برٹش ایئرویز: لندن سے پاکستان، سات دن کا سفر سات گھنٹوں میں کیسے سمٹا؟

اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں
برٹش ایئرویز کی 11 سال بعد پاکستان واپسی

برطانیہ کی فضائی کمپنی برٹش ایئرویز کا جدید ترین بوئنگ 787 طیارہ گیارہ سال بعد آج پاکستانی دارالحکومت اسلام آباد کے بین الاقوامی ہوائی اڈے پر لینڈ کر چکا ہے اور اس کے ساتھ ہی برٹش ایئرویز مغربی ممالک کی وہ واحد ایئرلائن بن گئی ہے جو پاکستان کے لیے اپنی پروازیں چلا رہی ہے۔

لندن اور اسلام آباد کے درمیان براہِ راست پروازوں سے برٹش ایئرویز پاکستان کی قومی فضائی کمپنی، پی آئی اے، کو ہی نہیں بلکہ خلیجی ایئرلائنز کے لیے بھی مقابلے کی فضا پیدا کرے گی۔

گذشتہ برس جب 18 دسمبر کو برٹش ایئرویز نے پاکستان کے لیے اپنی براہِ راست پروازوں کو دوبارہ شروع کرنے کا اعلان کیا تو پاکستان کے سیاسی محاذ پر ایک عجیب سی ہلچل نظر آئی کیونکہ تحریک انصاف اور مسلم لیگ نواز کے درمیان کریڈٹ لینے کے چکر نے اس سارے معاملے کو بہت اہم بنا دیا۔

برٹش ایئرویز اور پاکستان کا دہائیوں پر محیط رشتہ تاریخی اہمیت کا حامل ہے۔

یہ بھی پڑھیے

کراچی سے اسلام آباد کا سفر دبئی سے مہنگا کیوں؟

پاکستانی فضائیہ موٹر وے پر مشقیں کیوں کرتی ہے؟

پاکستان نے فضائی حدود کمرشل پروازوں کے لیے بند کر دی

برٹش ایئرویز کا ورثہ

برٹش ایئرویز کسی نہ کسی شکل میں پاکستانی مسافروں کے لیے ہمیشہ سے سفری سہولیات فراہم کرتی رہی ہے۔ جب پی آئی اے اور تمام خلیجی ایئرلائنز نہیں تھیں تب بھی یہ ایئر لائن اپنی خدمات فراہم کرتی تھی۔ برٹش ایئرویز برطانیہ کی سب سے بڑی فضائی کمپنی ہے مگر طیاروں کی تعداد کے حساب سے ایزی جیٹ اس سے بھی بڑی ایئر لائن ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ HISTORY OF PIA

برٹش ایئرویز کی کہانی تقریبا ایک صدی پرانی ہے۔

حالیہ تاریخ میں سنہ 1974 میں برطانوی حکومت نے ملک کی دو بڑی بین الاقوامی فضائی کمپنیوں یعنی برٹش اوورسیز ایئرویز کارپوریشن اور برٹش یورپین ایئرویز کو قومیانے کا فیصلہ کیا اور دو ملکی کمپنیوں یعنی کیمبریئن ایئرویز اور نارتھ ایسٹ ایئرلائنز کو بھی اس نظام کا حصہ بنا کر اس برٹش ایئرویز کی بنیاد رکھی جو آج ہمارے سامنے ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Print Collector
Image caption ایمپریئل ایئرویز کا تاریخی طیارہ ہینڈلے پیج ہیرلڈ گوادر میں جو اس دنوں مسقط (موجودہ اومان) کا حصہ تھا۔ یہ تصویر انیس سو اکتیس کی ہے جب یہ طیارہ اس وقت کے گوادر میں ایندھن بھرنے کے لیے رکا تھا۔

31 مارچ 1974 کو برٹش ایئرویز ایک قومی کمپنی کے طور پر وجود میں آئی۔ بعد میں فروری 1987 کو اس کی نجکاری عمل میں آئی اور اب یہ ایک نجی کمپنی ہے۔

