ناکافی سہولیات، خراب سڑکیں اور مہنگے دام: کیا ایسے بڑھے گی ملک میں سیاحت؟

سیاحت تصویر کے کاپی رائٹ Noman Shah

رواں برس عیدالفطر کے موقعے پر پاکستانی عوام نے تقریباً ایک ہفتے کی چھٹی منائی۔ منگل سے شروع ہونے والی تعطیلات کا اختتام اتوار کو ہوا اور ان چھ دنوں میں ہر برس کی طرح لاکھوں افراد نے تفریحی مقامات کا رخ بھی کیا۔

ان میں جہاں ایک بڑی تعداد ایسے لوگوں کی تھی جن کی منزل اُن کے شہر میں واقع تفریحی مقامات تھے وہیں ایسے افراد کی تعداد بھی کم نہ تھی جنھوں نے طویل چھٹی کو غنیمت جانتے ہوئے پُرفضا مقامات کا رخ کر لیا۔

لوگوں کے بڑی تعداد میں محدود مقامات کا رخ کرنے کا نتیجہ ٹریفک جام اور رہائش کے مقامات میں کمی کی صورت میں نکلا اور ہر برس کی طرح لوگوں کی بڑی تعداد نے رات اپنی گاڑیوں میں گزاریں۔ مگر جن خوش قسمت افراد کو رہائش ملی تو وہ بھی سونے کے دام پر تھی۔

یہ بھی پڑھیے!

شمالی علاقہ جات کیلیے اصلاحات

شمالی علاقہ جات تاریخ خطرے میں

کاغان کی طلسماتی جھیلوں کی رونقیں ماند

جب برف باری میں تفریح ایک بھیانک خواب بن گئی

تصویر کے کاپی رائٹ Noman Shah

عید کے موقع پر سیاحوں کی مقبول منزلوں میں جہاں پنجاب کے پرفضا پہاڑی مقام مری اور گلیات کے علاقے شامل تھے وہیں ایک بہت بڑی تعداد نے خیبر پختونخوا کے پہاڑی علاقوں کا بھی رخ کیا۔

نتیجہ یہ تھا کہ وہ مری ایکسپریس وے ہو، عید سے فوراً پہلے کھلنے والی سوات موٹر وے، پاکستان کے زیرِ انتظام کشمیر کے علاقے ہوں یا پھر شاہراہِ قراقرم ان تمام سڑکوں پر گاڑیوں کی طویل قطاریں لگنے لگیں اور منٹوں کا سفر گھنٹوں پر محیط ہوتا گیا۔ ایک بڑی تعداد کو اس سفر کے دوران ہی شب بسری کے لیے جگہ ڈھونڈنی پڑی۔

تفریحی مقامات کی صورتحال

اس برس عید کے موقعے پر خیبرپحتونخوا کی حکومت نے سیاحوں کی سہولت کے لیے خصوصی انتظامات کا دعویٰ کیا تھا اور حکومت کا کہنا ہے کہ اس برس 20 لاکھ افراد نے صوبے میں مختلف پرفضا مقامات کا رخ کیا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Twitter/@PTIofficial

سوات اس برس سیر و تفریح کے شوقین افراد میں اس لیے زیادہ مقبول رہا کیونکہ وہاں تک رسائی کے لیے سوات موٹر وے کو عید سے قبل کھول دیا گیا اور جس کا نتیجہ مالاکنڈ کی انتظامیہ کے مطابق تقریباً ڈیڑھ لاکھ گاڑیوں اور 10 لاکھ افراد کی آمد کی صورت میں نکلا۔

گلیات ڈویلپمنٹ اتھارٹی کے مطابق چار لاکھ سیاح گلیات کے علاقے میں آئے جبکہ کاغان ڈویلپمنٹ اتھارٹی کے مطابق وہاں آنے والے افراد کی تعداد دو لاکھ کے لگ بھگ تھی۔

تصویر کے کاپی رائٹ Twitter/@PTIofficial

ایس پی ٹریفک پولیس ایبٹ آباد اشتیاق خان کے مطابق عید کی چھٹیوں کے دوران روزانہ تقریباً ایک لاکھ گاڑی ایبٹ آباد کی حدود میں داخل ہوئی جس میں سے 20 ہزار کے قریب نے گلیات کا رخ کیا جبکہ بقیہ میں سے اکثریت کی منزل شمالی علاقہ جات تھی۔

