آسیہ بی بی کی توہینِ مذہب کے مقدمے میں بریت کا فیصلہ برقرار

آسیہ بی بی تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption آسیہ بی بی کے وکیل کے مطابق وہ اس وقت اپنے شوہر کے ہمراہ ایک نامعلوم مقام پر موجود ہیں

چیف جسٹس آصف سعید کھوسہ کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے تین رکنی بینچ نے مسیحی خاتون آسیہ بی بی کی توہین مذہب کے مقدمے میں بریت اور رہائی کے فیصلے پر نظرثانی کی اپیل مسترد کر دی ہے۔

نامہ نگار شہزاد ملک کے مطابق عدالت نے فیصلہ سناتے ہوئے کہا ہے کہ محض جھوٹے بیانات کی بنیاد پر کسی کو پھانسی نہیں چڑھایا جا سکتا۔

مدعی مقدمہ قاری سالم کی طرف سے دائر کی گئی اس اپیل میں یہ موقف اختیار کیا گیا تھا کہ عدالت عظمی کی طرف سے 31 اکتوبر سنہ 2018 کو دیے گئے فیصلے میں ان حقائق کو مدنظر نہیں رکھا گیا جس کی بنیاد پر ماتحت عدالتوں نے آسیہ بی بی کو توہین رسالت کے مقدمے میں موت کی سزا سنائی تھی۔

آسیہ بی بی کے حوالے سے مزید پڑھیے

آسیہ بی بی کیس اور پاکستان میں توہینِ مذہب

آسیہ بی بی کی بریت اور پاکستان میں احتجاج پر بی بی سی اردو کا خصوصی ضمیمہ

'پاکستان آسیہ کے تمام قانونی حقوق کا مکمل احترام کرتا ہے'

آسیہ، باجوہ اور خونی لبرل

آسیہ بی بی کے شوہر کی مغربی ممالک سے پناہ کی اپیل

چیف جسٹس آصف سعید کھوسہ نے کہا کہ درخواست گزار سپریم کورٹ کی طرف سے آسیہ بی بی کی بریت کے فیصلے کے بارے میں کسی خامی کی نشاندی کرنے سے قاصر رہے جس کے تحت عدالت اپنے کیے گئے فیصلے پر نظر ثانی کرے۔

نامہ نگار کے مطابق منگل کو درخواست کی سماعت کے دوران عدالت نے ریمارکس دیے کہ توہین مذہب کا معاملہ نہ ہوتا تو عدالت جھوٹی گواہی دینے والوں کے خلاف ضابطہ فوجداری کے تحت مقدمہ درج کرتی۔

سپریم کورٹ نے کہا کہ قانون میں واضح طور پر درج ہے کہ اگر کسی ایسی مقدمے میں جہاں کسی شخص کو سزائے موت دی گئی ہو لیکن گواہان کے بیانات جھوٹے ہوں تو عدالت ان گواہان کا سمری ٹرائل کر کے انھیں عمر قید کی سزا دے سکتی ہے۔

عدالت کی جانب سے مزید کہا گیا کہ گواہان کے اپنے بیانات میں کوئی مماثلت نہیں تھی۔

سپریم کورٹ سے نامہ نگار شہزاد ملک کا فیس بک لائیو

سماعت کے آغاز میں جب عدالت نے درخواست گزار کے وکیل غلام مصطفی چوہدری سے استفسار کیا کہ پہلے وہ عدالت کو اس بات پر مطمئن کریں کہ سپریم کورٹ کے فیصلے میں ایسی کون سی خامیاں ہیں جنھیں بنیاد بنا کر اُنھوں نے نظرثانی کی اپیل دائر کی ہے۔

درخواست گزار کے وکیل کا کہنا تھا کہ چونکہ یہ معاملہ انتہائی حساس ہے اس لیے بہتر ہوگا کہ سپریم کورٹ کا لارجر بینچ تشکیل دیا جائے اور اس بینچ میں وفاقی شریعت کورٹ کا جج بھی شامل کیا جائے جس پر بینچ کے سربراہ جسٹس آصف سعید کھوسہ نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ پہلے عدالت کو اس بات پر مطمئن کریں عدالت عظمی کے فیصلے میں کوئی خامیاں موجود ہیں۔

