جماعت الدعوۃ اور فلاحِ انسانیت کالعدم قرار، جیش محمد کے اہم ارکان سمیت 44 زیرِ حراست

حافظ سعید تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption فنانشل ایکشن ٹاسک فورس کے اجلاس سے پہلے ان تنظیموں کالعدم تنظیموں میں شامل کرنے کا اعلان کیا گیا تھا

پاکستان کی حکومت نے مذید دو تنظیموں کو کالعدم تنظیموں کی فہرست میں شامل کیا ہے جس کے بعد اب ملک میں ایسی تنظیموں کی تعداد 70 ہو گئی ہے اور اس ضمن میں وزارت داخلہ کی طرف سے منگل کو ایک نوٹیفکیشن جاری کیا گیا ہے۔

انسداد دہشتگردی کے قومی ادارے، نیکٹا کی طرف سے جاری ہونے والی تازہ ترین فہرست کے مطابق منگل پانچ فروری کو جن تنظیموں کو اس میں شامل کیا گیا ہے ان میں جماعت الدعوۃ اور فلاح انسانیت شامل ہیں، جو دراصل لشکر طیبہ کی ہی شاخیں ہیں جسے سابق فوجی صدر پرویز مشرف کے دور میں کالعدم قرار دیا گیا تھا۔

اسی حوالے سے مزید پڑھیے

شدت پسند تنظیم ’جیش محمد‘ کیا ہے؟

شدت پسند تنظیموں پر پابندیاں کتنی موثر؟

’پاکستان غیر ریاستی عناصر کے خلاف ایکشن کا ارادہ رکھتا ہے‘

’مسعود اظہر کے خلاف قرارداد انڈیا کا سیاسی حربہ‘

نامہ نگار شہزاد ملک کے مطابق وزارت داخلہ کے اہلکار نے بتایا ہے کہ موجودہ حکومت نے اقتدار میں آنے کے بعد مذکورہ دو تنظیموں سمیت کل چار تنظیموں کو کالعدم قرار دیا ہے۔

واضح رہے کہ حکومت نے فنانشل ایکشن ٹاسک فورس کے اجلاس سے پہلے فلاح انسانیت اور جماعت الدعوۃ کو کالعدم تنظیموں میں شامل کرنے کا اعلان کیا تھا، تاہم انھیں ایسی کسی فہرست میں باقاعدہ شامل نہیں کیا گیا تھا۔

وزارت داخلہ کے اہلکار کے مطابق فلاح انسانیت اور جماعت الدعوۃ کو کالعدم قرار دیے جانے کے بعد قانون نافذ کرنے والے اداروں نے ملک کے مختلف علاقوں میں چھاپے مارنا شروع کردیے ہیں اور اس ضمن میں اسلام آباد اور راولپنڈی کے مختلف علاقوں میں چھاپے مارکر 20 سے زائد ایمبولنس گاڑیاں قبضے میں لے لی ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption وزیرِ مملکت برائے داخلہ شہر یار آفریدی کا کہنا تھا کہ دونوں افراد کے نام انڈیا کی طرف سے پاکستان کو بھیجے گئے ڈوزئیر میں شامل ہیں۔

اہلکار کے مطابق پنجاب کے وسطی شہروں گوجرانوالہ، سیالکوٹ کے علاوہ گجرات میں بھی ان تنظیموں کے دفاتر پر قانون نافذ کرنے والے اداروں کی طرف سے کارروائیاں کرنے کی اطلاعات ہیں۔

وزارت داخلہ کے اہلکار سے جب حافظ سعید کے بارے میں کسی بھی ممکنہ کارروائی کے بارے میں پوچھا گیا تو ان کا کہنا تھا کہ ابھی تک وزارت داخلہ کے پاس حافظ سیعد کے خلاف کارروائی کرنے سے متعلق کوئی تجویز زیر غور نہیں ہے۔

دوسری طرف راولپنڈی کی انتظامیہ کے ایک اہلکار کے مطابق حکومت نے ان دونوں تنظیموں کے زیر انتظام چلنے والے دو اداروں کا انتظام بھی سنبھال لیا ہے۔ ان اداروں میں طلبا کو مختلف تکنیکی امور کی تعلیم دی جاتی ہے۔

