’پندرہ جولائی کو کھل کر بات ہوگی‘

پاکستان اور بھارتی سیکرٹری خارجہ
Image caption ممبئی پر دہشتگرد حملے کے بعد کسی اعلیٰ بھارتی اہلکار کا یہ پہلا دورہ پاکستان ہے

بھارت اور پاکستان نے اعتماد کی بحالی اور تعلقات کو مزید بہتر بنانے کے لیے بات چیت کا عمل جاری رکھنے پر اتفاق کیا ہے۔

پاکستان کے سیکریٹری خارجہ سلمان بشیر نے اپنی بھارتی ہم منصب نروپما راؤ کے ساتھ ایک مشترکہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ دونوں ممالک کے قیادت نے انہیں جو مینڈیٹ دیا اسی کے مطابق طے کیا گیا ہے کہ پندرہ جولائی کو ہونے والی وزراء خارجہ کی ملاقات میں تمام مسائل پر کھل کر بات ہوگی۔

انہوں نے صحافیوں کو بتایا کہ اعتماد کی بحالی اور تعلقات کو مزید بہتر بنانے کے لیے ان کی بات چیت مفید اور تعمیری رہی اور وہ سمجھتے ہیں کہ مذاکرات کا عمل جاری رہنا چاہیے۔

پاک بھارت تعلقات میں اتار چڑہاؤ کی تفصیلات

سلمان بشیر نے بتایا کہ دونوں ممالک کے اعلی حکام نے سنجیدگی کے ساتھ تمام مسائل پر بات کی اور وزراء خارجہ کی ملاقات کے لیے تیاری کی گئی۔

بھارت کی سیکریٹری خارجہ نروپما راؤ نے صحافیوں کو بتایا کہ انہوں نے اس ملاقات میں ایک دوسرے کی مشکلات اور حالات کو سمجھا ہے اور دونوں ممالک تمام مسائل کے حل کے لیے پر عزم ہیں۔

انہوں نے بتایا کہ پاکستان کے ہم منصب کے ساتھ ان کی ملاقات نے دونوں ممالک کے درمیان مذاکرات کے عمل کو جاری رکھنے کے لیے ایک راستہ بنایا ہے اور دونوں ممالک کے وزراء خارجہ اس کو آگے بڑھائیں گے۔

نروپما راؤ نے کہا کہ اس اجلاس میں دونوں ممالک کے درمیان اعتماد کی کمی کو دور کرنے کے لیے کئی پہلوؤں پر بات کی ہے اور جولائی میں دونوں وزراء خارجہ اس سلسلے میں اہم قدم اٹھائیں گے۔

نامہ نگار حفیظ چاچڑ کے مطابق اس سے پہلے وزارتِ خارجہ میں ہونے والے اجلاس میں پاکستان کے سیکریٹری خارجہ سلمان بشیر اور بھارت کی سیکریٹری خارجہ نروپما راؤ نے اپنے اپنے ملک کی نمائندگی کی۔

بھارتی سیکریٹری خارجہ اپنے وفد کے ہمراہ بدھ کے روز پاکستان پہنچی تھیں اور دو ہزار آٹھ میں ہوئے ممبئی حملوں کے بعد کسی بھارتی اعلی حکام کی یہ پہلا پاکستان کا دورہ ہے۔

دونو ں ممالک کے اعلی حکام نے اس اجلاس میں جولائی میں ہونے والی وزراء خارجہ کی ملاقات کے لیے ایجنڈا طے کیا۔

یاد رہے کہ پاکستان کے وزیراعظم یوسف رضا گیلانی نے بھارت کے وزیر اعظم من موھن سنگھ سے مارچ کے آخر میں بھوٹان میں سارک سربراہ اجلاس کے موقع پر ملاقات کی تھی اور اعتماد سازی کی بحالی پر اتفاق کیا تھا۔

بھارت اور پاکستان کے سیکریٹری خارجہ کا اجلاس بھی اس کی ایک کڑی ہے۔

دوسری طرف بھارت کے وزیر خارجہ ایس ایم کرشنا نے کہا ہے کہ بھارت اور پاکستان کے سیکریٹری خارجہ کی ملاقات سے کوئی ڈرامائی نتیجہ سامنے نہیں آئے گیا کیونکہ دونوں ممالک کے تعلقات ابھی اتنے بہتر نہیں ہوئے ہیں۔

پاکستان اور بھارت کے سیکرٹری خارجہ کے درمیان اسلام آباد میں مذاکرات میں ہونے والے مذاکرات میں دہشتگردی اور شدت پسندی سمیت امور پر بھی تبادلہ خیال کیا گیا۔

اسی بارے میں