مواد ہٹا دیں۔

اسی حوالے سے میڈیا میٹرز فار ڈیموکریسی کی پروگرام مینیجر صدف خان کا کہنا ہے کہ جن ٹوئٹر صارفین کو نوٹسز بھجیے گئے ہیں وہ اپنے قانونی ماہرین کی مدد سے ٹوئٹر سے رابطہ کر کے پوچھ سکتے ہیں کہ حکومت کی طرف سے یہ نوٹیفکیشن رد کیا جا رہا ہے تو ٹوئٹر کیسے یہ دعویٰ کر رہا ہے کہ ان سے سرکاری طور پر رابطہ کیا گیا ہے؟

تصویر کے کاپی رائٹ @reema_omer/Twitter
Image caption ریما کہتی ہیں میں اسے ایک نوٹیفکیشن سمجھتی ہوں نہ کہ ووارننگ

ایسے نوٹسز ایک عام پاکستانی ٹوئٹر صارف کو کیا پیغام دیتے ہیں؟

نگہت داد کا خیال ہے کہ ’ایسے نوٹسز ظاہر کرتے ہیں کہ اپنی رائے کا اظہار کرنے والوں کی کیسے آن لائن سپیسز پر نگرانی کی جا رہی ہے۔ پاکستان میں آزادیِ اظہار کا ماحول پہلے ہی سازگار نہیں اور اس طرح کے نوٹسز، سیلف سنسر شپ لاگو کر کے آزادیِ رائے کی فضا کو محدود کرنے کا ایک اور طریقہ ہے۔‘

یاد رہے اس سے قبل بھی چند پاکستانی صارفین نے ٹوئٹر کی طرف سے نوٹس موصول ہونے اور اکاؤنٹ بند ہونے کی شکایت کی تھیں۔ ان لوگوں میں صحافی مبشر زیدی، سماجی کارکن گل بخاری، بلاگر احمد وقاص گورایہ اور پیرس میں مقیم پاکستانی صحافی طٰحہٰ صدیقی بھی شامل ہیں۔

صدف خان کا کہنا ہے: ’جن موضوعات پر بحث کی جا رہی ہے وہ ہماری سیاست اور قانونی نظام سے جڑے ہوئے ہیں، جب آپ ایک جہموریت کا حصہ ہیں اور اس کے ایک متحرک شہری ہیں اور کل کو اگر آپ بھی کسی ایسے معاملے پر بات کرنا چاہیں جو ملک کی سیاست میں بہت اہمیت رکھتا ہو، لیکن آپ کی رائے ریاست کے نظریہ یا مقبول رائے سے مختلف ہے تو آپ کو بھی ٹویٹ کرتے وقت یا پبلک فورم پر بات کرنے سے پہلے بہت سوچنا پڑے گا۔‘

اسی بارے میں