پانچ ملزموں کو آٹھ بار سزائے موت

Image caption ملزم سات روز کے اندر لاہور ہائی کورٹ میں سزا کے خلاف اپیل کر سکتے ہیں

صوبہ پنجاب کے شہر گوجرانوالہ کی ایک عدالت نے چار افراد کے قتل کے الزام میں پانچ ملزموں کو آٹھ ، آٹھ مرتبہ پھانسی دینے اور مجموعی طور پر تینتیس، تینتیس سال قید کی سزا سنائی ہے ۔

یہ سزا انسداد دہشت گردی کی خصوصی عدالت کے جج نے ایک سال قبل دیرینہ دشمنی کی بناء پر ہونے والے قتل کے مقدمے کا فیصلہ سناتے ہوئے دی۔

عدالت نے ملزموں کو تین ، تین لاکھ جرمانہ بھی کیا ہے ۔عدالت نے جن پانچ ملزموں کو سزا سنائی ان میں دو سگے بھائی بھی شامل ہیں۔

استغاثہ کےمطابق گزشتہ برس سات اگست کو ملزمان کا کرکٹ گراونڈ میں اپنے مخالفیں سے جھگڑا ہوا جس پر ملزمان نے فائرنگ کی جس میں چار افراد ہلاک اور پانچ شدید زخمی ہوگئے۔ اس واقعہ کا مقدمہ ضلع سیالکوٹ میں تھانہ سمبڑیال میں درج کیا گیا۔

نامہ نگار عبادالحق کے مطابق انسداد دہشت گردی کی خصوصی عدالت کے جج نے ملزم ذوالفقار ، سرفراز ،طاہر اور مدثر کو قتل کرنے کے جرم میں آٹھ ، آٹھ بار سزائے موت سنائی جب کہ اقدامِ قتل اور فائرنگ کر کے زخمی کرنے پر ہر ملزم کو بیس بیس سال اور ناجائز اسحلہ رکھنے کے جرم میں تین تین سال قید کی سزا دی ہے۔

قانونی ماہرین کے مطابق ملزموں کو یہ حق ہے کہ وہ اپنی سزا کے خلاف اپیل دائر کرسکتے ہیں اور یہ اپیل سات دنوں میں لاہور ہائی کورٹ کے رو برو دائر کی جا سکتی ہے۔

اسی بارے میں