سوشل میڈیا پر انتہا پسندی پھیلانے والے کے خلاف کارروائی کا اعلان

فواد چوہدری تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption فواد چوہدری نے بدھ کے روز اعلان کیا کہ حکومت جلد سوشل میڈیا پر پائے جانے والے انتہا پسندی پر مبنی بیانیے کے خلاف کریک ڈاؤن کرے گی

وفاقی وزیر اطلاعات فواد چوہدری نے بدھ کے روز اعلان کیا کہ حکومت جلد سوشل میڈیا پر پائے جانے والے انتہا پسندی پر مبنی بیانیے کے خلاف کریک ڈاؤن کرے گی۔

وفاقی وزیر اطلاعات نے اسلام آباد میں ایک تقریب سے خطاب کرتے ہوئے بتایا کہ حکومت منافرت پھیلانے والوں کے خلاف بھی کاروائی کرے گی۔

فواد چوہدری نے بتایا کہ حکومت نے وہ طریقۂ کار وضع کر لیا ہے جس کی بنیاد پر ان عناصر کے خلاف کاروائی کی جائے گی جو سوشل میڈیا پر منافرت پھیلا رہے ہیں۔ انھوں نے پاکستان میڈیا ریگولیٹری اتھارٹی کے قیام کا بھی ذکر کیا۔ جو تمام ڈیجیٹل، پرنٹ اور الکٹرانک میڈیا کی نگرانی کرے گا اور ان پر پائے جانے والے قوانین پر عملدرآمد یقینی بنائیں گے۔

فواد چوہدری کا کہنا تھا کہ ’مسئلہ بنیادی طور پر رسمی میڈیا کی بنسبت غیر رسمی میڈیا میں پایا جاتا ہے اور اس کی مانیٹرنگ کرنا بے حد ضروری ہے‘

مزید پڑھیے

’ریاستی اداروں‘ کے خلاف ٹویٹس کرنے پر صحافی گرفتار

’ریاستی اداروں کے خلاف احتجاج‘ پر گرفتار پروفیسر رہا

فواد چوہدری کا معافی مانگنے سے انکار۔ جھگڑا کیا ہے؟

فواد چوہدری نے گذشتہ ہفتے ہونے والی گرفتاریوں کے بارے میں بات کرتے ہوئے کہا کہ ’ان لوگوں نے سوشل میڈیا کو فتوے دینے کے لیے، اپنا انتہا پسندانہ بیانیہ دینے کے لیے اور دھمکیاں دینے کے لیے استعمال کیا۔‘

انھوں نے اس حوالے سے مزید بتایا کہ حکومت آنے والے ہفتوں میں ایسے عناصر کے خلاف سخت کاروائی کرے گی۔ ان کا کہنا تھا کہ ’ریاست ڈائیلاگ کرنا چاہتی ہے اور ڈائیلاگ ہو نہیں سکتا اگر اگلا اجازت نہ دے۔‘

فواد چوہدری کے مطابق ایک قومی بیانیہ بنانے کے لیے کوشش کی جارہی ہے کہ طاقت کے استمعال پر صرف ریاست کی اجارہ داری ہونی چاہیے۔

ان کے مطابق پاکستان میں انتہا پسندی کے رجحان کی تاریخ زیادہ پرانی نہیں ہے۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں