جعلی بینک اکاؤنٹس کیس: پاکستان کے سابق صدر اور پاکستان پیپلز پارٹی کے شریک چیئرمین آصف علی زرداری کو کن الزامات کا سامنا ہے؟

پاکستان تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

اسلام آباد ہائی کورٹ کی طرف سے سابق صدر آصف زرداری کے خلاف جعلی بینک اکاؤنٹس کیس میں درخواست ضمانت مسترد ہونے کے بعد قومی احتساب بیورو نے انھیں گرفتار کرلیا ہے۔

نیب نے اسلام آباد کی ایک احتساب عدالت میں اس حوالے سے عبوری ریفرینس بھی دائر کر رکھا ہے۔ آصف زرداری کا نام صرف ایک ریفرنس میں بینیفشری کے طور پر سامنے آیا ہے تاہم ٹرائل کورٹ نے ابتدائی سماعتوں کے باوجود ابھی تک ان پر فرد جرم عائد نہیں کی ہے۔

زرداری پر الزامات ہیں کیا؟

منی لانڈرنگ کیس 2015 میں پہلی دفعہ اُس وقت سامنے آیا جب مرکزی بینک کی جانب سے وفاقی تحقیقاتی ادارے (ایف آئی اے) کو مشکوک ترسیلات کی رپورٹ یعنی ایس ٹی آرز بھیجی گئیں۔ ایف آئی اے نے ایک اکاؤنٹ سے جو اے ون انٹرنیشل کے نام سے موجود تھا، مشکوک منتقلی کا مقدمہ درج کیا جس کے بعد کئی جعلی اکاؤنٹس سامنے آئے۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ اس مقدمے کی ایف آئی آر میں آصف زرداری کا نام شامل نہیں ہے۔

یہ بھی پڑھیے

نیب نے آصف علی زرداری کو گرفتار کر لیا

بےنامی کھاتے اور اکاؤنٹ ہوتے کیا ہیں؟

جعلی اکاؤنٹس سے اربوں روپے کس کس کو منتقل ہوئے؟

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption آصف زرداری کی گرفتاری کے بعد بلاول بھٹو کو قومی اسمبلی میں تقریر کی اجازت نہیں مل سکی

تاہم سپریم کورٹ کے حکم پر بننے والی مشترکہ تحقیقاتی ٹیم نے سابق صدر آصف علی زرداری اور اومنی گروپ کو مبینہ طور پر جعلی اکاؤنٹس کے ذریعے فوائد حاصل کرنے کا ذمہ دار قرار دیا اور ان کے نام ای سی ایل میں ڈالنے کی سفارش بھی کر دی۔

جے آئی ٹی کے بعد ایک بار پھر سپریم کورٹ کے حکم پر نیب نے اس مقدمے کی دو ماہ تک تفتیش کی جس میں آصف زرداری اپنے بیٹے اور پاکستان پیپلز پارٹی کے چئیرمین بلاول بھٹو سمیت تفیشی افسران کے سامنے پیش ہوئے۔

آصف زرداری نے تفتیشی ٹیم کے سامنے موقف اختیار کیا کہ 2008 سے وہ کسی کاروباری سرگرمی میں شامل نہیں رہے اور صدر مملکت کا عہدہ سنبھالنے کے بعد انہوں نے خود کو تمام کاروبار اور تجارتی سرگرمیوں سے الگ کرلیا تھا۔

اس کے برعکس اسلام آباد ہائی کورٹ میں نیب کی طرف سے جمع کرائی گئی رپورٹ کے مطابق جعلی بینک اکاؤنٹس سے متعلق انکوائریز سپریم کورٹ کے حکم پر شروع کی گئیں اور پانچ انکوائریز اور تین انویسٹی گیشنز میں مبینہ طور پر آصف زرداری کا کردار سامنے آیا ہے۔

ایڈیشنل پراسیکیوٹر جنرل نیب جہانزیب بھروانہ نے اسلام آباد ہائی کورٹ کو بتایا کہ ’یہ ساڑھے 4 ارب روپے کی ٹرانزیکشن کا معاملہ ہے، اس حوالے سے تمام فہرست مہیا کر دی گئی ہے کہ کتنی رقم اکاؤنٹ میں آئی اور کتنی استعمال ہوئی۔ اے ون انٹرنیشنل اور عمیر ایسوسی ایٹس سے اربوں روپے کی ٹرانزیکشن ہوئی، ان اکاؤنٹس کے ساتھ زرداری گروپ اور پارتھینون کمپنیوں کی ٹرانزیکشن ہوئی۔‘

نیب رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ آصف زرداری کے اب تک صرف ایک کیس میں وارنٹ گرفتاری جاری کیے گئے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption جعلی بینک اکاؤنٹس کیس میں آصف زرداری اور بلاول بھٹو نیب کے سامنے پیش ہوئے

