پنجاب پولیس نے تھانوں میں موبائل، سمارٹ فون کے استعمال پر پابندی عائد کر دی

پنجاب پولیس تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

پاکستان کے صوبہ پنجاب میں پولیس کی جانب سے تھانوں میں موبائل فون کے استعمال پر مکمل پابندی عائد کر دی گئی ہے۔

صوبائی اے آئی جی آپریشنز کی طرف سے پیر کو جاری ہونے والے نوٹیفیکیشن میں نشاندہی کی گئی ہے کہ ہدایات کے باوجود پولیس اہلکاروں کو موبائل فون استعمال کرتے پایا گیا ہے۔

نوٹیفیکیشن میں پنجاب کے تمام سٹی پولیس افسران کو مخاطب کرتے ہوئے کہا گیا کہ ایس ایچ او یا انچارج سے نیچے کوئی بھی پولیس افسر ڈیوٹی پر اپنا موبائل استعمال نہیں کرے گا۔

یہ قدم ایک ایسے وقت پر اٹھایا گیا ہے کہ جب حال ہی میں مبینہ پولیس تشدد کے کچھ کیس سامنے آئے ہیں جن میں کم از کم دو افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔

نوٹس میں کہا گیا ہے کہ ’ڈیوٹی پر کسی بھی افسر کی ویڈیو بنانا اور اسے اپ لوڈ کرنا منع ہے۔ کسی بھی خلاف ورزی پر نہ صرف ملوث اہلکار بلکہ سربراہ افسر کے خلاف ڈیپارٹمنٹل ایکشن لیا جا سکتا ہے۔‘

یہ بھی پڑھیے

پھوپھی کو شادی سے نکالنے کے لیے بھتیجے نے پولیس بلا لی

45 لڑکیوں کے ریپ میں ملوث جوڑا گرفتار: پولیس کا دعویٰ

پولیس کی جلی ہوئی گاڑیاں، اہلکاروں کے جھولے

تصویر کے کاپی رائٹ Punjab Police

ویڈیو والے فون پر پابندی

اسی سلسلے میں پیر کے روز راولپنڈی کے سٹی پولیس افسر کی طرف سے جاری ہونے والے ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ صرف تھانے کے ایس ایچ او اور محرر کے پاس ٹچ موبائل یا سمارٹ فون ہو گا۔

حکم میں مزید کہا گیا کہ تھانے میں آنے والے کسی بھی شخص کے پاس ایسا فون نہ ہو جس میں ویڈیو بنانے کی سہولت موجود ہے۔

بیان میں واضح طور پر کہا گیا ہے کہ کوئی بھی تفتیشی افسر یا دوسرا پولیس اہلکار تھانے کی حدود میں ویڈیو بنانے والا موبائل یا سمارٹ فون استمعال نہیں کر سکے گا۔

تاہم پولیس کے محمکہ اطلاعات عامہ کی جانب سے یہ وضاحت بھی سامنے آئی ہے کہ تھانوں میں موبائل فون کے استعمال پر پابندی سے ڈی ایس پی، انچارج انوسٹیگیشن اور ایس ایچ او کو استثنی حاصل ہوگا جبکہ عام شہری کے موبائل فون سمیت تھانے میں داخلے پر پابندی کا فیصلہ متعلقہ تھانہ کرے گا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Punjab Police

اس بیان میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ اگر کوئی شخص تھانے میں کسی مقدمے کے سلسلے میں آتا ہے تو تھانے کے مرکزی دروازے پر ہی اس شخص کے زیرِ استعمال موبائل فون کو تحویل میں لے لیا جائے گا اور ان کی واپسی پر یہ موبائل واپس کر دیا جائے گا۔

سٹی پولیس افسر کے دفتر میں کام کرنے والے ایک اہلکار نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بی بی سی کو بتایا کہ اتوار کو آئی جی پنجاب کے دفتر سے یہ حکم ملا تھا جس پر فوری طور پر عمل درآمد کرتے ہوئے موبائل فون کے استعمال پر پابندی عائد کی گئی ہے۔

اس ضمن میں جب آئی جی پنجاب کے پبلک ریلیشنز ڈیپارٹمنٹ سے رابطہ کیا گیا تو اُنھوں نے اس بارے میں کسی ردعمل کا اظہار نہیں ہے۔

سی پی او راولپنڈی کی طرف سے جاری ہونے والے بیان میں تمام تھانوں کے انچارج کو یہ بھی حکم دیا گیا ہے کہ کسی بھی شخص کو غیر قانونی حراست میں نہ رکھا جائے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption راولپنڈی میں کوئی بھی تفتیشی افسر یا دوسرا پولیس اہلکار تھانے کی حدود میں ویڈیو بنانے والا موبائل یا سمارٹ فون استمعال نہیں کر سکے گا

راولپنڈی پولیس کے حکام نے دعویٰ کیا کہ یہ اقدام حالیہ چند روز قبل پنجاب پولیس کے اہلکاروں کے ہاتھوں مبینہ تشدد سے چند افراد کی ہلاکت کی ویڈیو منظر عام پر آنے کے بعد اُٹھایا گیا ہے۔

انھوں نے مزید بتایا کہ اس بات کے شواہد بھی ملے ہیں کہ تفتیشی اہلکاروں کی طرف سے کسی بھی ملزم کو تشدد کا نشانہ بنانے کی ویڈیو میں زیادہ کردار ایسے پولیس اہلکاروں کا ہوتا ہے جن کا اس تفتیشی افسر سے کوئی دشمنی ہوتی ہے۔

اس پابندی کے حوالے سے آئی جی پنجاب عارف نواز نے بی بی سی کو بتایا کہ یہ اقدام محمکہ پولیس کی کارکردگی کے پیش نظر اٹھایا گیا ہے۔’عموماً یہ دیکھنے میں آ رہا تھا کہ دوران ڈیوٹی پولیس اہلکار فون کے استعمال میں مصروف نظر آتے تھے جس کے باعث وہ اپنی ڈیوٹی صحیح طریقے سے سرانجام نہیں دے پا رہے تھے۔‘

آئی جی پنجاب نے اس بات کی بھی تصدیق کی کہ پولیس کے عملے سمیت عام شہریوں کو بھی تھانے میں داخل ہوتے ہوئے فون لے جانے کی اجازت نہیں ہو گی اور تھانے میں داخلے سے پہلے پولیس عملے اور سائلین کو اپنے فون گیٹ پر جمع کرانا ہوں۔

اسی بارے میں