پاکستان کے لیے فضائی سفر کے بارے میں اہم سوالات اور ان کے جواب

پاکستانی مسافر
Image caption پاکستان کی فضائی حدود کمرشل پروازوں کے لیے جزوی طور پر کھولی گئی ہے جس کا مطلب یہ ہے کہ پاکستان کی ساری فضائی حدود کی بجائے مغربی جانب کی فضائی حدود کمرشل پروازوں کے لیے کھولی گئی ہیں

پاکستانی سول ایوی ایشن اپنی فضائی حدود کو کمرشل پروازوں کے لیے جزوی طور پر کھولنے کا سلسلہ جاری رکھے ہوا ہے۔ اتوار 3 مارچ کو سول ایوی ایشن اتھارٹی نے پہلے لاہور اور پھر فیصل آباد کے بین الاقوامی ہوائی اڈوں کو اندورنِ ملک اور بیرونِ ملک پروازوں کے لیے کھولا۔

فضائی حدود کی جلدبازی میں بندش اور پھر کھلنے کے بعد جاری کنفوژن اب کافی حد تک کم ہو چکی ہے اور بیرونِ مک پھنسے ہوئے مسافروں خصوصاً مشرقِ وسطیٰ میں پھنسے مسافروں کی بڑی تعداد کو پاکستان واپس لایا جا چکا ہے۔ تاہم اب بھی ملتان اور سیالکوٹ کے ہوائی اڈے اور ملک کے دوسرے چھوٹے ہوائی اڈے پروازوں کے لیے بند ہیں۔ اسی طرح پاکستان آمدورفت کے لیے طیاروں کو مشرقی سرحد سے بچ کر مغربی سرحد کے ساتھ ایک کوریڈور دیا گیا ہے جس میں طیارے اڑ سکتے ہیں۔

یہ بھی پڑھیے

پاکستان نے فضائی حدود کمرشل پروازوں کے لیے بند کر دی

انڈین پائلٹ ابھینندن کو بھارتی حکام کے حوالے کر دیا گیا

کنٹرول لائن پر کشیدگی برقرار، شہریوں کی نقل مکانی جاری

تاہم اب بھی بڑی تعداد میں مسافر صورتحال کی وضاحت کے منتظر ہیں جو یا دنیا کے مختلف ممالک میں مختلف ہوائی اڈوں پر موجود ہیں۔ ان میں مشرق بعید سے سفر کرنے والے مسافر خاص طور پر پریشان ہیں کیونکہ تھائی ایئرویز اور ملائیشیا سے لاہور آنے والے مالنڈو ایئر کی پروازیں ابھی تک منسوخ ہیں۔ اور ان کے مسافر ابھی تک پریشان ہیں۔

اس بارے میں ہمارے سوشل میڈیا کے پیجز پر لوگوں نے بہت سارے سوالات پوچھے جن میں سے اکثر کے جوابات ہم نے اس فیس بک لائیو میں دینے کی کوشش کی۔

تو وہ چیدہ چیدہ سوالات کیا ہیں۔ اپنے قارئین کی معلومات اور رہنمائی کے لیے ہم ان کے جواب یہاں لکھ رہے ہیں۔

کیا پاکستان کی فضائی حدود کمرشل پروازوں کے لیے کھل چکی ہیں؟

پاکستان کی فضائی حدود، کمرشل پروازوں کے لیے جزوی طور پر کھولی گئی ہیں جس کا مطلب یہ ہے کہ پاکستان کی ساری فضائی حدود کی بجائے مغربی جانب کی فضائی حدود کمرشل پروازوں کے لیے کھولی گئی ہیں۔

مشرقی سرحد کے ساتھ واقع ہوائی اڈے اور فضائی حدود کمرشل پروازوں کے لیے تاحال بند ہیں۔

Image caption اس وقت ملک کے چار بین الاقوامی ہوائی اڈے پروازوں کی آمدورفت کے لیے کھلے ہیں