قصہ کچھ یوں ہے کہ جن دو کمپنیوں کے انضمام سے برٹش ایئرویز (بی اے) وجود میں آئی ان میں سے ایک برٹش اوورسیز ایئرویز کارپوریشن کو ایمپریئل ایئرویز اور ماضی کی برٹش ایئرویز (جی ہاں ایک برٹش ایئرویز نامی کمپنی ماضی میں بھی رہی ہے) کو ملا کر ایک کمپنی بنایا گیا تھا۔ ایمپریئل ایئرویز کو تاجِ برطانیہ کے تحت علاقوں تک رسائی خصوصا ڈاک کی ترسیل کے لیے قائم کیا گیا تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption 30 مارچ 1926 کو لندن کے کروئیڈن ہوائی اڈے کا ایک منظر۔ اس دور میں کروئیڈن لندن کا مرکزی ہوائی اڈہ تھا۔

برصغیر کے لیے پروازیں

ایمپریئل ایئرویز 31 مارچ 1924 کو وجود میں آئی۔

اس کے بعد اگلے پانچ سال تک منصوبہ بندی جاری رہی جس میں ایرانی حکام سے مذاکرات بھی شامل تھے کہ وہ پروازوں کو اپنے ملک کی فضائی حدود استعمال کرتے ہوئے کراچی جانے دیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ Print Collector
Image caption یہ اس طیارے کا اندورنی منظر ہے جو سب سے پہلے موجودہ پاکستان میں موجود کراچی کے ہوائی اڈے پر اترا۔ برطانوی طیارہ ساز کمپنی ڈی ہیولینڈ کے ہرکولیس طیارے استعمال ہوتے تھے۔ اس کے تین انجن ہوتے تھے اور اس میں ڈاک کے علاوہ سات مسافر بیٹھ سکتے تھے۔

اس طرح برٹش ایئرویز کی پہلی پرواز 6 جنوری 1927 کو کراچی پہنچی مگر یہ ایک سروے پرواز تھی جو راستے کے تعین کے لیے چلائی گئی۔ یہ سفر تقریبا پچپن گھنٹوں میں طے کیا گیا۔

بالآخر دو سال کے مذاکرات کے بعد 30 مارچ 1928 کو لندن سے کراچی کی پروازیں شروع ہوئیں۔ لندن میں ان دنوں ہیتھرو کا ہوائی اڈہ نہیں تھا اور لندن کے ساتھ کروئیڈن سے پروازیں چلتی تھیں۔ مگر یہ سارا سفر فضائی نہیں تھا بلکہ مسافر لندن سے سوئٹزرلینڈ کے شہر بیزل جاتے۔ جہاں سے ٹرین پکڑ کر اطالوی شہر گینوا پہنچتے۔ جس کے بعد ایک فلائنگ بوٹ یا ایسا طیارہ جو پانی پر سے پرواز کرتا تھا پکڑ کر مصر کے شہر سکندریہ جاتے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption یہ تصویر آٹھ نومبر 1938 کی ہے جس میں مہاراجہ آف جودھپور اپنے بیٹوں کے ساتھ لندن کے کروئیڈن ہوائی اڈے پر موجود ہیں

سکندریہ سے قاہرہ کا سفر پھر ٹرین پر اور قاہرہ سے پرواز پکڑ کر مسافر کراچی کے لیے عازمِ سفر ہوتے۔ قاہرہ سے کراچی کے سفر کے دوران طیارہ گیارہ بار اتر کر ایندھن لیتا اور ان میں سے ایک سٹاپ گوادر بھی ہوتا تھا۔

اگلے کئی سالوں تک یہ سفر بدلتا رہا، بہتر طیارے اس کی طوالت میں کمی لاتے رہے مگر اس میں کسی نہ کسی صورت میں ریل کا سفر شامل رہا۔

شروع میں قاہرہ سے کراچی کی پروازوں کے لیے برطانوی طیارہ ساز کمپنی ڈی ہیولینڈ کے ہرکولیس طیارے استعمال ہوتے تھے۔ اس کے تین انجن ہوتے تھے اور اس میں ڈاک کے علاوہ سات مسافر بیٹھ سکتے تھے۔

طیارے کے دونوں پائلٹ طیارے کی ناک کے اوپر باہر بیٹھتے۔ یعنی ان کا کیبن اوپر سے کھلا ہوتا تھا۔ ان کی مدد کے لیے ایک وائرلیس آپریٹر بھی ہوتا تھا۔

بعد میں اس پرواز کے لیے تھوڑے بڑے طیارے برطانوی کمپنی ہینڈلے پیج سے حاصل کیے گئے۔ یہ طیارے ہینڈلے پیج ہیرلڈ کہلاتے تھے۔ ان طیاروں میں دو کیبن ہوتے تھے اور کل ملا کر اس میں 12 سے 38 مسافروں کے بیٹھنے کی گنجائش ہوتی تھی۔ اس طیارے میں بالاآخر پائلٹ کے سر پر چھت لگا دی گئی تھی۔

اور یوں لندن کے کروئیڈن ایئرپورٹ سے شروع ہونے والا فضائی سفر کا یہ سلسلہ ہیتھرو منتقل ہوا مگر کراچی وہیں کا وہیں رہا۔ کراچی کے لیے بی اے نے اپنی پروازیں سنہ 1991 میں خلیج کی پہلی جنگ اور منافع نہ ہونے کی وجہ سے بند کیں۔ ایمپیرئیل ایئرویز نے اپنے ایک طیارے کا نام سٹی آف کراچی بھی رکھا جو اس نے 21 دسمبر 1931 کو حاصل کیا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption یہ نقشہ سنہ 1936 میں ان مقامات کی نشاندہی کرتا ہے جہاں برٹش ایمپیریئل ایئرویز پرواز کرتی تھی

اسلام آباد کے لیے پروازیں

دوسری جانب اسلام آباد کے لیے پروازیں 1976 میں شروع کی گئیں اور یہ سلسلہ 20 ستمبر 2008 تک چلتا رہا۔ مگر اسلام آباد کے میریٹ ہوٹل میں ہونے والے خود کش بم دھماکے کے چند دن بعد ہی برٹش ایئرویز نے اسلام آباد کے لیے اپنی براہِ راست پروازیں بند کر دیں تھیں۔

برٹش ایئرویز اُن دنوں اسلام آباد کے لیے ہفتے میں چھ پروازیں چلاتی تھی اور پی آئی اے کے علاوہ واحد دوسری ائیرلائن تھی جو ڈائریکٹ فلائٹ چلایا کرتی تھی۔

کرایہ کتنا تھا؟

سات دنوں پر محیط سفر کا کرایہ بھی کافی تھا اور آج بھی کافی ہے۔ ان دنوں یکطرفہ کرایہ 130 پاؤنڈ سٹرلنگ تھا مگر یہ کم ہو کر سنہ 1938 میں 85 پاونڈ تک ہو گیا تھا۔ آج کے حساب سے یہ کرایہ لگ بھگ 3800 سے لے کر 9000 پاونڈ سٹرلنگ تک تھا۔ جو ان دنوں بھی بے تحاشا مہنگا تھا۔ اس لیے زیادہ تر مسافر حکومتی اہلکار، سرکاری افسر، لارڈز اور شکاری ہوتے تھے۔ ہر افتتاحی پرواز پر صحافیوں کو بھی لازمی جگہ دی جاتی تھی۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption ایک فضائی میزبان طیارے پر کھانا تیار کر رہا ہے

اس وقت صورتحال کیا ہے؟

دنوں، ہفتوں اور متعدد سٹاپ پر رکنے والی یہ پروازیں ایمپریئل ایئرویز سے برٹش اوورسیز ایئرویز کارپوریشن اور پھر برٹش ایئرویز تک کا یہ سفر پاکستان کی ہوابازی کے سفر کے ساتھ جڑا ہوا ہے۔ اب تک پاکستان سے برطانیہ خصوصاً لندن سفر کرنے کے لیے آپ کے پاس صرف پی آئی اے کی پرواز ہے جو نان سٹاپ یعنی ڈائریکٹ ہے۔

اس کے علاوہ اگر آپ پاکستان سے لندن کا سفر کریں تو خلیجی ایئرلائنز ایمرٹس، اتحاد، قطر ایئرویز، اومان ایئر، گلف ایئر، سعودی عریبین ایئرلائنز، ٹرکش ایئرلائنز اور کویت ایئرویز اپنے مرکزی ایئر پورٹس پر سٹاپ کے ساتھ پروازیں فراہم کرتی ہیں۔ اور ان ہوائی اڈوں پر قیام تین گھنٹے سے لے کر کئی گھنٹوں پر محیط ہوتا ہے۔