مری ٹریفک پولیس کے مطابق ان چھٹیوں کے دوران 85 ہزار سے زیادہ گاڑیاں مری کی حدود میں داخل ہوئیں اور ان میں سے 60 ہزار گاڑیاں سیر و تفریح کے بعد راولپنڈی، اسلام آباد اور گلیات، ایبٹ آباد کی طرف واپس گئیں۔

ہوش ربا کرایے

تصویر کے کاپی رائٹ Shahuddin

پاکستان کے ان تفریحی مقامات پر سیاحوں کی تعداد کے تناسب سے رہائش گاہوں کی عدم موجودگی کا نتیجہ ایسے ہوش ربا کرایوں کی شکل میں برآمد ہوا جن کی ادائیگی متوسط طبقے سے تعلق رکھنے والے افراد کے بس کی بات نہ تھی۔

ناران اور کاغان کے درمیانے اور چھوٹے درجے کے ہوٹلوں کا کرایہ سات ہزار سے شروع ہو کر پہلے 15 ہزار اور عید کے دوسرے اور تیسرے دن 20 ہزار تک چلا گیا جبکہ بڑے ہوٹل اس دوران 15 ہزار سے لے کر 30 ہزار فی رات کرایہ لیتے رہے۔

یہاں تک کہ کیمپنگ کے لیے ٹینٹ اور جگہ کا کرایہ بھی تین ہزار سے لے کر دس ہزار روپے تک رہا۔

سوات سے مقامی ذرائع کے مطابق وہاں بھی درمیانے اور چھوٹے درجے کے ہوٹلوں اور گیسٹ ہاوسز کا عید کی چھٹیوں میں کرایہ چار ہزار سے لے کر چھ ہزار روپیہ تک رہا جبکہ بڑے اور لگژری ہوٹل یومیہ آٹھ ہزار سے 20 ہزار روپیہ تک کرایہ وصول کرتے رہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Shahuddin

مری اور گلیات کے علاقوں میں بھی صورتحال زیادہ مختلف نہ تھی اور چھوٹے اور درمیانے درجے کے ہوٹلوں اور گیسٹ ہاؤسز میں ایک رات قیام کا خرچ پانچ ہزار سے 15 ہزار جبکہ بڑے ہوٹلوں میں 15 سے 30 ہزار روپے تک رہا۔

تاہم ناران، کاغان، مری اور سوات کی ہوٹل ایسوسی ایشنوں کے مطابق عید کے موقع پر کسی کو بھی سیاحوں سے زیادہ رقم وصول کرنے کی اجازت نہیں تھی۔

مری و گلیات ہوٹل ایسوسی ایشن کے نائب صدر راجہ شہزاد کے مطابق مری و گلیات میں ایک ہزار کے لگ بھگ ہوٹل و گیسٹ ہاوسز موجود ہیں جو کہ تمام کے تمام بک تھے اور ان میں سنیچر کی شام تک رہائش کی گنجائش موجود نہیں تھی۔

تصویر کے کاپی رائٹ Shahuddin

ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ اس کے علاوہ مری و گلیات کے لوگوں نے ذاتی طور پر اپنے مکانات میں بھی سیاحوں کو بطور پے انگ گیسٹ رکھنے کا سلسلہ بھی شروع کر رکھا ہے اور اس وجہ سے آنے والے سیاحوں کو اس مرتبہ رہائش کا مسئلہ درپیش نہیں ہوا۔

عید کے موقع پر سیاحوں میں جہاں بڑی تعداد میں ایسے لوگ تھے جو ہوٹلوں یا گیسٹ ہاؤسز میں بکنگ کروا کر چلے تھے وہیں وہ نوجوان بھی تھے جو ایسے کسی انتظام کے بغیر نکل آئے تھے۔

ان افراد نے جہاں کھلی جگہ ملی وہاں پر عارضی ڈیرے ڈال لیے۔ لنڈی کوتل سے تعلق رکھنے والے ضمیر آفریدی ایسے ہی ایک گروپ کا حصہ تھے جو چاند رات کو ہی لنڈی کوتل سے ناران کی جانب چل پڑا تھا کیونکہ انھیں خدشہ تھا کہ اگر دیر کی تو یہ کھلی جگہ بھی نہیں مل سکے گی۔

تصویر کے کاپی رائٹ Shahuddin

ضمیر آفریدی کے مطابق ان کا یہ فیصلہ درست ثابت ہوا اور عید کے دو دنوں میں کاغان کی سیر کے بعد وہ اس وقت واپس روانہ ہو گئے جب سیاحوں کی بڑی تعداد نے وادی کاغان پہنچنا شروع کر دیا تھا۔