جزوی طور پر فضائی حدود کھلنے کا کیا مطلب ہے؟

جزوی طور پر فضائی حدود کھلنے کا مطلب یہ ہے کہ اس وقت ملک کے چھ بین الاقوامی ہوائی اڈے پروازوں کی آمدورفت کے لیے کھلے ہیں۔ یہ چھ ہوائی اڈے اسلام آباد، پشاور، کراچی، لاہور، کوئٹہ اور فیصل آباد کے ہوائی اڈے ہیں۔

اس علاوہ ملک کے باقی تمام ہوائی اڈوں کے کھلنے کے بارے میں فیصلہ سوموار دوپہر ایک بجے سامنے آئے گا۔ تب تک یہ ہوائی اڈے بدستور بند رہیں گے۔

ملتاناور سیالکوٹ سمیت دوسرے چھوٹے ہوائی اڈوںکے لیے پروازوں کا کیا ہوگا؟

اس وقت نافذ العمل نوٹیفیکیشن کے مطابق ملتان اور سیالکوٹ کے بین الاقوامی ہوائی اڈے کسی بھی قسم کی پروازوں کے لیے بند ہیں۔ نہ تو کوئی پرواز ان ہوائی اڈوں پر اتر سکتی ہے اور نہ ہی ان سے روانہ ہو سکتی ہے۔ اسی طرح ملک

Image caption پاکستان کی مشرقی سرحد کے ساتھ واقع ہوائی اڈے اور فضائی حدود کمرشل پروازوں کے لیے تاحال بند ہیں

تو اگر ایک مسافر نے ملتاناور سیالکوٹ کے لیے پرواز بک کی ہوئی ہے وہ کیا کرے؟

پاکستان میں پرواز کرنے والی مختلف ائرلائنز سے جب رابطہ کیا گیا تو ان میں سے اکثر کا یہ کہنا ہے کہ ایسے تمام مسافروں کو جو ان ہوائی اڈوں کے لیے ٹکٹ بک کروا چکے ہیں یا سفر کرنا چاہتے ہیں متبادل پرواز کی پیشکش کی گئی ہے۔ مگر اضافی چارجز مختلف ایئرلائنز کے مختلف ہیں۔

اس کے ساتھ ساتھ ایئر لائنز بار بار تاکید کر رہی ہیں کہ اس سارے معاملے کے لیے ایئرلائن کے دفاتر کا وزٹ کریں یا ہیلپ لائن پر فوری کال کریں۔ چونکہ ہیلپ لائنز اور دفاتر پر غیرمعمولی پریشر ہے اس لیے صبر و تحمل سے کام لیں۔

Image caption موجودہ صورتحال میں گر ایئرلائنز اتنی کنفیوز تھی تو تصور کریں اُن ہزاروں مسافروں کا کیا حال ہوگا جو یا تو کسی خلیجی ایئر پورٹ پر پرواز کے منتظر ہیں

کیا انٹرنیشنل ایئر لائنز پاکستان آ سکتی ہیں؟

جی بالکل، جمعہ یکم مارچ شام چھ بجے کے بعد سے تمام بین الاقوامی ایئر لائنز سوائے چند کے کراچی، اسلام آباد، پشاور اور کوئٹہ کے لیے اپنی پروازیں چلا رہی ہیں۔ اتوار تین مارچ صبح 10 بجے سے پاکستان سول ایوی ایشن نے لاہور اور فیصل آباد کے بین الاقوامی ہوائی اڈے بھی انٹرنیشنل اور مقامی پروازوں کے لیے کھول دیے ہیں۔

یہی صورتحال ان مسافروں کی ہے جو کسی بھی غیر ملکی یا ملکی ایئرلائن کے ذریعے ملک سے باہر پرواز کرنا چاہتے ہیں۔ ان کی پروازیں ان چھ ہوائی اڈوں سے معمول کے مطابق چل رہی ہیں۔ لیکن ایئر لائن کا اصرار ہے کہ آپ ان کے ہیلپ لائن یا دفاتر سے رابطہ کریں۔

میرے سفری تجربے میں جو مشکلات پیش آئیں ہیں اس کا مداوا کون کرے گا؟

اس حوالے سے پاکستان سمیت مختلف ممالک میں مختلف قوانین موجود ہیں آپ ان قوانین کا استعمال کرکے اپنی شکایات مداوے کے لیے درخواست دائر کر سکتے ہیں۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں