کراچی میں مون سون کی بارشیں: پانی سڑکوں پر اور ندی نالوں میں کیوں رک جاتا ہے؟

اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں
کراچی میں ندی نالے مکمل طور پر کچرے سے بھر چکے ہیں اس لیے پانی کہیں نہیں جاتا اور محلوں اور سڑکوں میں کھڑا رہتا ہے

لیاری ندی پر تین ہٹی پل کے مقام پر سینکڑوں گھرانے اس وقت لیاری ایکسپریس وے کی نیچے چارپایاں، چادریں اور ریڑھے لگا کر بیٹھے ہوئے ہیں۔

ان لوگوں کے گھر ندی کے کنارے کے ساتھ واقع بستی میں تھے جو شہر میں گذشتہ دو دنوں کے دوران ہونے والی بارشوں کے بعد مکمل طور پر زیر آب ہے۔

نندا کماری کا کہنا تھا کہ جب بھی ندی میں بہاؤ آتا ہے ان کا سارا سامان ڈوب جاتا ہے، جھگیاں تک چلی جاتی ہیں اور انھیں کسی قسم کا کوئی معاوضہ نہیں ملتا۔ ’بارش ہمیں بے گھر کردیتی ہے۔ جوان بیٹیاں سڑک پر بیٹھی ہیں کوئی بھی داد فریاد نہیں سنتا۔‘

یہ بھی پڑھیے

شدید موسم سے 49 ہلاکتیں، فصل کا نقصان

تجاوزات اور قبضے، نتیجہ کراچی زیر آب

کراچی: جب شہر ڈوب رہا ہو تو شہری کیا کریں

بلوچستان شدید بارش اور برفباری کی زد میں

سکڑتی ہوئی لیاری ندی

کراچی کے وسط میں موجود لیاری ندی پہلے صرف برساتی پانی کی نکاسی کا ذریعہ تھی لیکن اب کئی کچی بستیاں اس کی گود میں پل رہی ہیں۔ یہ غریب لوگ ہیں جو محنت مزدوری سے اپنا پیٹ پالتے ہیں۔

Image caption کراچی کے وسط میں موجود لیاری ندی پہلے صرف برساتی پانی کی نکاسی کا ذریعہ تھی

لیاری ندی کھیرتھر کے پہاڑی سلسلے سے نکلتی ہے اور اس کا اختتام سمندر میں ہوتا ہے۔

تیہاتی کے مقامی رہائشی عبدالرشید بلوچ نے بی بی سی کو بتایا کہ لیاری ندی کا پانی پہلے صاف تھا جس پر کاشت ہوتی تھی اور اس میں کئی ماہ تک پانی بھی موجود رہتا تھا۔

ان کا یہ بھی کہنا تھا بعد میں اس میں سیوریج کا پانی شامل کر دیا گیا اور لوگوں نے گھر بنانا شروع کر دیے جس سے ندی کے بہاؤ میں رکاوٹ آتی گئی۔

برساتی نالوں پر قبضے

کراچی شہر میں اورنگی نالے، شیر شاہ نالے، گجر نالے اور نہر خیام سمیت 41 بڑے نالے ہیں جن کی نکاسی لیاری ندی اور ملیر ندی سمیت سمندر میں ہوتی ہے۔

ایک طرف پہاڑوں سے آنے والا بارش کا پانی دوسری طرف آبادی اور شہری برساتی پانی دونوں ندیوں میں طغیانی کا سبب بنتا ہے۔

عدالتی کمیشن کے حکم پر شہر میں سیوریج اور برساتی نالوں سے تجاویزات ہٹائی گئی ہیں اور صرف گجر نالے سے ہی 14 ہزار تجاوزات منہدم کی گئی ہیں۔

بارش کے دوران بھی موسیٰ کالونی میں دو مشینوں کی مدد سے گجر نالے سے کچرا نکالا جا رہا ہے۔ یہ کچرا کئی میلوں تک پھیلا ہوا ہے جس نے پانی کے بہاؤ کو روک رکھا ہے۔

عبدالجلیل کا گھر گجر نالے کے ساتھ ہے اور گذشتہ بارش میں ان کے گھر میں پانی داخل ہو گیا تھا۔

ان کا کہنا تھا کہ اگر بلدیہ صفائی نہیں کرے گی تو پانی گھروں میں ہی داخل ہو گا جس سے ہمیشہ کافی نقصان ہوتا ہے۔ ان کے گھر میں دو مرتبہ پانی داخل ہو چکا ہے جس سے انھیں تقریباً ایک لاکھ روپے کا نقصان ہوا۔

