گذشتہ ہفتے کا پاکستان: تصاویر

گذشتہ ہفتے پاکستان میں پیش آنے والے چند اہم واقعات کی تصویری جھلکیاں

پاکستان

،تصویر کا ذریعہPress Information Department

،تصویر کا کیپشن

وزیر اعظم عمران خان نے کورونا وائرس سے متعلق اجلاس کی صدارت کی، جس میں پاکستان نے لاک ڈاؤن کے بجائے احتیاطی تدابیر کے ساتھ کاروبار زندگی بحال کرنے کے کا فیصلہ کیا، عمران خان نے بجٹ سے متعلق بھی کابینہ کے اجلاس میں تجاویز طلب کیں۔

،تصویر کا ذریعہCynthia Ritchie

،تصویر کا کیپشن

پاکستانی سوشل میڈیا پر اپنے متنازع بیانات سے حال ہی میں دوبارہ خبروں میں آنے والی امریکی شہری سنتھیا رچی کی جانب سے ایک ویڈیو میں پاکستان پیپلز پارٹی کے رہنماؤں پر ریپ اور تشدد کے الزامات عائد کیے گئے۔ سابق وزیر اعظم سمیت پیپلز پارٹی کے رہنماؤں نے ان الزامات کی تردید کر دی۔

،تصویر کا ذریعہTwitter/@SAfridiOfficial

،تصویر کا کیپشن

بوم بوم' کے نام سے مشہور کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان 2018 میں ریٹائرمنٹ لے چکے ہیں۔ لیکن گذشتہ ہفتے بھی وہ اپنے فلاحی کاموں کی وجہ سے تبصروں میں رہے۔ سوشل میڈیا پر ایسے کاموں کی تصاویر خود شاہد آفریدی شیئر کرتے ہیں۔ کوئی ان کے اس کام میں ان کی مدح سرائی کر رہا ہے تو کوئی اسے ان کے وزیر اعظم بننے کا سفر قرار دیتا ہے۔ شاہد آفریدی کے کیمرہ مین پر بھی خوب تبصرے کیے جارہے ہیں۔

،تصویر کا کیپشن

لاک ڈاؤن کے خاتمے کے بعد مساجد میں نماز جمعہ کی ادائیگی ہوئی۔ کئی مقامات پر سماجی فاصلے کے اصولوں کا خیال نہیں رکھا گیا تاہم وزیر اعظم عمران خان نے واضح کیا ہے کہ پاکستان میں کورونا مساجد سے نہیں پھیلا ہے۔ انتظامیہ نے ضابطہ اخلاق کی پابندی نہ کرنے پر کچھ مارکیٹوں اور علاقوں میں سمارٹ لاک ڈاؤن بھی کیا ہے۔ بی بی سی کی نامہ نگار حمیرا کنول کے مطابق اسلام آباد میں بری امام کا مزار عوام کے لیے بند ہے لیکن اس کے باوجود ایک بڑی تعداد وہاں زیارت کے لیے جا رہی ہے اور گیٹ کے باہر موجود ہے۔

،تصویر کا ذریعہiStock

،تصویر کا کیپشن

پاکستان کے شہر راولپنڈی میں ایک آٹھ سالہ گھریلو ملازمہ بچی کے ساتھ مبینہ جنسی زیادتی اور تشدد کے واقعے نے ایک مرتبہ پھر ملک بھر میں لوگوں کو ہلا کر رکھ دیا ہے۔پولیس کے مطابق ملزم نے بتایا ہے کہ بچی نے صفائی کرتے ہوئے اُن کے گھر میں موجود دو قیمتی طوطے غلطی سے پنجرے سے اڑا دیے تھے، جس کے بعد حسن صدیقی اور ان کی بیوی نے طیش میں آ کر بچی کو شدید تشدد کا نشانہ بنایا۔

،تصویر کا ذریعہBilawal House

،تصویر کا کیپشن

بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ کورونا وائرس کے خلاف لاک ڈاؤن ایک ہتھیار ہے، اکلوتا ہتھیار نہیں۔ انھوں نے وفاقی حکومت کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ شروع میں لاک ڈاؤن اچھی طرح اپنایا گیا مگر بعد میں ایک سازش کے تحت اس کے خلاف کام کیا گیا، جس سے ملک میں کورونا وائرس کے پھیلاؤ میں تیزی آئی۔

،تصویر کا ذریعہPunjab Government

،تصویر کا کیپشن

پاکستان میں قدرتی آفات سے نمٹنے کے ادارے این ڈی ایم اے کے مطابق ملک بھر کے 51 اضلاع اس وقت ٹڈی دل کے حملوں کی لپیٹ میں ہیں۔ ان میں بلوچستان کے 33، پنجاب کے تین، سندھ کے چھ اور صوبہ خیبر پختونخوا کے نو اضلاع شامل ہیں۔ این ڈی ایم اے کے مطابق دو جون تک پورے ملک میں پانچ لاکھ دو ہزار ہیکٹر سے زائد رقبے پر سپرے کیا جا چکا ہے۔

،تصویر کا ذریعہGetty Images

،تصویر کا کیپشن

رواں برس کا دوسرا چاند گرہن پاکستان سمیت براعظم ایشیا، یورپ، آسٹریلیا اور افریقہ میں دیکھا گیا۔ رواں برس کا پہلا چاند گرہن دس جنوری کو ہوا تھا۔ سوا تین گھنٹے سے زیادہ وقت رہنے والا یہ چاند گرہن پاکستانی وقت کے مطابق رات دس بج کر 45 منٹ پر شروع ہوا اور اس کا اختتام رات دو بج کر چار منٹ پر ہوا۔ جمعے کو لگنے والے گرہن کے عروج کا وقت 12 بج کر 24 منٹ تھا۔