افغان پناہ گزینوں کے بچے مادری زبان سے محروم کیوں؟
اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں

افغان پناہ گزین طلبا مادری زبان سے محروم کیوں؟

پاکستان میں اقوام متحدہ کے ادارے یو این ایچ سی آر کے زیر انتظام چلنے والے تمام افغان مہاجرین کے سکولوں میں رواں سال سے نصاب تبدیل کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے جس کے تحت اب بیشتر کتابیں افغانوں کی قومی زبان پشتو کی بجائے اردو اور انگریزی زبانوں میں پڑھائی جائے گی۔ اس سے پہلے زیادہ تر کتابیں افغانستان کے دو قومی زبانوں پشتو اور دری پر مشتمل تھیں۔

پاکستان میں رہائش پزیر افغان باشندوں نے اس فیصلے کو مسترد کیا ہے۔ پشاور سے ہمارے ساتھی رفعت اللہ اورکزئی کی ڈیجیٹل رپورٹ۔