امریکہ کا ایف 16 طیاروں کے لیے پاکستان کی تکنیکی مدد کا اعلان

پاکستانی ایف 16 طیارہ تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

جمعے کو امریکی محکمہ خارجہ نے پاکستان کو ایف 16 جنگی جہازوں کی دیکھ بھال کے لیے 12 کروڑ 50 لاکھ ڈالر دینے کی منظوری کا اعلان کیا ہے۔

امریکی محکمہ دفاع کے سلامتی تعاون کے ادارے ’سکیورٹی کوآپریشن ایجنسی‘ کی جانب سے جاری بیان میں بتایا گیا ہے کہ حکومت پاکستان نے امریکہ سے تکنیکی تعاون جاری رکھنے کی درخواست کی تھی۔

بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ ’یہ مجوزہ فروخت امریکی قومی سلامتی اور خارجہ پالیسی کو سپورٹ فراہم کرے گی کیونکہ اس سے امریکی عملہ مسلسل 24 گھنٹے امریکی ٹیکنالوجی کی نگرانی کر سکے گا۔‘

یہ بھی پڑھیے

ایف 16 کی خریداری، امریکہ کا پاکستان کی مدد سے انکار

جمہوری اور فوجی ادوار اور امریکی امداد

’ٹرمپ انتظامیہ کا فیصلہ پاکستان کے حق میں ہو گا‘

بیان میں یہ بھی کہا گیا کہ یہ مجوزہ فروخت خطے میں بنیادی عسکری توازن کو نہیں بدلے گی۔

ایک الگ بیان میں سکیورٹی کوآپریشن ایجنسی نے انڈیا کو 67 کروڑ کی عسکری فروخت کی منظوری کا اعلان بھی کیا ہے۔

امریکہ کی طرف سے یہ اعلان پاکستانی وزیر اعظم عمران خان کے حالیہ دورہ امریکہ کے کچھ دنوں بعد ہی آیا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

واضح رہے کہ گزشتہ سال خبر رساں ادارے روئٹرز کے مطابق امریکی صدر ٹرمپ کی انتظامیہ نے 90 کروڑ ڈالر کی سکیورٹی معاونت معطل کر دی تھی۔ امریکہ نے اس کی وجہ حقانی نیٹ ورک اور افغان طالبان کے خلاف پاکستان کی غیر تسلی بخش کارروائی کو قرار دیا تھا۔

سنہ 2016 میں اوباما انتظامیہ اور پاکستان کے درمیان آٹھ ایف 16 طیاروں کی خریداری کے معاہدے کی بات چیت شروع ہوئی تھی جس پر انڈیا نے امریکی حکومت سے تشویش کا اظہار بھی کیا تھا۔

بعد میں فروخت کا یہ معاملہ جب امریکی کانگریس تک پہنچا تو امریکی حکومت کو اس کے خلاف شدید مخالفت کا سامنا کرنا پڑا تھا۔

امریکی کانگریس نے ایف 16 طیاروں کی فروخت پر تو رضامندی ظاہر کی تھی لیکن مالی امداد منظور نہیں ہو سکی تھی جس کے بعد یہ ڈیل رک گئی تھی۔

اسی بارے میں