کراچی کی کیمیکل فیکٹری میں آتشزدگی: کم از کم 16 افراد ہلاک، حکومت کا تحقیقات کا اعلان

  • ریاض سہیل
  • بی بی سی اردو ڈاٹ کام، کراچی
کراچی، آگ

،تصویر کا ذریعہMughaira Ibrahim

پاکستان کے سب سے بڑے شہر کراچی کی ایک کیمیکل فیکٹری میں لگنے والی آگ کے نتیجے میں کم از کم 16 افراد ہلاک ہو گئے ہیں جبکہ مزید مزدوروں کے فیکٹری میں پھنسے ہونے کا اندیشہ ہے۔

فائر بریگیڈ حکام کا کہنا ہے کہ یہ آتشزدگی کا سنگین واقعہ ہے جس میں آگ نے فیکٹری کے گراؤنڈ اور فرسٹ فلور کو اپنی لپیٹ میں لیا۔ 15 فائر ٹینڈرز نے آگ بجھانے کے عمل میں حصہ لیا اور اب عمارت کی کولنگ کا عمل جاری ہے۔

ایس ایس پی کورنگی شاہ جہان نے بی بی سی کو بتایا کہ اس وقت تک 16 لاشیں نکالی جاچکی ہیں جبکہ ہلاکتوں میں اضافے کا خدشہ موجود ہے، ان کا کہنا تھا کہ فیکٹری کی عمارت کو گرل لگی ہوئی ہے راستہ نہیں تھا آگ اوپر کی منزل پر لگی ہوئی تھی اس کی کھڑکیوں کو توڑ کر رسیکیو آپریشن کیا گیا جس وجہ سے تھوڑا وقت لگا تاہم تمام ادارے پہنچ گئےتھے۔

،تصویر کا ذریعہMughaira Ibrahim

حکام کے مطابق فیکٹری میں آگ لگنے کی وجوہات کا ابھی پتہ نہیں چل سکا۔

فائربریگیڈ حکام کا یہ بھی کہنا ہے کہ دو منزلہ عمارت چاروں اطراف سے بند ہے، اسی لیے شاول کے ذریعے کھڑکیاں توڑ کر لاشوں کو نکالا جا رہا ہے جبکہ مزدروں کے لواحقین کی ایک بڑی تعداد بھی فیکٹری کے سامنے موجود ہے۔

فائربریگیڈ حکام کے مطابق آگ کی اطلاع ملنے کے بعد 10 بج کر 10 منٹ پر اُن کی پہلی گاڑی فیکٹری کی جانب روانہ کی گئی تھی۔

دوسری جانب حکومت سندھ کے ترجمان مرتضیٰ وہاب نے 14 افراد کی ہلاکت کی تصدیق کرتے ہوئے بتایا ہے کہ بیشتر افراد دم گھنٹے کے نتیجے میں ہلاک ہوئے۔

،تصویر کا ذریعہFaiz Ullah

مرتضیٰ وہاب کے مطابق پہلے فلور پر 21 کے قریب مزدور کام کر رہے تھے اور فیکٹری سے فوری طور پر باہر نکلنے کا کوئی راستہ موجود نہیں تھا۔

ان کا کہنا تھا کہ آگ پر قابو پا لیا گیا ہے جبکہ پولیس اور فائر بریگیڈ حکام آگ کی وجوہات جاننے کی کوشش کر رہے ہیں۔

امدادی تنظیم چھپا نے صحافی محمد زبیر خان کو بتایا ہے کہ ابھی تک فیکڑی سے 15 لاشوں کو جناح ہسپتال کراچی پہنچایا گیا ہے۔

چھپا کے مطابق تمام لاشیں بری طرح جھلسی ہوئی ہیں جبکہ ابھی کچھ نہیں کہا جا سکتا کہ اور کتنے لوگ فیکٹری میں موجود ہوں گے یا نہیں۔

یہ بھی پڑھیے

،تصویر کا ذریعہMughaira Ibrahim

مواد پر جائیں
پوڈکاسٹ
ڈرامہ کوئین

’ڈرامہ کوئین‘ پوڈکاسٹ میں سنیے وہ باتیں جنہیں کسی کے ساتھ بانٹنے نہیں دیا جاتا

قسطیں

مواد پر جائیں

جناح ہسپتال کراچی کی ترجمان ڈاکٹر صائمہ مشتاق کے مطابق ان کے پاس ابھی تک 14 لاشیں لائی گئی ہیں جبکہ ایک اور لاش کے حوالے سے اطلاعات ہیں کہ وہ بھی پہنچائی جارہی ہے۔