عدالت نے درخواست گزار کے وکیل کو سپریم کورٹ کا 31 اکتوبر کا فیصلہ پڑھنے کو کہا جس میں آسیہ بی بی کو توہین مذہب کے مقدمے میں بری کردیا گیا تھا۔

درخواست گزار کے وکیل غلام مصطفی چوہدری سابق چیف جسٹس ثاقب نثار کی طرف سے لکھے گئے فیصلے کا حوالہ دینے کی کوشش کی جس پر چیف جسٹس کا کہنا تھا کہ اُن کے الزامات کا جواب دینے کے لیے سابق چیف جسٹس بینچ کا حصہ نہیں ہیں اس لیے بہتر ہے کہ اس بارے میں بات نہ کی جائے اور صرف فیصلے پر ہی توجہ مرکوز کی جائے۔

عدالتی حکم پر درخواست گزار کے وکیل نے تمام فیصلے کو دوبارہ پڑھا اور سپریم کورٹ کا بینچ ہر ہر پیراگراف پر وکیل سے پوچھتا رہا کہ کیا اس میں خامی ہے جس پر غلام مصطفی نفی میں جواب دیتے۔

عدالت نے اس مقدمے میں گواہوں کی اہلیت پر سوالات اُٹھائے اور کہا کہ قران پر حلف دینے کے باوجود مدعی مقدمہ سمیت جتنے بھی سرکاری گواہوں نے بیانات دیے وہ ایک دوسرے سے نہیں ملتے تھے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption آسیہ بی بی کے خاوند عاشق مسیح کے بارے میں سیف الملوک کا کہنا تھا کہ دونوں میاں بیوی ایک ساتھ رہ رہے ہیں

بینچ کے سربراہ نے مدعی مقدمہ قاری سالم کی اہلیت پر سوال اُٹھاتے ہوئے کہا کہ وہ کیسے امام مسجد ہیں جو خود مقدمے کے اندراج کے لیے درخواست بھی نہیں لکھ سکتے اور جس وکیل سے اُنھوں نے درخواست لکھوائی اس کا نام بھی وہ نہیں جانتے تھے۔

بینچ کے سربراہ نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ پولیس نے بھی اس مقدمے میں اپنا کام ایمانداری سے نہیں کیا اور محض ایک سب انسپکٹر کو توہین مذہب کے مقدمے کی تفتیش سونپ دی گئی جبکہ قانون میں درج ہے کہ ایس پی رینک کا افسر ہی توہین مذہب کے مقدمے کی تفتیش کرسکتا ہے۔

عدالت نے غلام مصطفی چوہدری سے کہا کہ وہ ایسے سرکاری گواہوں کے خلاف کارروائی تجویز کریں جنھوں نے عدالت میں غلط بیانی کی ہے۔ اس کے بعد عدالت نے نظرثانی کی اپیل کو مسترد کر دیا۔

قانونی ماہرین کا کہنا ہے کہ اگر کوئی ایسا نکتہ رہ گیا ہو جو کہ عدالت نے اپنے تفصیلی فیصلے میں نظرانداز کیا ہو تو پھر ہی عدالت اپنے فیصلے پر نظرثانی کرتی ہے۔

واضح رہے کہ ماتحت عدالتوں نے توہین مذہب کے مقدمے میں آسیہ مسیح کو موت کی سزا سنائی تھی تاہم سپریم کورٹ نے اس سزا کو کالعدم قرار دیتے ہوئے آسیہ بی بی کو بری کرتے ہوئے رہا کرنے کا حکم دیا تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption مدعی مقدمہ عبداسلام (بائیں جانب) اور ان کے وکیل غلام مصطفیٰ

سپریم کورٹ نے 31 اکتوبر کو اپنے فیصلے میں آسیہ بی بی پر عائد الزامات کے خلاف گواہوں کے بیانات میں تضاد کو ایک وجہ بتاتے ہوئے انھیں بےقصور قرار دیا تھا۔