’بلدیہ والے گزشتہ روز سے صفائی کر رہے ہیں، بارش آتی ہے تو یہ کچرا بہہ جاتا ہے ورنہ یہ سوکھ کر اس قدر سخت ہو جاتا ہے کہ کوئی بندہ اس پر چل بھی سکتا ہے۔‘

نالوں کو بحال کریں

شہری منصوبہ بندی کی ماہر یاسمین لاری کا کہنا ہے کہ شہر بہت پھیل گیا ہے، اس کے لیے جو انفراسٹرکچر چاہیے تھا اس کو توسیع نہیں دی گئی۔

ان کا کہنا تھا کہ برساتی نالے بند کر دیے گئے اور ان پر تجاوزات آ گئیں، اب وہ صاف نہیں ہو رہے جس سے پانی کا بہاؤ متاثر ہوتا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption کئی بستیاں پانی میں ڈوب چکی ہیں اور رہائشیوں کو بہت مسائل کا سامنا ہے

کراچی کے شہری امور پر دسترس رکھنے والے ماہر عارف حسن اپنے تحقیقی مقالے میں کہتے ہیں کہ کراچی میں نکاسی کا ایک فطری راستہ ہونا چاہیے جس کے لیے منصوبہ بندی کی ضرورت ہے۔

’یہ تبھی ممکن ہے جب ہزاروں کلومیٹر کی ڈرینج لائن بچھائیں اور پمپنگ سٹیشنوں سے سمندر تک لے جائیں، لیکن یہ مالی اور فزیکل طور پر ممکن نہیں، لہذا نالوں سے ریت ، مٹی اور گندگی نکالی جائے اور ان کی چوڑائی کو بحال کیا جائے اور سمندر میں پھینکنے سے پہلے اسے ٹریٹمنٹ پلانٹ سے گزارا جائے۔‘

سڑکوں سے پانی کی نکاسی

کراچی میں دو روز میں محکمہ موسمیات کے مطابق 100 ملی میٹرسے زیادہ بارش ریکارڈ کی گئی جبکہ پہلے روز ہی شاہراہ فیصل، ایم اے جناح روڈ، ناظم آباد، کورنگی روڈ سمیت سڑکوں پر پانی جمع ہو گیا اور ٹریفک کی روانی متاثر ہوئی۔

کراچی کے میئر وسیم اختر کا کہنا ہے کہ کراچی کے انفراسٹرکچر میں گنجائش ہی نہیں ہے۔

’یہ سڑکوں پر جو پانی نظر آرہا ہے اس کی نکاسی ہو ہی نہیں رہی۔ ساری سیوریج لائن بند ہو چکی ہے، جو چھوٹے نالے ہیں وہ کچرے سے بلاک ہیں اور یہ ہی وجہ ہے کہ سڑکوں پر پانی نظر آرہا ہے۔‘

عارف حسن کہتے ہیں شہر کی مرکزی شاہراؤ ں پر بھی پانی کی نکاسی کا کوئی معقول بندوست نہیں اور جب وہاں پانی جمع ہو جاتا ہے تو یہ سڑکیں ٹوٹ پھوٹ کا شکار ہو جاتی ہیں۔

’سڑکوں کا ڈیزائن اس طرح ہونا چاہیے کہ پانی کا نکاس ٹریفک کی روانی کو متاثر کیے بغیر ہو جائے۔ کچھ ایسی جگہیں مختص ہوں جہاں برساتی پانی کی نکاسی ہو۔‘

یاسمین لاری کا کہنا ہے کہ اربن ڈیزائن کی ضرورت ہے، جو پانی سڑک میں جذب ہونا چاہیے وہ بہہ رہا ہے، اگر فٹ پاتھ نیچے ہوں اور ان پر سبزہ ہو تو پانی اس میں چلا جائیگا۔

کنٹونمنٹ بورڈز کی کارکردگی

کراچی میں بلدیاتی نظام کے علاوہ کلفٹن، کراچی، فیصل، کورنگی، ملیر اور منوڑہ کے نام سے کنٹونمنٹ بورڈز، ڈیفینس ہاؤسنگ اتھارٹی اور کراچی پورٹ ٹرسٹ جیسے ادارے بھی موجود ہیں جو اپنے نظام خود چلاتے ہیں اور ان کا اپنے سینیٹری سٹاف ہے۔