ناران، کاغان ہوٹل ایسوسی ایشن کے صدر مطیع الرحمان کے مطابق وادی کاغان اور بالاکوٹ کے تمام ہوٹل عید کے روز ہی سے مکمل بک تھے یہاں تک کہ کیمپنگ والے مقامات پر بھی رہائش دسیتاب نہیں تھی جس کے باعث وہاں پہنچنے والی اکثریت نے راتیں اپنی گاڑیوں ہی میں گزاریں۔

سیاحتی مقامات پر انفراسٹرکچر کا فقدان

تصویر کے کاپی رائٹ Noman Shah

پاکستان میں حالات کی بہتری کے بعد شمالی علاقہ جات میں سیاحت کے لیے آنے والے افراد کی تعداد میں ہر برس اضافہ ہوتا جا رہا ہے لیکن ان سیاحتی مقامات پر انفراسٹرکچر میں اس تیزی سے بہتری نہیں لائی جا رہی۔

خیبر پختونخوا میں ایبٹ آباد، مانسہرہ اور ہری پور جیسے شہر ناران، کاغان اور گلگت بلتستان جانے کے لیے گیٹ وے کی حیثیت رکھتے ہیں لیکن ان شہروں سے گزرنے والے سیاحوں کو آج بھی 1960 کی دہائی میں بنائی گئی یک رویہ سڑکوں سے ہی گزرنا پڑتا ہے اور نتیجہ گھنٹوں برقرار رہنے والے ٹریفک جام کی شکل میں نکلتا ہے۔

انڈس ایڈونچر کلب سے تعلق رکھنے والے ندیم اعوان کے مطابق 'ناران، کاغان یا گلگت بلتستان جانے لیے دن کے اوقات میں ایبٹ آباد، مانسہرہ سے گزرنا انتہائی تکلیف دہ بن جاتا ہے۔'

'کچھ سال پہلے تک ہم اپنے گروپوں کو ایبٹ آباد یا مانسہرہ میں ایک رات اور دن کے لیے ٹھہرایا کرتے تھے مگر اب ہم اپنا شیڈول ہی اس طرح ترتیب دیتے ہیں کہ رات کو یا علی الصبح ان علاقوں سے گزر جائیں تاکہ بدترین ٹریفک جام میں پھنس کر سیاح کوفت میں مبتلا نہ ہوں۔

تصویر کے کاپی رائٹ Shahuddin

ندیم اعوان کا کہنا ہے کہ انفراسٹرکچر کی عدم موجودگی ہی ایک بڑی وجہ ہے کہ سیاحوں کی بڑی تعداد چند مخصوص مقامات کا رخ کرتی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ 'ناران، کاغان، مری اور گلیات میں انفراسٹرکچر دیگر علاقوں کی نسبت بہتر ہے اور یہی وجہ ہے کہ عوام کا رخ ان ہی علاقوں کی طرف ہے مگر پاکستان اور اس کے زیرِ انتظام کشمیر میں بہت سے ایسے علاقے جیسے کہ ضلع دیر، کوہستان، وادی نیلم، لیپا اور کیل ہیں جو عام سیاحوں کی توجہ کا مرکز صرف اس لیے نہیں بن پاتے کیونکہ وہاں سہولیات دستیاب نہیں۔'

ندیم اعوان کے مطابق 'سیاحت ایک ایسا شعبہ ہے جس میں اگر حکومت صرف اچھا انفراسٹرکچر ہی فراہم کر دیے تو باقی شعبوں میں نجی شعبہ خود بخود سرمایہ کاری کر کے سہولتیں فراہم کر دیتا ہے۔'

یہ بھی پڑھیے!

