ڈیرہ دھماکے، ایک ہلاک سات زخمی

شہر میں دھماکے اور ہدف بنا کر ہلاک کرنے کے واقعات معمول بن چکے ہیں جبکہ گزشتہ ڈیڑھ ماہ میں پولیس پر یہ تیسرا حملہ ہے صوبہ خیبر پختونخواہ کے شہر ڈیرہ اسماعیل خان میں مختلف نوعیت کے دو دھماکے ہوئے ہیں جن میں ایک شخص ہلاک اور پانچ پولیس اہلکاروں سمیت سات افراد زخمی ہوئے ہیں۔

پولیس حکام کا کہنا ہے کہ ایک دھماکہ پولیس گاڑی کے قریب جبکہ دوسرا دھماکہ شہر میں گیس سلینڈر کے پھٹنے سے ہوا ہے۔

ڈیرہ بنوں روڈ پر شیخ یوسف اڈا کے قریب سڑک کے کنارے اس وقت ایک زور دار دھماکہ ہوا ہے جب پولیس کی ایک گشتی گاڑی وہاں سے گزر رہی تھی۔ پولیس اہلکاروں کا کہنا ہے کہ یہ دھماکہ ریموٹ کنٹرول سے کیا گیا ہے اور ایسا لگتا ہے کہ پولیس کی گاڑی کو ہی نشانہ بنایا گیا ہے۔ ایک راہگیر زمرد خان اس دھماکے میں ہلاک ہوا ہے۔

دوسرا دھماکہ شہر میں چمن چوک کے علاقے میں ایک سینیئر وکیل کے گھر میں ہوا ہے جس میں وکیل گوہر زمان کنڈی اور ان کا بچہ شدید زخمی ہوئے ہیں۔ پولیس کے مطابق یہ دھماکہ گیس سلینڈر پھٹنے سے ہوا ہے۔

سول ہسپتال میں موجود ڈاکٹروں نے کہا ہے کہ ان کے پاس دونوں دھماکوں کے آٹھ زخمی لائے گئے ہیں جن میں سے ایک زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے دم توڑ گیا ہے۔

ڈیرہ اسماعیل خان میں اس وقت کوئی چھ لاکھ جنوبی وزیرستان سے نقل مکانی کرنے والے پناہ گزین موجود ہیں جبکہ اس شہر میں دھماکے اور ہدف بنا کر ہلاک کرنے کے واقعات معمول سے پیش آتے رہے ہیں۔

گزشتہ ڈیڑھ ماہ میں پولیس پر یہ تیسرا حملہ ہے ان میں اٹھارہ مئی کو کچی پائند خان میں پولیس پر حملے میں ایک ڈی ایس پی اقبال خان سمیت چودہ افراد ہلاک ہو گئے تھے۔

اسی بارے میں