ڈاکٹر صائمہ مشتاق کے مطابق ’تمام لاشیں جلی ہوئی ہیں۔ جن کو مردہ خانے منتقل کر دیا گیا ہے۔ دو زخمی امدادی کارکن بھی لائے گئے ہیں، جن میں سے ایک کی حالت تشویشناک ہے۔‘

ڈاکٹر صائمہ مشتاق کا کہنا ہے کہ میڈیکل ٹیم لاشوں کی شناخت کے طریقہ کار کا جائزہ لے رہی ہے۔

’میں نے اپنے بیٹوں کو جل کر مرنے کے لیے نہیں بلکہ مزدوری کے لیے بھیجا تھا‘

ابتدائی اطلاعات کے مطابق کسی بھی لاش کی شناخت نہیں ہوئی جبکہ اس واقعے میں دو بھائیوں کی مبینہ طور پر ہلاکت کی اطلاعات بھی ہیں۔ جناح ہسپتال میں ان بھائیوں کے لواحقین اور والدہ موجود ہیں۔

ان کی والدہ کا کہنا ہے کہ ’میں نے ایک نظر لاشوں کو دیکھا ہے، مجھے کچھ نہیں پتا چل رہا کہ میرے بیٹوں کی لاشیں کون سی ہیں۔‘

انھوں نے مزید کہا ’میں نے تو اپنے بیٹوں کو مزدوری کے لیے بھیجا تھا۔ ان کو جل کر مرنے کے لیے نہیں بھیجا تھا۔‘

ایک اور مزدور کے بھائی راشد کا کہنا تھا کہ ہمیں بتایا گیا ہے کہ لاشیں جلی ہوئی ہیں اور ان کی شناخت ممکن نہیں۔

’ہم نے ڈاکٹروں سے کہا ہے کہ ڈی این اے کر لیں، کچھ کر لیں۔ ہمارے لوگ تو مر چکے ہیں۔ اب ہمیں لاشیں دے دیں کہ ہم ان کی تدفین کر سکیں۔‘

،تصویر کا ذریعہScreen Grab

ایک عینی شاہد کا کہنا ہے کہ وہ آگ والی جگہ سے گزر کر گئے اور سامنے چائے پی رہے تھے کہ پیچھے سے لڑکوں نے آواز لگائی کہ آگ لگ گئی ہے جس کے بعد وہ اٹھ کر بھاگے۔

’چھوٹی آگ تھی، آگ بجھانے والے آلے سے بجھانے کی کوشش کی گئی لیکن وہ بجھی نہیں۔‘

عینی شاہد کے مطابق فیکٹری میں چالیس سے پینتالیس افراد کام کرتے ہیں۔

یاد رہے کہ پاکستان کے صوبہ سندھ کے شہر کراچی میں ماضی میں بھی ایسے واقعات پیش آ چکے ہیں۔ ستمبر 2012 میں کراچی کے علاقے بلدیہ میں واقع علی انٹرپرائیز فیکٹری میں آتشزدگی میں ڈھائی سو سے زائد مزدو ہلاک ہوئے تھے۔

،تصویر کا ذریعہZaigham Mughira

وزیراعلیٰ ہاؤس سے جاری ہونے والے ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ سید مراد علی شاہ نے کورنگی میں واقع فیکٹری میں آگ لگنے کا نوٹس لیتے ہوئے کمشنر کراچی اور لیبر ڈیپارٹمنٹ سے رپورٹس طلب کر لی ہے۔

اعلامیے کے مطابق وزیراعلیٰ نے اس واقعے پر گہرے دکھ کا اظہار کیا ہے۔

وزیراعلیٰ سندھ نے ہلاک ہونے والے مزدوروں کے خاندان کی بھرپور مدد کرنے کی ہدایت اور زخمیوں کا حکومتی خرچ پر علاج کروانے کی ہدایات بھی جاری کی ہیں۔

پولیس ترجمان کے مطابق وہ اس وقت امدادی سرگرمیوں میں حصہ لے رہے ہیں اور ایف آئی آر کے لیے تحقیقات اور شواہد کا جائزہ لیا جا رہا ہے۔