سکیورٹی پوسٹ پر حملہ، پانچ ہلاک

صوبہ سرحد کے دارالحکومت پشاور میں مسلح افراد کی طرف سے ایک سکیورٹی چیک پوسٹ پر حملے میں پولیس اور فرنٹیئر کانسٹیبلری کے پانچ اہلکار ہلاک اور ایک زخمی ہوگیا ہے۔

تھانہ بڈھ بیر کے ایک اہلکار زبیر خان نے بی بی سی کو بتایا کہ منگل اور بدھ کی درمیانی شب تقریباً ایک درجن سے زائد مسلح افراد نے پشاور کے مضافاتی علاقے سپین قبر میں قائم پولیس اور ایف سی کی مشترکہ چیک پوسٹ کو راکٹ اور خود کار ہتھیاروں سے نشانہ بنایا۔

انہوں نے کہا کہ حملے میں پانچ اہلکار ہلاک ہوگئے ہیں جن میں دو پولیس اور تین ایف سی اہلکار شامل ہیں۔ زخمی ہونے والے پولیس اہلکار کو ہسپتال منتقل کیا گیا ہے۔ ابھی تک کسی تنظیم نے اس حملے کی ذمہ داری قبول نہیں کی ہے۔

خیال رہے کہ سپین قبر ضلع پشاور کا ایک مضافاتی علاقہ ہے جو قبائلی علاقہ باڑہ تحصیل کے سرحد پر واقع ہے۔ چند ماہ قبل جب پشاور اور آس پاس کے علاقوں میں حالات کشیدہ تھے تو ضلع پشاور کے سرحدی مقامات پر قائم سرکاری چیک پوسٹوں پر شدت پسندوں کی طرف سے حملے ایک معمول بن گیا تھا جن میں درجنوں سکیورٹی اہلکار ہلاک ہوگئے تھے۔ تاہم گزشتہ کچھ عرصہ سے ان حملوں میں کمی واقع ہوئی ہے۔

چند دن قبل بھی باڑہ قدیم چیک پوسٹ پر ایک مبینہ خودکش حملے میں پانچ افراد ہلاک ہوگئے تھے۔ حکومت ان حملوں کا الزام باڑہ میں سرگرم شدت پسند تنظیموں پر عائد کرتی رہی ہے۔ تاہم تازہ واقعات ایسے وقت پیش آئے ہیں جب باڑہ سب ڈویژن کے علاقوں میں سکیورٹی فورسز کی طرف شدت پسند تنظیموں کےلیے کارروائیوں کا سلسلہ جاری ہے۔

اسی بارے میں