واضح رہے کہ سابق حکمراں جماعت پاکستان مسلم لیگ نواز کے دور میں بھی ایف اے ٹی ایف کے اجلاس سے پہلے ان اداروں میں نگراں مقرر کرنے کے احکامات جاری کیے گئے تھے لیکن عملی طور پر ایسا نہیں ہوسکا تھا۔

اس سے قبل منگل کو ہی وزیر مملکت برائے داخلہ شہریار خان آفریدی نے اعلان کیا کہ حکومت نے کالعدم تنظیموں کے خلاف کاروائی کرتے ہوئے 44 افراد کو حراست میں لے لیا ہے جن میں جیش محمد کے بانی مولانا مسعود اظہر کے دو رشتہ دار حماد اظہر اور مفتی عبدالرؤف شامل ہیں۔

میڈیا کے نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے شہر یار آفریدی کا کہنا تھا کہ ان دونوں افراد کے نام انڈیا کی طرف سے پاکستان کو بھیجی گئی دستاویزات یا ڈوزئیر میں شامل ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ اگر 14 فروری کو ہونے والے پلوامہ حملے میں ملوث ہونے سے متعلق انڈیا نے ان کے ملوث ہونے کے بارے شواہد پیش کیے تو ان افراد کے خلاف کارروائی کی جائے گی ورنہ انھیں رہا کردیا جائے گا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption انڈیا کے زیر انتظام کشمیر میں 14 فروری کو پلوامہ کے مقام پر ایک خود کش حملہ میں تقریباً 50 انڈین اہلکار ہلاک ہو گئے تھے جس کے بعد سے دونوں ممالک کے درمیان تعلقات میں سخت کشیدگی ہو گئی ہے

شہر یار آفریدی کا کہنا تھا کہ کالعدم تنظیموں کے خلاف کارروائی ملک بھر میں جاری ہے اور یہ کارروائیاں دو ہفتوں تک جاری رہیں گی۔ اُنھوں نے کہا کہ موجودہ حکومت کسی بھی شخص کو پاکستان کی سرزمین کسی بھی ملک کے خلاف استعمال کرنے کی اجازت نہیں دے گی۔

سیکریٹری داخلہ میجر ریٹائرڈ اعظم سلیمان خان نے بی بی سی کی جانب سے پوچھے گئے سوال کے جواب میں کہا کہ حکومت اپنی جانب سے شفافیت کی پالیسی پر عمل پیرا ہے۔

'جن افراد کے نام ڈوزئیر میں شامل ہیں ہم ان کے خلاف تفتیش کریں گے اور اگر کسی کے خلاف شواہد ملتے ہیں تو ان کے خلاف کاروائی کی جائے گی اور شواہد نہ ملنے کی صورت میں انھیں چھوڑ دیا جائے گا۔'

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption پاکستانی وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے چند روز قبل بیان دیا تھا کہ مولانا مسعود اظہر اتنے بیمار ہیں کہ وہ گھر سے باہر بھی نہیں نکل سکتے

پاکستانی وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے چند روز قبل بیان دیا تھا کہ مولانا مسعود اظہر اتنے بیمار ہیں کہ وہ گھر سے باہر بھی نہیں نکل سکتے۔

واضح رہے کہ انڈیا کی طرف سے یہ الزام عائد کیا جاتا رہا ہے کہ پلوامہ حملے میں جیش محمد کے ارکان ملوث ہیں۔

یاد رہے کہ ماضی میں اس سے پاکستان نے نومبر 2008 کے ممبئی حملوں کے نتیجے میں انڈیا کی طرف سے بھیجے گئے ڈوزئیر کے نتیجے میں لشکر طیبہ کے رہنما ذکی الرحمن لکھوی سمیت آٹھ افراد کو حراست میں لیا تھا۔

بعد ازاں ذکی الرحمن لکھوی ضمانت پر رہا کردیے گئے جبکہ باقی افراد گذشتہ 10 سال سے راولپنڈی کی اڈیالہ جیل میں ہیں۔

قانونی ماہرین کا کہنا ہے کہ ممبئی حملوں میں انڈیا کی طرف سے بھیجے گئے ڈوزیئر اور انڈیا میں بھارتی اہلکاروں کے بیانات پاکستان کی عدالتوں میں قابل قبول نہیں ہیں۔

اسی بارے میں