عدالت نے تفصیلی فیصلے میں قرار دیا تھا کہ یہ قانون کا مسلمہ اصول ہے کہ جو دعویٰ کرتا ہے، ثابت کرنا بھی اسی کی ذمہ داری ہوتی ہے۔ 'پس یہ استغاثہ کی ذمہ داری ہے کہ وہ تمام کارروائی میں ملزم کے ارتکاب جرم کو ہر قسم کے شک و شبہ سے بالا تر ثابت کرے۔ جس جگہ بھی استغاثہ کی کہانی میں کوئی جھول ہوتا ہے اس کا فائدہ ملزم کو دیا جانا چاہیے۔'

آسیہ بی بی اور ان کے خاندان کے افراد کہاں ہیں؟

کمرہ عدالت سے نکلنے کے بعد آسیہ بی بی کے وکیل سیف الملوک نے میڈیا کے نمائندوں کو بتایا کہ توہین مذہب کے مقدمے میں عدالت عظمی سے رہائی پانے کے باوجود ان کی موکلہ کی زندگی کو شدید خطرات لاحق ہیں۔ اُنھوں نے کہا کہ ملک کے متعدد عملائے کرام نے آسیہ بی بی کے قتل کے فتوے جاری کر رکھے ہیں اس لیے بہتر یہی ہوگا کہ وہ بیرون ملک چلی جائیں۔

سیف الملوک کا کہنا تھا کہ اگرچہ خود ان کی زندگی کو بھی خطرات لاحق ہیں لیکن اس کے باوجود وہ اپنے اہلخانہ کے ہمراہ پاکستان میں ہی رہیں گے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption رہائی پانے والی مسیحی خاتون آسیہ بی بی کی بیٹیاں اب کینیڈا منتقل ہو گئی ہیں (فوٹو فائل)

آسیہ بی بی کے وکیل سیف الملوک یہ پہلے ہی بتا چکے ہیں کہ آسیہ کی دونوں بیٹیاں کینیڈا منتقل ہو چکی ہیں تاہم وہ اپنے شوہر کے ہمراہ ایک نامعلوم مقام پر موجود ہیں۔

بی بی سی سے بات کرتے ہوئے سیف الملوک نے یہ بھی کہا کہ آسیہ بی بی کی دونوں بیٹیوں کے علاوہ اس خاندان کے ترجمان جوزف ندیم کے اور ان کے اہلخانہ بھی کینیڈا منتقل ہو گئے ہیں۔

سیف الملوک کے مطابق یورپی ممالک نے جوزف ندیم اور ان کے اہلخانہ کو ویزہ دینے یا اُنھیں مستقل سکونت دینے سے انکار کر دیا تھا تاہم کینیڈا کی حکومت نے آسیہ بی بی کی دونوں بیٹیوں کے علاوہ جوزف اور ان کے خاندان کے دیگر افراد کو بھی سکونت اختیار کرنے کی اجازت دے دی ہے۔

آسیہ بی بی کے خاوند عاشق مسیح کے بارے میں سیف الملوک کا کہنا تھا کہ دونوں میاں بیوی ایک ساتھ رہ رہے ہیں تاہم انھوں نے اس مقام یا علاقے کی نشاندہی نہیں کی جہاں پر یہ دونوں آسیہ بی بی کی رہائی کے بعد مقیم ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ FAROOQ NAEEM
Image caption آسیہ بی بی کے وکیل سیف الملوک

تحریک لبیک پاکستان کی جانب سے رد عمل

آسیہ بی بی کی رہائی کے عدالتی فیصلے کے بعد ملک بھر میں مظاہرے کرنے والی مذہبی اور سیاسی جماعت تحریک لبیک کے مرکزی قائم مقام امیر علامہ ڈاکٹر شفیق امینی نے ویڈیو پیغام جاری کرتے ہوئے آسیہ بی بی کیس کی نظر ثانی درخواست کے لیے بنائے گئے بینچ کو مسترد کیا ہے۔

