لورالائی میں کارروائی چار شدت پسند ہلاک

فائل فوٹو تصویر کے کاپی رائٹ BANARAS KHAN/AFP/Getty Images
Image caption فائرنگ کے تبادلے میں چار سیکورٹی اہلکار بھی معمولی زخمی ہوئے

پاکستان کے صوبہ بلوچستان کے ضلع لورالائی میں حکام کا کہنا ہے کہ سیکورٹی فورسز کی ایک کاروائی میں ایک کالعدم مذہبی شدت پسند تنظیم سے تعلق رکھنے والے چار شدت پسند ہلاک ہو گئے۔

مقامی پولیس کے ایک اہلکار نے بتایا کہ یہ کارروائی ناصر آباد کے علاقے میں خفیہ معلومات کی بنیاد پر کی گئی۔

اہلکار کا کہنا تھا کہ مارے جانے والوں میں ایک خاتون بھی شامل ہے۔

بلوچستان: ’ڈاکٹروں کا اغوا کاروبار بن گیا‘

بلوچستان: لاپتہ افراد یا قبائلی تنازعات؟

بلوچستان میں فائرنگ سے چار مزدور ہلاک

اس سلسلے میں آئی ایس پی آر کی جانب سے جاری کیے گئے ایک بیان کے مطابق یہ کارروائی آپریشن رد الفساد کے تحت کی گئی۔

آئی ایس پی آر کا کہنا ہے کہ یہ آپریشن علی الصبح خفیہ اطلاع کی بنیاد پر کیا گیا۔

تصویر کے کاپی رائٹ BANARAS KHAN/AFP/Getty Images
Image caption مقامی پولیس کے ایک اہلکار نے بتایا کہ یہ کاروائی خفیہ معلومات کی بنیاد پر کی گئی

ان کے مطابق جیسے ہی سیکورٹی فورسز کے اہلکاروں نے شدت پسندوں کے ٹھکانے کو گھیرے میں لیا تو شدت پسندوں نے فرار ہونے کی کوشش کی۔

انھوں نے سیکورٹی فورسز کے اہلکاروں کو آگے بڑھنے سے روکنے کے لیے ان پر فائرنگ کے علاوہ دستی بم پھنیکے۔

آئی ایس پی آر کے مطابق فائرنگ کے تبادلے میں سیکورٹی فورسز نے ٹھکانے پر موجود چار شدت پسندوں کو ہلاک کیا جن میں دو خود کش بمبار بھی شامل تھے۔

اسی بارے میں

لورالائی: ایک ماہ میں چار حملے کیوں؟

لورالائی میں چھاؤنی پر حملہ، حملہ آوروں سمیت آٹھ ہلاک

فائرنگ کے تبادلے میں چار سیکورٹی اہلکار بھی معمولی زخمی ہوئے۔

آئی ایس پی آر کا کہنا ہے کہ مارے جانے والے شدت پسندوں کے ٹھکانے سے ہتھیار، خود کش جیکٹس، دھماکہ خیز مواد اور دیگر اشیا برآمد ہونے کے علاوہ ان لیویز اہلکاروں کے شناختی کارڈ بھی برآمد ہوئے جو کہ چند روز قبل ضلع زیارت کے علاقے سنجاوی میں مارے گئے تھے۔

واضح رہے کہ ضلع زیارت کے علاقے سنجاوی میں مسلحافراد کے ایک حملے میں لیویز فورسز کے چھ اہلکار ہلاک ہوئے تھے۔

اسی بارے میں