پیٹرول اور ڈیزل مزید مہنگا ہوگیا

پاکستان میں تیل اور گیس کی قیمت کا تعین کرنے والے ادارے اوگرا نے ملک بھر میں پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں یکم مئی سے دو سے چھ فیصد تک مزید اضافہ کرنے کا اعلان کیا ہے۔

جمعہ کی رات سے جاری ہونے والے نوٹیفکیشن کے مطابق پیٹرول کی فی لیٹر قیمت میں ایک روپیہ چورانوے پیسے، لائٹ ڈیزل میں تین روپے چھپن پیسے اور مٹی کے تیل کی فی لیٹر قیمت میں چار روپے آٹھ پیسے کا اضافہ کیا گیا ہے جبکہ ہائی آکٹین کی قیمت ایک روپیہ تریسٹھ پیسے فی لیٹر بڑھا دی گئی ہے۔

نئی قیمتوں کے نفاذ کے بعد فی لیٹر پیڑول کی قیمت پچھہتر روپے آٹھ پیسے، لائٹ ڈیزل کی فی لیٹر قیمت پینسٹھ روپے چھہتر پیسے ، مٹی کے تیل کی فی لیٹر قیمت اڑسٹھ روپے نواسی پیسے ہوگئی ہے جبکہ فی لیٹر ہائی آکٹین کی قیمت نواسی روپے انیس پیسے ہوگئی ہے۔

نئی قیمتوں کا نفاذ جمعہ کی رات بارہ بجے سے ہوگیا ہے۔ خیال رہے کہ اپریل کے آغاز میں بھی اوگرا نے پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں دو سے سات فیصد تک اضافہ کیا تھا۔

اوگرا حکام کے مطابق عالمی منڈی میں پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ ہوا ہے اور اِسی وجہ سے مقامی طور پر بھی پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ ناگزیر ہوچکا تھا۔مبصرین کے مطابق پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں غیر معمولی اضافے کے بعد مہنگائی میں اضافہ ہو گا جس سے عام لوگ بری طرح متاثر ہو نگے۔

دریں اثناء پیٹرول کی قیمتوں میں ممکنہ اضافے کی وجہ سے جمعہ کو پاکستان کے متعدد شہروں میں پیٹرول پمپس پر پیٹرول کی فروخت تعطل کا شکار رہی اور سندھ اور بلوچستان میں سی این جی سٹیشنز کی بھی ہفتہ وار بندش کی وجہ سے عوام کو زیادہ مشکلات کا سامنا کرنا پڑا۔

خیال رہے کہ پاکستان میں جاری توانائی کے بحران پر قابو پانے کے لیے صوبہ سندھ اور بلوچستان کے تمام سی این جی سٹیشنز جمعہ کو بند رکھے گئے۔ اس سے قبل منگل کو پنجاب اور صوبہ خیبر پختونخواہ میں بھی تمام سی این جی گیس سٹیشن ایک روز کے لیے بند رکھے گئے تھے۔

اسی بارے میں