کشمیر میں ہلاکتوں کے خلاف ہڑتال

فائل فوٹو
Image caption ہڑتال کی کال کشمیری ریفیوجی کونسل نے دی تھی

ہندوستان کے زیرِانتظام کشمیر میں جاری عوامی احتجاج کے دوران ہونے والی ہلاکتوں کے خلاف اور وادی کےعوام کے ساتھ اظہارِ یکجہتی کے لیے پاکستان کے زیرِانتظام کشمیر کے دارالحکومت مظفرآباد میں پہلی بار شٹر ڈاؤن ہڑتال ہوئی ہے۔

اس ہڑتال کی کال کشمیری پناہ گزینوں کی تنظیم جموں کشمیر ریفیوجی کونسل نے دی تھی جس کی حمایت مظفرآباد کی تمام تاجر تنظیموں نے کی تھی۔

مظفرآباد میں بی بی سی اردو کے نامہ نگار ذوالفقار علی کے مطابق یہ شڑڈاون ہڑتال اور احتجاج صرف مظفرآباد شہر میں ہی ہوا کیوں کہ کشمیری ریفیوجی کونسل کی کال صرف شہر کی حد تک تھی۔

اس موقع پر تمام کاروباری مراکز، بازار اور دکانیں بند رہیں جبکہ مظفرآباد میں ایک احتجاجی مظاہرہ بھی ہوا جس میں سینکڑوں افراد نے شرکت کی۔ مظاہرین نے ہندوستان کی مخالفت اور کشمیر کی آزادی کے حق میں نعرے لگائے۔

مظاہرین نے سراور بازؤں پر سیاہ پٹیاں باندھ رکھی تھیں، انہوں نے کتبے اور بینرز بھی اٹھا رکھے تھے جن پر مختلف نعرے درج تھے۔

ایک بینر پر یہ تحریر درج تھی ’بھارتی ظالمو ہمارا کشمیر چھوڑ دو‘ جبکہ دوسرے کتبے پر یہ تحریر درج تھی’ کشمیر میں قتلِ عام بند کرو‘۔ایک اور بینر پر لکھا تھا ’مقبوضہ کشمیر میں نوجوان نسل کے قتلِ عام پر حکومتِ آزاد کشمیر خاموش کیوں؟‘

مظاہرین نے ہندوستان کے وزیرِاعظم منموہن سنگھ کا پتلا اور پرچم بھی نذر آتش کیا۔

خیال رہے کہ پاکستان کے زیرانتظام کشمیر میں حکومتی اپیلوں کے باوجود بھارتی زیرِ انتظام کشمیر میں تشدد اور ہلاکتوں کے خلاف احتجاج میں عوامی شرکت بہت کم رہی ہے اور جمعہ کو پرامن احتجاجی مظاہروں کی اپیل پر بھی کوئی خاص ردعمل نظر نہیں آیا تھا۔

اسی بارے میں