'سیلفی کا جنون'، دو افراد دریائے کنہار میں ڈوب گئے

کاغان میں برف کا تودہ، ناران کا زمینی راستہ بند

سوات میں رواں سال آٹھ لاکھ سیاحوں کی آمد

ناران کاغان ہوٹل ایسوسی ایشن کے صدر مطیع الرحمن کے مطابق ناران و شوگران کے علاقوں میں صورتحال اس نہج پر پہنچ چکی ہے کہ وہاں مزید تعمیرات کی گنجائش ہی نہیں مگر سیاح ہر سال بڑھتے ہی جا رہے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ Noman Shah

'اب ایسا نہیں ہے کہ وادی کاغان میں صرف ناران اور شوگران ہی خوبصورت وادیاں ہیں۔ یہ علاقہ ناران اور شوگران جیسی وادیوں سے بھرا ہوا ہے مگر وہاں تک انفراسٹرکچر نہ ہونے کی بنا پر سیاحوں کی رسائی انتہائی کم ہے۔ اگر وہاں پر مناسب انفراسٹرکچر تعمیر کر دیا جائے تو اس سے سیاحت میں مزید اضافہ ہو سکتا ہے۔'

گلگت بلتستان میں سیاحوں میں کمی

تصویر کے کاپی رائٹ Shahuddin

جہاں پاکستان کے دیگر تفریحی اور پرفضا مقامات پر عید کے دوران رش میں اضافہ دیکھا گیا وہیں گلگت بلتستان میں صورتحال توقعات کے برعکس رہی۔

گلگت، ہنزہ ہوٹل ایسوسی ایشن کی ایگزیکٹو کمیٹی کے رکن راجہ حسین کے مطابق گزشتہ سالوں کے مقابلے میں گلگت و ہنزہ میں 60 فیصد کم سیاح پہنچے اور یہاں موجود ایک ہزار کے قریب ہوٹلوں اور گیسٹ ہاؤسز میں سے ماسوائے چند لگژری ہوٹلوں کے فل بکنگ والی صورتحال نہیں تھی۔

راجہ حسین کے مطابق اس کمی کی بنیادی وجہ باآسانی رسائی نہ ہونا ہے۔ ان کے مطابق ہر سال جون کے پہلے ہفتے میں ناران مانسہرہ سے بابوسر ٹاپ روڈ کو ٹریفک کے لیے کھول دیا جاتا ہے جہاں سے سیاح سہولت کے ساتھ گلگت و ہنزہ پہنچ جاتے تھے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Rashid Awan

مگر اس سال ابھی تک بابوسر ٹاپ روڈ نہیں کھولی گئی جبکہ دوسری جانب شاہراہ قراقرم پر کئی مقامات پر سی پیک اور داسو ڈیم کی وجہ سے تعمیراتی کام شروع ہے جہاں ٹریفک کئی گھنٹوں کے لیے بند کر دی جاتی ہے۔

جبکہ پی آئی اے کے کرایوں میں اضافے کی وجہ سے بھی سیاحوں کے لیے گلگت اور ہنزہ آنا آسان نہیں رہا۔ راجہ حسین کا کہنا تھا کہ اسلام آباد سے ہنزہ کے لیے فضائی سفر کا کرایہ جو گذشتہ سال آٹھ سے دس ہزار تک تھا اس سال 30 ہزار تک پہنچ چکا ہے۔

یہ بھی پڑھیے!

ٹراؤٹ، سوات کی مشہور سوغات

سوات میں پہلی بار خواتین کے لیے ثقافتی میلہ

گلگت بلتستان میں خوراک کا بحران

لاہور سے اپنے خاندان کے ہمراہ ہنزہ پہچنے والے چوہدری فیصل کا کہنا تھا کہ وہ ہر سال عید ہی کی چھٹیوں میں ہنزہ اور گلگت پہنچ کر تفریح کرتے ہیں مگر اس سال بابو سر ٹاپ روڈ بند ہونے کی وجہ سے جتنی مشکل ہوئی وہ ناقابلِ بیان ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Rashid Awan

'بشام سے چلاس تک سڑک خراب ہونے کی وجہ سے 13 گھنٹے لگے۔ اس دوران گاڑی کو بھی نقصاں پہنچا جبکہ سارا راستہ اس طرح سنسان تھا جس طرح جنگل میں سفر کررہے ہوں۔'

کراچی سے ہنزہ آنے والے رحمان کا کہنا تھا کہ 'جب ہم اسلام آباد سے شاہراہ قراقرم پر سفر کر رہے تھے تو ہمیں لگا کہ ہم نے دنیا کی سب سے بڑی غلطی کر لی ہے اور اب واپسی کے سفر سے خوف آ رہا ہے۔'

صوبہ خیبر پختونخوا کے حکومتی ذرائع کے مطابق علاقے میں سردیوں کے سیزن میں زیادہ برفباری کی وجہ سے بابوسر ٹاپ روڈ سے برف ہٹانا ممکن نہیں ہو سکا تھا تاہم چند دونوں میں اس پر کام شروع کر دیا جائے گا۔

اسی بارے میں