گجرات: لیگی دھڑوں کے درمیان مقابلہ

Image caption گجرات کے اس حلقہ میں مسلم لیگ نون اور مسلم لیگ قاف کے امیدواروں میں براہ راست مقابلہ ہوگا

پنجاب کے ضلع گجرات کی صوبائی اسمبلی کے حلقہ ایک سو گیارہ میں ہونے والے ضمنی انتخابات کے لیے ووٹ ڈالے جارہے ہیں۔اس حلقہ میں مسلم لیگ نون اور مسلم لیگ قاف کے امیدواروں میں براہ راست مقابلہ ہوگا۔

پنجاب اسمبلی کے حلقہ ایک سو گیارہ میں مسلم لیگ نون کے عمران ظفر امیدوار ہیں جبکہ ان کے مدمقابل مسلم لیگ قاف کے سابق صوبائی وزیر عمران مسعود ہیں۔

پیپلز پارٹی نے اس حلقہ میں اپنا امیدوار کھڑا نہیں کیا اور مسلم لیگ نون کے امیدوار کی حمایت کررہی ہے۔تحریک انصاف نے پہلے ہی گجرات کے صوبائی حلقہ میں ہونے والے ضمنی انتخابات میں اپنا امیدوار احتجاجی طور پر دستبردار کرچکی ہے۔

اٹھارہ فروری کو ہونے والے عام انتخابات میں اس حلقہ سے مسلم لیگ نون کے امیدوار حاجی ناصر محمود کامیاب ہوئے تھے تاہم عمران مسعود کی درخواست پر لاہور ہائی کورٹ کے الیکشن ٹربیونل نے گریجوایٹ نہ ہونے پر حاجی ناصر محمود کو نااہل قرار دے دیاتھا۔

نااہل ہونے کے بعد حاجی ناصر محمود نے ضمنی انتخابات کے لیے دوبارہ کاغذات نامزدگی جمع کرائے تھے لیکن ان کے مخالف امیدوار عمران مسعود نے ہائی کورٹ سے رجوع کیا جس پر عدالت نے ناصر محمود کو ضمنی چناؤ میں حصہ لینے سے روک دیا جس کے بعد اب مسلم لیگ نون کی طرف سے عمران ظفر امیدوار ہیں۔

گجرات مسلم لیگ قاف کے قائدین چودھری براردان کا آبائی شہر ہے اور اسی وجہ سے مسلم لیگ قاف کے سربراہ چودھری شجاعت حسین اور سابق وزیر اعلیْ پنجاب چودھری پرویز الہیْ سمیت ان کے خاندان دیگر ارکان بھی بھر پور طریقہ سے انتخابی مہم سرگرم عمل رہے جبکہ دوسری جانب مسلم لیگ نون کے رہنما بھی اپنے امیدوار کی مہم چلائی جس میں پیپلز پارٹی کے رہنما اور وزیر دفاع چودھری احمد مختار بھی پیش پیش رہے۔

گجرات میں ہونے والے ضمنی ضمنی کے لیے انتخابی مہم میں مسلم لیگ نون اور مسلم لیگ قاف کے حامیوں میں چند روز قبل تصادم بھی ہوچکا ہے۔ادھر پولیس حکام کاکہنا ہے کہ چوبیس مارچ کو ضمنی انتخابات کے موقع پر اسحلہ کی نمائش اور فائرنگ کرنے والوں کے خلاف انسداد دہشت گردی ایکٹ کے تحت کارروائی کی جائے گی۔

خیال رہے کہ عام انتخابات میں ناصرمحمود کو تئیس ہزار سے زائد ووٹ ملے تھے جبکہ مسلم لیگ قاف کے عمران مسعود پندرہ ہزار سے زیادہ ووٹ لے کر دوسرے اور پیپلز پارٹی کے وزیر دفاع چودھری احمد مختار تیرہ ہزار ووٹوں کے ساتھ تیسرے نمبر پر تھے۔

اسی بارے میں