پیغام میں کہا گیا کہ اگر آسیہ بی بی کو جوڈیشل ریلیف دینے کی کوشش کی گئی ملک گیر احتجاجی تحریک چلائی جائے گی۔

انھوں نے مطالبہ کیا کہ موجودہ بینچ کو تحلیل کرکے یقین دہانی کے مطابق لارجر بینچ تشکیل دیا جائے کیونکہ حکومت نے لارجر بینچ بنانے کا وعدہ کیا تھا اور بینچ میں شریعہ کورٹس کے ججز شامل کرنے کی یقین دہانی بھی کرانے کے ساتھ ساتھ نظرثانی اپیل کی سماعت کے وقت علما کی معاونت بھی طلب کیے جانے کا کہا تھا لیکن ایسا نہیں ہوا۔

ڈاکٹر شفیق امینی کا کہنا تھا کہ ملکی سکیورٹی کے لیے فوجی عدالتیں بنائی جاسکتی ہیں تو ناموس رسالت کے مقدمے میں شریعہ کورٹس کے ججوں کو کیوں طلب نہیں کیا جا سکتا۔

ان کا کہنا تھا کہ ’حکومت کی جانب سے کریک ڈاؤن اور گرفتاریوں کے خلاف تو ہم نے صبر کیا، لیکن اب بات بڑھ کر ہمارے ایمان کی آگئی، کوئی ہم سے سمجھوتے کی توقع نہ رکھے۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption گذشتہ سال 23 نومبر کو تحریک لبیک پاکستان کے قائد خادم حسین رضوی اور پیر افضل قادری کے علاوہ دیگر رہنماؤں کو حراست میں لے لیا گیا

انھوں نے مطالبہ کیا کہ اس حساس کیس میں حکومت اور مقتدر ادارے ذمہ دارانہ کردار ادا کریں اور پنجاب اسمبلی کے باہر ہونے والے معاہدے پر عمل درآمد کیا جائے۔

خیال رہے کہ آسیہ بی بی کی بریت کے بعد اس جماعت کی قیادت کی طرف سے آسیہ بی بی کی رہائی کا فیصلہ دینے والے جج صاحبان اور فوج کی قیادت کے خلاف احتجاجی مظاہروں میں توہین آمیز الفاظ بھی کہے گئے تھے۔

اس کے بعد 23 نومبر کو جماعت کے قائد خادم حسین رضوی اور پیر افضل قادری کے علاوہ دیگر رہنما کو حراست میں لے لیا گیا تھا اور اب وہ غداری سمیت مختلف مقدمات میں نامزد ہونے کی وجہ سے ان دنوں مختلف جیلوں میں قید ہیں۔

تحریک لبیک کی قیادت کے خلاف حکومت کے اس اقدام پر حزب مخالف کی جماعتوں نے بھی حکومت کا ساتھ دیا تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption اسلام آباد کی ضلعی انتظامیہ کی طرف سے سماعت کے موقعے پر سپریم کورٹ اور ریڈ زون میں کسی بھی ناخوشگوار واقعہ سے نمٹنے کے لیے حفاظتی اقدامات سخت کر دیے گئے ہیں

سماعت سے قبل سکیورٹی انتظامات سخت

آسیہ بی بی کی رہائی کے بعد ملک میں مذہبی جماعتوں کی جانب سے شدید ردعمل سامنے آیا تھا اور اسلام آباد کی ضلعی انتظامیہ کی طرف سے عدالتی فیصلے کے خلاف نظرثانی کی اپیل کی سماعت کے موقعے پر سپریم کورٹ اور ریڈ زون میں کسی بھی ناخوشگوار واقعہ سے نمٹنے کے لیے حفاظتی اقدامات سخت کر دیے گئے تھے۔

عدالت عظمیٰ میں صرف ان افراد کو جانے کی اجازت تھی جن کے مقدمات کی سماعت ہونا تھی۔ اس کے علاوہ وفاقی دارالحکومت کے مختلف علاقوں میں بھی پولیس اور رینجرز کی گشت بڑھا دی گئی تھی۔

اسی بارے میں