’سودے بازی نہ کرنے کی یقین دہانی کرائے‘

فائل فوٹو، پاکستان میں ڈنمارک کے خلاف مظاہرہ
Image caption مظاہرین نے پلے کارڈز اور بینرز اٹھا رکھے تھے جن پر تازہ ہلاکتوں پر بھارت کی مذمت کی گئی تھی

کشمیر کی سیاسی اور جہادی تنظیموں نے ایک احتجاجی مظاہرے میں حکومت پاکستان سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ بھارت کے ساتھ تعلقات کو بہتر کرنے کے لیے کشمیریوں کے موقف پر سودے بازی نہ کرنے کی یقین دہانی کرائے۔

منگل کو اسلام آباد کے علاقے آبپارہ پر منعقد ہونے والے اس احتجاجی مظاہرے سے پاکستانی اور بھارتی زیر انتظام کمشیر کی سیاسی اور جہادی تنظیموں کے رہنماؤں نے خطاب کیا۔ اس احتجاج کی وجہ بھارت کے زیر انتظام کشمیر میں حالیہ دنوں میں عام شہریوں کی ہلاکتوں میں اضافہ تھا۔

مظاہرین نے پلے کارڈز اور بینرز اٹھا رکھے تھے جن پر تازہ ہلاکتوں پر بھارت کی مذمت کی گئی تھی۔ شرکاء سے خطاب کرنے والوں میں متحدہ جہاد کونسل اور حـزب المجاہدین کے رہنما سید صلاح الدین، حریت کانفرنس گیلانی دھڑے کے کنوینر غلام محمد صفی، میر واعظ گروپ کے محمود ساغر اور بھارتی کمشیر میں جماعت اسلامی کے نائب امیر مولانا غلام نبی نوشیری شامل تھے۔

مقررین نے حکومت پاکستان کی جانب سے گزشتہ دنوں بھارتی وزیر داخلہ اور دیگر اہلکاروں کے لیے ’ریڈ کارپٹ‘ استقبال پر اعتراض کرتے الزام لگایا کہ بھارتی ہاتھ کشمیریوں کے خون سے رنگے ہوئے ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ پاکستان جو ان کا وکیل اور سہارا ہے بھارت کے ساتھ دوستی کی کوششیں کر کے ان کے زخموں پر نمک پاشی کر رہا ہے۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ اس سے ان کی پاکستان کے لیے محبت متاثر ہو رہی ہے۔

یہ احتجاج ایک ایسے وقت ہوا ہے جب پاکستان میں شدت پسند تنظیموں کے خلاف لاہور میں داتا دربار پر خودکش حملے کے بعد کارروائی کے لیے مطالبہ زور پکڑتا جا رہا ہے۔

اسی بارے میں