برسات کے دنوں میں ان اداروں کی جانب سے اخبارات میں صرف اشتہارات آتے ہیں کہ شکایتی مراکز قائم کیے گئے ہیں۔

کراچی کے میئر وسیم اختر کا کہنا ہے کہ کنٹونمنٹ بورڈز کوئی کام نہیں کر رہے، ان کا بہت برا حال ہے۔ ’ان کے پاس پانی کی نکاسی کی چالیس مشینیں ہیں جو کہیں نطر نہیں آئیں۔ اس طرح ڈیفینس ہاؤسنگ اتھارٹی کا بھی برا حال ہے۔‘

بلدیاتی اختیارات کا تنازع

Image caption سندھ حکومت پاکستان پیپلز پارٹی کی ہے جبکہ میئر وسیم اختر کا تعلق متحدہ قومی موومنٹ سے ہے

سندھ حکومت پاکستان پیپلز پارٹی کی ہے جبکہ میئر وسیم اختر کا تعلق متحدہ قومی موومنٹ سے ہے۔ وہ اختیارات اور وسائل نہ ہونے کی شکایت کرتے ہیں۔ ان کا مطالبہ ہے کہ کراچی واٹر بورڈ اور بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی کو ان کے حوالے کیا جائے۔

سپریم کورٹ کے حکم پر بنائے گئے واٹر کمیشن کی ہدایت پر بلدیہ نے شہر کے 38 بڑے نالوں کی صفائی کا کام کیا اور ہزاروں ٹن کچرا نکال کر ان نالوں کو صاف کیا تاہم بعد ازاں برساتی نالے دوبارہ کچرے سے بھر گئے۔

کراچی کے میئر وسیم اختر کا کہنا ہے کہ وہ گذشتہ تین برس سے کہہ رہے ہیں کہ کچرے کی تلفی کا نظام بہتر بنایا جائے۔ ’سالڈ ویسٹ ان نالوں میں آجاتا ہے جس کو اٹھانے کی ذمہ داری سندھ سالڈ ویسٹ بورڈ کی ہے۔‘

یاد رہے کہ حکومت سندھ نے سالڈ ویسٹ اٹھانے کے لیے ایک آزاد ادارہ تشکیل دیا تھا جس نے ایک چینی کمپنی اور چند نجی کمپنیوں کے مدد سے کچرا اٹھانا تھا لیکن یہ ادارہ کامیاب نہیں ہو سکا جس کا اعتراف وزیر بلدیات سعید غنی بھی کرچکے ہیں۔

صوبائی حکومت کا کہنا ہے کہ برساتی نالوں کی صفائی بلدیاتی اداروں کی ذمہ داری ہے جس کے لیے انھیں فنڈز بھی جاری کیے گئے تھے۔

Image caption کچی بستیاں لیاری ندی کی گود میں پل رہی ہیں اور یہاں رہنے والے غریب لوگ ہیں جو محنت مزدوری سے اپنا پیٹ پالتے ہیں

ناقص منصوبہ بندی

کراچی میں حالیہ بارشوں سے جہاں وسطی شہر متاثر ہوا وہاں سپر ہائی وے پر واقع آبادیاں بھی زیر آب آ گئیں۔ وزیراعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ کو بتایا گیا ہے کہ نادرن بائی پاس بناتے وقت اس کو مطلوبہ ’کل ورٹس‘ یعنی زیرِ سڑک نالیاں نہیں دی گئیں جس سے پانی کا قدرتی بہاؤ متاثر ہوا اور بیشتر علاقے زیر آب آگئے۔

وزیراعلیٰ نے کراچی پیکج کے سربراہ نیاز سومرو کو ہدایت کی ہے کہ نئے واٹر ویوز یا کل ورٹس بنانے کے لیے سٹڈی کر کے رپورٹ پیش کی جائے۔

کراچی میں کلفٹن، میٹرو ویل، بسم اللہ کالونی سمیت مختلف جہگوں پر سیوریج پمپنگ سسٹیشنز موجود ہیں جن کی مدد سے معمول کے سیویراج اور برساتی پانی کی نکاسی کی جاتی ہے۔ وزیر اعلیٰ کا کہنا ہے کہ بجلی کے تعطل کی وجہ سے پانی کی پمپنگ میں مسئلہ ہو رہا ہے۔

اسی بارے میں