نیب کے مطابق ایف آئی اے نے حسین لوائی اور ان کے ساتھی طلحہ رضا کو گذشتہ برس گرفتار کیا۔ ان پر 29 جعلی بینک اکاؤنٹس کھولنے میں معاونت کرنے کا الزام ہے، جن کے ذریعے مبینہ طور پر آصف زرداری سمیت 13 کمپنیوں کو اربوں روپوں کی مشکوک منتقلی کی گئی۔

زرداری کے اکاؤنٹس میں مبینہ طور پر مشکوک منتقلی کی تفصیلات

ایف آئی اے کے مطابق دس ماہ کی قلیل مدت میں مبینہ طور پر ساڑھے چار ارب روپے اس اکاؤنٹ میں جمع ہوئے اور دیگر اکاؤنٹس میں ان کی منتقلی کی گئی۔ ان میں بحریہ ٹاؤن کے ملک ریاض کے داماد زین ملک کا نام بھی سامنے آیا جنھوں نے مبینہ طور پر 75 کروڑ کی رقم مشکوک اکاؤنٹس میں منتقل کی۔ نیب کی رپورٹ میں مزید رقم جمع کرانے والوں کے نام بھی شامل ہیں جو کراچی کی بینکنگ کورٹ سے اب اسلام آباد کی احتساب عدالت کے سامنے پیش ہو رہے ہیں۔

انور مجید کے مبینہ جعلی اکاونٹس

ایف آئی اے نے اپنی تحقیقات میں 4 ارب 14 کروڑ کی مزید مشکوک منتقلی کی نشاندہی کی ہے، جس سے مبینہ طور پر مستفید ہونے والوں میں متحدہ عرب امارات کے نصیر عبداللہ لوطہ گروپ کے سربراہ، آصف علی زرداری اور ان کی بہن فریال تالپور کا گروپ اور آصف زرداری کے قریبی دوست انور مجید شامل ہیں۔

ایف آئی اے کی جانب سے دائر کی گئی ایف آئی آر کے مطابق زرداری گروپ کو جس کے مالک آصف زرداری اور ان کی بہن فریال تالپور اور دیگر ہیں، ایک کروڑ کی منتقلی ہوئی۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption ضمانت کی درخواست مسترد ہونے پر نیب نے آصف زرداری کو گرفتار کرلیا

قرضے اور کک بیکس کے الزامات

سندھ میں 2017 میں گنے کے کاشتکاروں اور شوگر مل مالکان میں کشیدگی کے وقت بھی انور مجید کا نام سامنے آیا تھا۔ سندھ میں شوگر ملز کی اکثریت کے مالک انور مجید ہیں جبکہ آصف علی زرداری کا گروپ بھی بعض ملز کا مالک ہے۔ کاشتکاروں کا الزام تھا کہ حکومت مل مالکان کو فائدہ پہنچا رہی ہے اور پیپلز پارٹی کی حکومت نے جب صنعتوں کو مالی مراعات فراہم کیں تو 50 فیصد صنعتیں جعلی بینک اکاؤنٹس مقدمے کے اہم ملزم انور مجید کی تھیں۔

پارک لین کیس کیا ہے؟

نیب کا دعویٰ ہے کہ ادارے نے آصف زرداری اور بلاول کے خلاف انکوائری الزامات کی بنیاد پر شروع کی جن میں کہا گیا کہ پنجاب فورسٹ لینڈ کی زمین کو سی ڈی اے نے غیر قانونی طور پر پارک لین اسٹیٹ کو ٹرانسفر کیا۔ پارک لین اسٹیٹ پرائیوٹ لمیٹڈ کراچی کی ایک ریئل سٹیٹ کمپنی ہے جو آصف زرداری اور بلاول بھٹو زرداری کے نام پر ہے۔

اس کیس میں سابق صدر اور بلاول بھٹو نیب کے سامنے تفتیش کے لیے پیش ہوچکے ہیں۔ اس کمپنی کے بارے میں آصف زرداری کے وکیل کہتے ہیں کہ یہ کمپنی انھوں نے 31جولائی 1989 میں خریدی تھی۔ آصف زرداری کی طرف سے موجود وکیل لطیف کھوسہ نے بتایا کہ بلاول کا اس کیس سے براہِ راست کوئی تعلق اس لیے نہیں بنتا کیونکہ جب یہ کمپنی وجود میں آئی تو اس وقت بلاول کی عمر ایک سال تھی۔

آصف زرداری کے وکیل نے بتایا کہ وہ کمپنی کے عہدے سے 2008 میں دستبردار ہوگئے تھے اور بلاول کا اس کمپنی کے روزمرہ معاملات سے نہ کوئی تعلق تھا اور نہ ہی اب ہے۔

اسی بارے میں