برطانیہ اور پاکستان کے درمیان دوطرفہ پروازوں کا معاہدہ موجود ہے جس کی موجودگی میں کسی اجازت نامے کی ضرورت نہیں اور برٹش ایئرویز تین سے زیادہ پروازیں بھی چلا سکتی ہے۔

یہ بھی پڑھیے

برٹش ایئرویز کا اسلام آباد کے لیے پروازیں بحال کرنے کا اعلان

سنگارپور سے نیویارک: دنیا کی طویل ترین نان سٹاپ پرواز

نو دنوں کا سفر 17 گھنٹوں میں سمٹ گیا!

برٹش ایئرویز کی واپسی کیسے ممکن ہوئی؟

تصویر کے کاپی رائٹ Sepia Times
Image caption اس دور میں اردن اور موجودہ اسرائیل سب ایک ملک فلسطین کہلاتا تھا جو ہوابازی کی ایک اہم گزرگاہ تھی۔ یہ پینڈلے پیج فلسطین میں گیللی کے سمندرے کے کنارے واقع قصبے سمخ میں رکا ہوا ہے۔

برٹش ایئرویز کی واپسی کے لیے کوششیں گذشتہ کئی برسوں سے جاری تھیں۔ مگر اس کی راہ میں دو رکاوٹیں حائل تھیں۔ ایک عملے کے قیام کے لیے راولپنڈی سے اسلام آباد کا سفر اور دوسرا ہوائی اڈے پر سہولیات کی عدم دستیابی۔

یاد رہے کہ پرواز کا دورانیہ طویل ہونے کے نتیجے میں ایئرلائن کے لیے یہ قانوناً لازمی ہے کہ وہ عملے کو اسلام آباد میں رکنے کے لیے سہولت فراہم کرے۔ یہ سہولت برٹش ایئرویز کے عملے کے لیے میریٹ ہوٹل میں فراہم کی جاتی تھی۔

سول ایوی ایشن کے ایک سابق سینیئر اہلکار کے مطابق ’میریٹ اسلام آباد میں قیام کے لیے راولپنڈی سے اسلام آباد کا سفر ایسا تھا جس پر برٹش ایئرویز کے عملے اور اہلکاروں کو شدید تحفظات تھے۔ اور اس وجہ وجہ سے کافی مسائل تھے۔‘

تاہم اس حوالے سے برطانیہ کے پاکستان میں ہائی کمشنر تھامس ڈریو اور پاکستان کے برطانیہ میں سابق ہائی کمشنر ابن عباس نے مل کر کام شروع کیا، جس میں سول ایوی ایشن اور ایوی ایشن ڈویژن نے معاونت کی۔

تصویر کے کاپی رائٹ John Moore
Image caption یہ تصویر 22 جولائی 2005 کی ہے جس میں برٹش ایئرویز کے طیارے میں مسافر سوار ہو رہے ہیں۔

پاکستان آمد سے قبل تھامس ڈریو نے لندن میں پاکستانی سفارت خانے کی جانب سے ایک عشائیے میں شرکت کی تھی جس میں شریک ایک پاکستانی سفارت کار نے بتایا ’انہوں نے کہا کہ پاکستان جا کر ان کی کوشش ہو گی کہ وہ دو چیزوں کا دوبارہ اجرا کر سکیں۔ ایک پاکستان میں انگلینڈ اور پاکستان کی کرکٹ سیریز اور دوسرا برٹش ایئرویز کی اسلام آباد واپسی۔‘

اس دوران حکومت پاکستان نے برطانیہ سے آنے والی برطانوی سابق سیکرٹری داخلہ ایمبر رڈ کو اسلام آباد کے نئے ہوائی اڈے کے افتتاح سے قبل 22 مارچ 2017 کو ہوائی اڈے کا دورہ بھی کرایا تھا جس کے بعد 7 نومبر کو برٹش ایئرویز کی سکیورٹی کی انتظامیہ نے ہوائی اڈے کا تفصیلی دورہ کیا۔ جس میں انہوں نے ہوائی اڈے اور اس سے اسلام آباد شہر آمد اور واپسی کے راستوں کا تفصیلی جائزہ لیا گیا تھا۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں