پشاورموٹروے: بارود سے بھری گاڑی برآمد

پولیس نے اسلام آباد کے قریب موٹر وے پر دھماکہ خیز مواد سے بھری ہوئی ایک گاڑی پکڑی ہے جبکہ ڈرائیور موقع سے فرار ہونے میں کامیاب ہوگیا ہے۔

موٹروے پولیس کے ترجمان جاوید چوہدری نے بی بی سی کو بتایا کہ اتوار کو اسلام آباد کے قریب موٹر وے کے برہان انٹر چینج کے مقام پر موٹر وے پولیس نے ایک مشکوک سوزوکی کار کو رکنے کا اشارہ کیا لیکن ڈرائیور نے کچھ آگے جا کر گاڑی روکی اور فرار ہو گیا۔

انہوں نے کہا کہ پولیس نے جب گاڑی کی تلاشی لی تو اس سے ایک ہزار میڑ لمبی بارودی تار، ایک سو بیس کلو گرام بارود، بارہ سو پندرہ ڈیٹونیٹر برآمد ہوئے۔

نامہ نگار ذوالفقار علی کو ترجمان نے بتایا کہ یہ کار پشاور کی طرف جا رہی تھی لیکن ان کا کہنا ہے کہ ابھی یہ واضح نہیں ہے کہ یہ کہاں سے آ رہی تھی۔

ترجمان نے کہا کہ گاڑی کو ایک بیس سال کا نوجوان چلا رہا تھا جوحلیے سے پشتون لگ رہا تھا۔ پولیس ڈائیور کو تلاش کر رہی ہے۔

جاوید چوپدری نے کہا کہ موٹروے پولیس کی کارروائی کے باعث بڑی تباہی سے بچا گیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ اس واقعہ کی تفتیش کی جا رہی ہے کہ یہ گاڑی کہا سے آئی تھی اور اس کا ہدف کیا تھا اور اس میں کون لوگ ملوث ہیں۔

اس سے پہلے اکتوبر دو ہزار نو میں اسلام آباد سے لاہور جانے والی موٹروے پر للہ انٹر چینچ کے قریب ایک کار میں اس وقت دھماکہ ہوا تھا جب موٹروے کی پولیس اس کو روک کر تلاشی لے رہی تھی۔

اس کے نتیجے میں موٹر وے پولیس کا ایک سب انسپکڑ شاہ ایران ہلاک ہوگیا تھا جب کہ اس کار میں سوار شخص کو گرفتار کیا گیا تھا۔ پولیس نے کہا تھا کہ اس کار میں تیس کلو گرام دھماکہ خیز مواد تھا اور اسے لاہور لے جایا جا رہا تھا۔

اسی بارے میں